شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / بین الاقوامی / تنازع شام تیسری عالمی جنگ ،روس نے شہریوں کو خبردار کردیا

تنازع شام تیسری عالمی جنگ ،روس نے شہریوں کو خبردار کردیا

روس(ڈیسک نیوز)تنازع شام تیسری عالمی جنگ چھیڑ سکتا ہے،روس نے شہریوں کو خبردار کرتے ہوئے خوراک ذخیرہ کرنے کے ساتھ ساتھ حفاظتی اقدامات اختیار کرنے کی ہدایات جاری کر دیں۔ تفصیلات کے مطابق روس کے سرکاری ٹی وی چینل ’’روسیا24‘‘نے تنازعہ شام پر تیسری عالمی جنگ چھڑنے کے خطرے سے شہریوں کو خبردار کرتے ہوئے انہیں خوراک ذخیرہ کرنےاور حفاظتی اقدامات اختیار کرنے کی ہدایات جاری کی ہیں۔ چینل نے شہریوں کو مشورہ دیا ہے کہ اگر تیسری عالمی جنگ چھڑگئی تو اپنے گھروں یا مہلک بموں سے بچاؤ کی پناہ گاہوں میں زندہ رہنے کیلئے پروگرام میں تجویز کی جانیوالی مخصوص خوراک استعمال کریں، ان اشیامیں پیک کیے ہوئے چاول، دلیہ یا جئی کے دانے، میدے کی سویاں اور مہر بندڈبوں میں رکھا گیا گوشت شامل ہیں، اس صورتحال میں پانی بہت زیادہ مقدار میں استعمال کرنا چاہیے، پیکنگ میں رکھی گئی آیوڈین کا استعمال بھی نہایت مفید ہوگا کیونکہ اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہے کہ متاثرہ شخص تابکاری اثرات سے محفوظ رہے گا، پروگرام میں بتایا گیا کہ پیک کیے گئے چاول 8 برس تک استعمال کے قابل ہوتے ہیں،Oatmeal تین سے سات برس تک قابل استعمال ہوتا ہے، تاہم روس کی مقبول گندم Bukwheat صرف ایک سال تک قابل استعمال رہتی ہے، اسی طرح مہربند ڈبوں میں رکھی گئی مچھلی2 برس سے زیادہ عرصے تک قابل استعمال نہیں رہتی، البتہ مہر بند ڈبوں میں رکھا گیا گوشت تقریباً 5 سال تک قابل استعمال رہ سکتا ہے. پروگرام میں بتایا گیا کہ عالمی جنگ کی صورت میں بھی چینی اور نمک کا معمول کی مقدارمیں استعمال جاری رکھنا چاہیے،ان حالات میں چاکلیٹ، مٹھائیوں،ٹافیوں اور condensed milk کا استعمال مفید نہیں ہوگا ، البتہ گلوکوز ضرور استعمال کرنا چاہئے کیونکہ یہ توانائی کو فوری بحال کردیتا ہے. ایک ماہر نے بتایا کہ اس دوران شہریوں کو خوراک کے ایسے اجزا کا استعمال بڑھادینا چاہیے جس میں آیوڈین زیادہ ہوتی ہے کیونکہ آیوڈین انسانی جسم کو تابکاری کےاثرات سے بچانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے. سرکاری ٹی وی کےمطابق اگر تیسری عالمی جنگ شروع ہوگئی تو امریکی عوام بدترین افراتفری اور ہیجان کا شکار ہوجائیں گے،اس کا اندازہ اس بات سے ہوسکتا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے الیکشن کے بعدبم حملے سے بچاؤ کیلئے بنائے جانیوالے شیلٹرز کا کاروبار بہت زیادہ بڑھ گیا ہے۔

error: Content is Protected!!