شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / کہیں آ ہ بن کے لب پر ترا نا م آ نہ جا ئے
کہیں آ ہ بن کے لب پر ترا نا م آ نہ جا ئے

کہیں آ ہ بن کے لب پر ترا نا م آ نہ جا ئے

ہو جیےے رہا ہے ، شا ہد نہیں ان کو یقین ہی تو ہے اس لیے عوام کا استعمال اس طر ح لیا جا رہا ہے ، یہ امید رکھیں ،ہم بھی امید رکھتے ہیں کہ یہ خرا بی ختم ہو کے رہے گی ،بن بو لے شا ہد ہما ری عوام سیاست دانوں کو پیغام دے رہے ہیں کہ
کہیں آ ہ بن کے لب پر ترا نا م آ نہ جا ئے
تجھے بے وفا کہوں میں وہ مقام آ نہ جا ئے
ملک کی عوام کا انصا ف لینے کا آ خری دروازہ ، ملک کی سپر یم کو رٹ ، اس سپر یم کو رٹ میں جو فیصلہ کیا گیا ، جس کو پہلے کڑوا گھو نٹ سمجھ کے پیا گیا پھر خیال آ یا ، آ وٹ ہو گے ہیں ، تھو ڑی بہت عوام کی ہمد در ی ہما رے سا تھ ہے اب اس کو کیش کیا جا نا چا ہیے ، ضر ور عوام کے سا منے جا نا چا ہیے ، مگر جو کہا جا رہ ہے کہ یہ سا ز ش ہو ئی ، تو سا ز ش کس نے کی با قی جو مخالف سیا ست دان وہ تو کھل کے بو لے رہے ہیں ، سا ز ش ہو تی پیٹ پیچھے ، تو ساز ش کا کہا گیا اب اس ساز ش کر نے میں کو ن عوام کو یہ بھی بتا دینا چا ہیے ، کہا جا رہا ہے جیسے کہ سپر یم کو رٹ کو استعمال میں لا یا گیا تو اس طرح بھی سو چ لیں کہ سپر یم کو رٹ میں جو کیس لا یا گیا تھا ، پا نا مہ لیکس کا اس پا نا مہ میں صرف نا م آ یا اور کیس سپر یم کورٹ میں گیا ہی نہیں تھا تو ایک ملک کے سر بر اہ نے سیٹ چھو ڑ دی تھی، صرف اس پا نا مہ پیپر میں نا م آ نے پر ، آ پ کا نا م بھی آ یا ، کیس سپر یم کورٹ گیا ، اب آپ اعترا ض کر رہے ہیں ، چلیں اس بات کو بھی مان لیتے ہیں کہ ما ضی میں سپر یم کو رٹ میں غلط فیصلے ہو تے آ ئے ہیں ، بجا کہا جا رہا ہے ، مگر یہ تو چھو ٹا سا بچہ بھی جا نتا ہے کہ کو رٹ میں جعلی ثبو ت دینا جر م ہے ، اب اس بات کا جو اب مل سکتا ہے ، زیا دہ اس با ت پر فو کس کیا جا رہا ہے کہ عوام نے وز یرا عظم منتخب کیا تھا ، عوام کی وو ٹ سے کا میا بی ملی تھی ، بلکل ٹھیک ، کو ئی اعتر اض نہیں اس با ت پر ،مگر عوام کے ووٹ لے کر کو ئی عد الت میں کچھ بھی بو لے ، کچھ بھی ثبو ت دے کیا اس پر کو ئی قا نو ن اپلا ئی نہیں ہو تا ، سپر یم کو رٹ نے نا ا ہل کیا ،اب کیس نیب میں ہیں ، اگر نیب الز اما ت ثا بت کر دیتی ہے اور جن کے نام ہیں ان کو سزا ء ہو تی پھر اس عوام کو کیا منہ دکھا جا ئے گا ،ہو نا یہ چا ہیے تھا کہ آ خری فیصلہ آ نے تک اس طر ح جی ٹی روڈ پر آ نا زیب نہیں دیتا ، عوام کو اپنے قا ئد سے یہ سوال کر نا چا ہیے کہ نیب سے جو اب آ ئے پھر ہم زیا دہ سر خر و ہو کر جو زیا د تی ہو ئی اس پر احتجا ج کر یں گے ، مگر اعلان ہو ا کہ میا ں صا حب اسلا م آ با د سے لا ہو ر بر را ستہ جی ٹی روڈ جا ئیں گے تو بہت سے بو رڈ اور اشتہا ر ت لگا ئے جا رہے ہیں ، اور نعر ے جان نثا ر بے شما ر ، تا ریخ گو اہ ہے ، جب عوام کو معلو م پڑ تا ہے کہ ہما را قا ئد اب پھنس گیا ہے تو کچھ افرا ف بھی سٹر ک کی طر ف منہ نہیں کر تے ہیں ، اب جو اشتہا را ت اور پیسہ لگا رہے ہیں ، یہ تو لا لچی لو گ اپنے کسی مفا د میں جو ڑے ہیں ، ہم میں انتی بیما ری آ چکی ہے کہ کسی بھی پلیٹ فا رم سے ہم کو صدر نہ کہا جا ئے ہم کو کھا نا ہضم نہیں ہو تا ، یہ گلی محلو ں کے اپنی اپنی تنظیموں کے بے صدر حضرا ت ہیں ، جو اپنی پگ اونچی رکھنے کے لیے کل کو سٹر ک پر اپنے چند لو گ لے جا ئیں گے ، مگر جب نیب یا کسی ادارے نے ہا تھ رکھا تو یہ گلی محلے کے صد ر کسی دوسری تیسر ی پا رٹی کے صد ر لگ جا ئیں گے ۔
