شہ سرخیاں
Home / پاکستان / خیبر 4 آپریشن مکمل کر لیا گیا ہے: ڈی جی آئی ایس پی آر

خیبر 4 آپریشن مکمل کر لیا گیا ہے: ڈی جی آئی ایس پی آر

راولپنڈی(مانیٹرنگ سیل) پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے سربراہ میجرجنرل آصف غفور کا کہنا ہے کہ خیبر 4 آپریشن مکمل کر لیا گیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے پریس کانفرنس کی جس میں انہوں نے آپریشن رد الفساد میں پیشرفت، آپریشن خیبر-4 کی تکمیل، ارفع کریم ٹاور دھماکے، راجہ مسجد حملے کے ملزمان کے اعترافی بیانات اور ملکی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا اور صحافیوں کے سوالات کے جوبات دیئے۔ میجر جنرل آصف غفور نے خیبر 4 آپریشن کی تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ آپریشن 15 جولائی کو شروع کیا گیا جس  کے لیے ٹیکنیکل وسائل کا استعمال کیا گیا، دہشت گردوں کی ہر حرکت پر نظر رکھی گئی اور آپریشن کو بہترین انداز میں مکمل کیا گیا تاہم کلیئرنس کا عمل جاری ہے۔ ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ خیبر 4 آپریشن مشکل تھا جس میں 2 جوان شہید اور 6 زخمی ہوئے جب کہ آپریشن میں 52 دہشت گرد مارے گئے اور 5 دہشت گردوں کو گرفتار کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ خیبر ایجنسی میں 91 چیک پوسٹیں قائم کر دی گئی ہیں۔ چیک پوسٹوں پر سامان کی ترسیل کا عمل جاری ہے جبکہ راجگال اورشوال میں بھی زمینی اہداف حاصل کر لیے گئے ہیں۔ میجر جنرل آصف غفور نے بتایا کہ آپریشن شروع کرنے سے قبل افغان فورسز سے کوآرڈینیشن کی تھی۔ افغان فورسز نے بارڈر کراس موومنٹ کو فالو کیا۔ آپریشن کے دوران 23 انٹیلی جنس بیسڈ آپریشن کیے گئے۔ ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ فاٹا اصلاحات فاٹا کی تعمیر نو اور پائیدار ترقی کے لیے بہت ضروری ہے جو کل ہو جانی چایئے تھی لیکن بدقستمی سے ایسا نہیں ہوسکا جب کہ اس حوالے پاک فوج نے اپنی سفارشات دے رکھی ہیں انہوں نے کہا کہ پاک فوج نےایساکبھی نہیں کہاکہ فاٹااصلاحات نہیں ہونی چاہیےتھی ایسا تاثر دینے والے غلط بیانی سے کام لے رہے ہیں، حقیقت حال یہ ہے کہ پاک فوج کی جانب سے مختلف پروجیکٹس پر تیزی سے کام جاری ہے۔ ڈی جی آئی ایس پی آر نے فاٹا میں جاری ترقیاتی کاموں کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ ان کے مطابق فاٹا میں 266 واٹر اسکیمیں بنائی گئی ہیں ، 147 پرائمری اسکول،17 صحت کے مراکز، 67 مارکیٹس اور 27 مساجد بھی تعمیر کی گئی ہیں۔ انہوں نے مزید بتایا کہ 95 فیصد آپریشن سے متاثرین اب واپس اپنے گھروں کو جا چکے ہیں جہاں یہ  آئی ڈی پیز معمولاتِ زندگی انجام دے رہے ہیں اور علاقے سے دہشت گردی کے مکمل خاتمے کے لیے اہنا کردار ادا کرہے ہیں۔ ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ ارفع کریم دھماکے کا مقصد وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو ٹارگٹ کرنا تھا لیکن خوش قسمتی وزیراعلیٰ کا دورہ عین وقت پر تبدیل کردیا گیا تھا جس کے باعث دہشت گردوں کا منصوبہ ناکام رہا۔  ڈی جی آئی ایس پی آر نے بتایا کہ ارفع کریم دھماکے کے منصوبہ ساز کرنے والے دہشت گرد کو حراست میں لیا ہے جس نے وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو نشانہ بنانے کا اعتراف کرتے ہوئے اپنے شریک ملزمان کے حوالے سے بھی انکشافات کیے ہیں جس کی روشنی میں تحقیقات کا عمل جا ری ہے۔  پریس کانفرنس میں باجوڑ سے حراست میں لیے گئے دو ملزمان کے اعترافی بیان کی ویڈیو بھی دکھائی گئی جس میں ملزمان کا کہنا تھا کہ روالپنڈی مسجد کے قریب سے اہل شیعہ حضرات کا جلوس نکلنا تھا جس کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے ہم نے سنی مسجد پر حملہ کردیا تا کہ سنی شیعہ فسادات پھوٹ پڑیں۔ ملزمان نے اعتراف کیا ہے کہ وہ سنی العقیدہ مسلمان ہیں لیکن شیعہ سنی فسادات کرانے کے لیے سنی ہونے کے باوجود اپنی ہی مسلک کی مسجد پر حملہ کیا اور فرار ہو گئے تھے تاہم باجوڑ سے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے حراست میں لے لیا۔ ڈی جی آئی ایس پی آرمیجرجنرل آصف غفور نے کہا کہ پاک فوج کی جانب سے 70 ویں یوم جشن آزادی کے موقع پر واہگہ بارڈر پر ایشیا کا بلند ترین جھنڈا لہرایا گیا جس پر بھارتی موقف آیا ہے کہ جھنڈے میں جاسوسی آلات نصب ہیں جو کہ بے بنیاد اور من گھرٹ ہے،جاسوسی کے لیے جھنڈے لگانے کی ضرورت نہیں، جو چاہیں حاصل کرسکتے ہیں۔ ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ زندہ قومیں جشن آزادی شایان شان طریقے سے مناتی ہے اور پاکستان کا 70 واں جشن آزادی اس بات کا بین ثبوت ہے اور اس سال ملک کے ان علاقوں اور شہروں میں جھنڈے لگے جہاں پہلے جھنڈے نہیں لگا کرتے تھے

x

Check Also

ڈانس پارٹی پرچھاپہ،اسٹیج اداکارہ سمیت7رقاصائیں گرفتار

خانیوال (مانیٹرنگ سیل) خانیوال میں پولیس کی بڑی کارروائی کرتے ہوئے ڈانس ...

Connect!