شہ سرخیاں
Home / علاقائی / کراچی:گورنرسندھ ڈاکٹرعشرت العباد خان کی مستقبل کے مختلف منصوبوں کے بارے میں بریفنگ

کراچی:گورنرسندھ ڈاکٹرعشرت العباد خان کی مستقبل کے مختلف منصوبوں کے بارے میں بریفنگ

کراچی(دانیال خان) کیماڑی سے منوڑا تک دو جدید مسافر بوٹس اسی ماہ رواں ہو جائیں گی جس سے شہر سے جزیرے تک مسافروں کو محفوظ اور آرام دہ سفر کی سہولت حاصل ہو سکے گی، 2.345 ملین ڈالرز کی یہ بوٹس بنگلہ دیش سے حاصل کی جا رہی ہیں، ہر بوٹ میں 200 مسافروں کی گنجائش ہو گی۔

جمعرات کو جاری کردہ اعلامیہ کے مطابق یہ بات گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان کی زیر صدارت گورنر ہاﺅس میں منعقدہ اعلیٰ سطح کے اجلاس میں بتائی گئی جس میں کراچی کی بندرگاہ کے جاری اور مستقبل کے مختلف منصوبوں کے بارے میں بریفنگ دی گئی۔

اجلاس میں چیف سیکریٹری سندھ راجہ محمد عباس، پرنسپل سیکریٹری ممتاز الرحمان، سیکریٹری منصوبہ بندی و ترقیات محسن مشتاق، ایڈمنسٹریٹر کے ایم سی محمد حسین سید، کمشنر کراچی روشن شیخ کے علاوہ چیئرمین کے پی ٹی اسلم حیات، لیاری ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل آغا مسعود عباس اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔

چیئرمین کے پی ٹی اسلم حیات نے ٹرسٹ کے تحت جاری منصوبوں اور مستقبل کے پروگرامز سے آگاہ کیا۔ گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان نے کہا کہ کراچی پورٹ کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کر کے اسے دنیا کے بہترین پورٹس کی صف میں لانے اور ملک کی اقتصادی ترقی کے ساتھ شہر کی تعمیر و ترقی میں فعال کردار یقینی بنایا جائے گا۔

انہوں نے اس ضمن میں کراچی پورٹ ٹرسٹ کے تحت جاری منصوبوں اور مستقبل کے لئے لائحہ عمل کو سراہتے ہوئے آئندہ بھی وفاقی و صوبائی حکومتوں اور شہری انتظامیہ کے بھرپور تعاون و رابطوں کو اہم قرار دیا۔

گورنر سندھ نے شہر کی ترقی میں کراچی پورٹ ٹرسٹ کے تعاون کو لائق تحسین قرار دیتے ہوئے کہا کہ شہر میں کام کرنے والے وفاقی اداروں کی جانب سے کراچی کی تعمیر و ترقی میں شمولیت بڑی خوش آئند ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں کے پی ٹی نے سب سے زیادہ فعال کردار ادا کیا۔

گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان نے کے پی ٹی حکام پر زور دیا کہ وہ ٹرسٹ کو الاٹ تمام زمین کو محفوظ بنانے اور تجاوزات کے خاتمے کے لئے فوری اور موثر کارروائی کریں۔ انہوں نے اس سلسلے میں صوبائی و شہری محکموں کو ہر ممکن تعاون فراہم کرنے کی ہدایت کی۔

انہوں نے کہا کہ زمین کو مختص منصوبوں اور شہریوں کو تفریحی سہولتیں مہیا کرنے کے لئے استعمال میں لایا جائے تاکہ غیر قانونی قبضوں سے بچا جا سکے۔ انہوں نے کے پی ٹی اور دیگر سرکاری اداروں کے درمیان زمین کے تنازعوں کو مقدمات کی بجائے باہم افہام و تفہیم سے جلد از جلد حل کرنے پر بھی زور دیا۔

گورنر سندھ نے اس سلسلے میں چیف سیکریٹری کو کے پی ٹی اور متعلقہ محکموں کے درمیان معاملات کے حل کے لئے کردار ادا کرنے کی ہدایت کی۔ کے پی ٹی حکام نے اجلاس میں بتایا کہ 2003ءمیں متحدہ قومی موومنٹ کے ایماءپر کراچی پورٹ ٹرسٹ کے بورڈ آف ٹرسٹیز میں متعلقہ شعبوں اور اسٹیک ہولڈرز کی نمائندگی یقینی بنانے کے بڑے مثبت نتائج برآمد ہوئے اور کارکردگی میں نمایاں بہتری آئی، قبل ازیں غیر متعلقہ افراد بورڈ آف ٹرسٹیز میں شامل تھے۔