آ ج سو شل میڈیا پر ایک اشتہا ر دیکھا جس میں میاں صا حب اور عبا سی صا حب کی تصو یر لگی ہو ئی تھی ، سا تھ ایک سا بق ایم این اے کی تصو یر لگی ہو ئی تھی، اور لکھا تھا قا ئد کے لیے جا ن بھی حا ضر ، یہ ایم این اے وہ صا حب ہیں ، جو پچھلے الیکشن میں اس قا ئد کے امید وار کے خلا ف ہو کر دوسری پا رٹی کے امید وار کی حما ئت اس لیے کی تھی کیونکہ ان صا حب کو پا رٹی کا ٹکٹ نہیں ملا تھا تو یہ صا حب یہ ثا بت کر نا چا ہتے تھے کہ اپنی پا رٹی کا امید وا ر ہا ر جا ئے میر ی مخا لفت سے تو میں اعلی قیا دت کو بتا سکوں کہ غلط بند ے کو پا رٹی ٹکٹ دیا گیا تھا ، اب یہی صا حب لکھ رہے ہیں کہ قا ئد کے لیے جا ن قر با ن ، ایسی سیا سی لو گ صرف اپنا مفا د دیکھتے ہیں اور ہما رے سیا سی لیڈ ر سمجھ جا تے ہیں کہ عوام ہم پر قر با ن ہو نے کو تیا ر ہو چکی ہے ، اب جس طر ح مر ضی استعمال کیا جا ئے اس عوام کو ، عوام کو شعو ر آ رہا ہے مگر ہو میو پتھک طر یقہ سے ۔
اب با ت کر تے ہیں ، سیا ست دان کرنا کیا چا ہا ر ہیں ، تحر یک انصا ف کی پو ز یشن جو کمز ور کر نے کی کو شش کی گئی تھی وہ وار بے کا ر گیا ، عمران خا ں صا حب بھی اب پہلے کی طر ح سیا سی غلطیا ں نہیں کر رہے ہیں ، میاں صا حب نے سیاسی فیصلہ اچھا کیا کہ سڑ ک پر آ ئیں اور عوامی طا قت کا مظا ہر ہ کر یں ، گو کہ یہ فیصلہ ملک اور ملکی اداروں کے خلا ف ہے ،مگر یہ سیا ست میں کچھ نہیں دیکھا جا تا کہ اخلا قی جو از ہے بھی کے نہیں ، قا دری صا حب کی انٹر ی ، اور ساتھ پہلی تقر یر میں کہا گیا کہ کچھ وقت دے رہے ہیں حکو مت کو قا تلوں کو سزا دی جا ئے ، یہ وق ت دینا اشا رہ ہی ہے کہ اس سیا سی گر ما گرمی میں ہما رے سا تھ معاملا ت کر لیے جا ئیں، پیپلز پا رٹی صرف ہا نڈی میں چمچہ ہلا نے آ تی ہر کچھ ٹا ئم کے بعد ،الیکشن میں یہ اپنی ذہا نت سے سا را کریڈ ٹ لے سکتی ہے یا نہیں یہ فیصلہ اس وقت ہو گا ۔
مو جو دہ سیا سی صو رت حا ل میں نقصان عوام کا ہو نا ہے ، میاں صا حب جی ٹی روڈ سے لا ہو ر جا ئیں گے ،بڑی گا ریاں ، سیکو رٹی ،سب کچھ ہو گا ،ذ لیلی ہو گی تو جو شیلی عوام بے چا ری ، بھو کی مر ے گی ، پید یل چلے گی تو ہما ری جو شیلی عوام ، جس کے بار ے کہہ سکتے ہیں کا فی تعد اد میں آ ئے لو گوں کو بس اتنا پتہ ہو گا کہ شا م کو ان کو اتنی دیہا ڑی ملنی ہے ، مگر سیا ست دان اس با ت کو ذ ہن میں رکھیں شعور آ کر رہے گا پھر صور ت حا ل بد ل جا ئے گی ، اور تمام کا رنا مے سامنے ہو تے ہیں ،
ہو جیےے رہا ہے ، شا ہد نہیں ان کو یقین ہی تو ہے اس لیے عوام کا استعمال اس طر ح لیا جا رہا ہے ، یہ امید رکھیں ،ہم بھی امید رکھتے ہیں کہ یہ خرا بی ختم ہو کے رہے گی ،بن بو لے شا ہد ہما ری عوام سیاست دانوں کو پیغام دے رہے ہیں کہ
کہیں آ ہ بن کے لب پر ترا نا م آ نہ جا ئے
تجھے بے وفا کہوں میں وہ مقام آ نہ جا ئے

Share Button

About aqeel khan

Scroll To Top