شہ سرخیاں
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا میں گورنر راج پر غور
loading...
خیبر پختونخوا میں گورنر راج پر غور

خیبر پختونخوا میں گورنر راج پر غور

اسلام آباد(مانیٹرنگ سیل) وفاقی حکومت نے عمران خان کے اسلام آباد مارچ کی صورت میں حالات بگڑنے اور ملک میں جمہوریت کے تسلسل کے لئے جہاں دیگر اقدامات اٹھانے کو حتمی شکل دے دی ہے وہیں پر خیبر پختونخوا میں گورنر راج کے نفاذ کو بھی بطور آپشن استعمال میں لانے پر غور شروع کردیا ہے۔ گورنر خیبر پختونخوا اقبال ظفر جھگڑا کا کہنا ہے کہ ملکی سالمیت خطرے میں پڑنے کی صورت میں گورنر راج کا نفاذ خارج از امکان نہیں۔ ذرائع کے مطابق خیبر پختونخوا سے متعلق اعلیٰ سطحی اجلاسوں میں اس بات پر غور کیا گیا ہے کہ اگر وزیر اعلی پرویز خٹک غیر آئینی اقدامات کے مرتکب ہونگے تو صوبے میں گورنر راج کو بطور آپشن استعمال کیا جا سکتا ہے، جبکہ حکومت کی نظر میں کسی صوبے کے وزیر اعلی کا وفاق کے خلاف لشکر کشی غیر آئینی اقدام تصور ہوگا۔ نجی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے گورنر اقبال ظفر جھگڑا کا کہنا تھا کہ خیبر پختونخوا میں گورنر راج کے نفاذ کا فیصلہ نہیں ہوا تاہم ملکی سالمیت کو خطرہ درپیش ہونے کی صورت میں گورنر راج کا نفاذ خارج ازامکان نہیں ہے، جبکہ ملک میں جمہوریت کے تسلسل اور آئین کی بالادستی کے لئے آئینی حدود کے اندر رہتے ہوئے کردار ادا کرونگا۔ اقبال ظفر جھگڑا کا کہنا تھا کہ ساری زندگی جمہوریت کے لئے قربانیاں دی ہیں۔ کسی کو جمہوریت خطرے میں ڈالنے کی اجازت نہیں دینگے۔ وزیر اعلی پرویز خٹک وفاقی دارلحکومت پر چڑھائی کرکے آئینی حدود سے تجاوز کررہے ہیں، جبکہ صوبے کے آئینی سربراہ کی حیثیت سے وزیر اعلی پرویز خٹک کو آئین کی پاسداری کی نصیحت کرتاہوں۔

Share Button
loading...
loading...

About admin

loading...
Scroll To Top