جاری منصوبوں کی تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے چیئرمین کے پی ٹی اسلم حیات نے بتایا کہ بابا اور بھٹ جزیروں پر 252 ملین روپے کی لاگت سے بہترین جیٹیز (Jetties) تعمیر کی جا رہی ہیں، اکتوبر 2011ء میں ان پر کام شروع ہوا تھا اور یہ جون 2013 ء میں مکمل ہو جائیں گی، جیٹیز کی تعمیر نو سے ماہی گیری کے ساتھ جزیروں کے باشندوں کو بھی بہترین سہولتیں ملیں گی۔

انہوں نے بتایا کہ پاکستان ڈیپ واٹر کنٹینر پورٹ پر کام جاری ہے اور یہ 49 بلین روپے کی لاگت سے 2013ءمیں مکمل ہو جائے گا، منوڑا ڈرائی ڈاک کی بحالی پر اپریل 2010ءمیں کام شروع کیا گیا، منصوبے پر199 ملین روپے کی لاگت آئے گی اور یہ اس سال مکمل ہو جائے گا۔

یہ ڈاک 1901ءمیں تعمیر ہوا،1986 ء میں اس کی مرمت و بحالی کی گئی اور اس کے بعد سے یہ عارضی مرمتوں سے چل رہا تھا۔ مستقبل کے منصوبوں کے بارے میں آگاہ کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ آف ڈاک سہولت کے تحت 1500 ایکڑ پر محیط کارگو ولیج و انڈسٹریل پارک بنانے کا منصوبہ ہے جس پر 400 ملین امریکی ڈالرز خرچ ہوں گے۔

دیگر منصوبوں میں 2.9 بلین روپے لاگت کا 100 ایکڑ پر مشتمل ویٹ لینڈ چاندنی پارک، 1200 ملین روپے کی تخمینی لاگت سے لی مارکیٹ فلائی اوور منصوبہ شامل ہے۔ کے پی ٹی کی جانب سے کے پی ٹی۔ 77 میری ٹائم اینکلیو KPT-77 Maritime Enclave کی تعمیر کا منصوبہ بھی شامل ہے۔

پبلک، پرائیویٹ پارٹنر شپ کے تحت 77 منزلوں پر مشتمل اس منصوبے کی تخمینی لاگت 400 ملین امریکی ڈالرز ہے اور 4 ملین اسکوائر فٹ پر تعمیر ہونے والے اس ٹاور کی ڈیزائننگ مکمل ہو چکی ہے۔

ایک اہم منصوبہ ”کراچی ہاربر کراسنگ“ شہر اور پورٹ کو جدید بنانے کے پروگرام میں شامل کیا گیا ہے جو 519 ملین امریکی ڈالرز کے خرچ سے مکمل ہو گا اس ضمن میں ایشین ڈیولپمنٹ بینک کا تعاون حاصل کیا جا رہا ہے۔

یہ منصوبہ پاکستان ڈیپ واٹر کنٹینر پورٹ، کارگو ولیج، جنوبی ھاکس بے، منوڑا، نادرن بائی پاس اور لیاری ایکسپریس وے کو ملائے گا اور متعلقہ سہولتوں کے ساتھ بندرگاہ اور شہر کی خوبصورتی میں بہترین اضافہ ہو گا چونکہ یہ ایک بڑا منصوبہ ہے اور اس کی تکمیل میں طویل وقت درکار ہے جبکہ ہاکس بے رہائشی اسکیم تک پہنچ آسان اور صاف بنانے کے لئے فوری اقدام کی ضرورت ہے، اس امر کے پیش نظر فیصلہ کیا گیا کہ اس حصے کا کام لیاری ڈیولپمنٹ اتھارٹی ہنگامی بنیادوں پر مکمل کرے

x

Check Also

ملتان : زمین پر قبضے کیخلاف احتجاج، بزرگ جوڑے پر پولیس کا انسانیت سوزتشدد

ملتان (بیورو رپورٹ) پولیس نے احتجاج کرنے والے بزرگ جوڑے سے انسانیت ...

Connect!