شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / پاکستان / خواجہ آصف نے نااہلی کیس میں تحریری جواب جمع کرادیا

خواجہ آصف نے نااہلی کیس میں تحریری جواب جمع کرادیا

اسلام آباد(بیوروچیف) سابق وزیر خارجہ خواجہ آصف نے اپنی نااہلی کے معاملے پر سپریم کورٹ میں تحریری جواب جمع کرا دیا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ بطور رکن اسمبلی ملازمت پرکوئی آئینی یا قانونی پابندی نہیں، عدالت عالیہ نے جن نکات پر نااہلی کا فیصلہ دیا وہ درست نہیں ہیں۔تفصیلات کے مطابق خواجہ آصف کی جانب سے جواب ان کے وکیل منیراے ملک نے جمع کرایا،تحریری جواب میں کہا گیا ہے کہ عدالت نے جن نکات پرخواجہ آصف کی نااہلی کا فیصلہ دیا وہ درست نہیں، بطور رکن اسمبلی ملازمت کرنے پر کوئی آئینی یا قانونی پابندی نہیں، جبکہ متحدہ عرب امارات کا قانون فریقین کو باہمی شرائط طے کرنے کی اجازت دیتاہے۔جواب میں کہا گیا ہے کہ خواجہ آصف کا کاغذات نامزدگی میں پیشہ کاروباربتاناغلط نہیں،کیونکہ سابق وزیر خارجہ کی آمدن کا بڑاحصہ ذاتی کاروبارسے ہے،منیر اے ملک نے کہا کہ کاروبار سے آمدن زیادہ ہونے کی وجہ سے پیشہ کاروباربتایا گیا،خواجہ آصف کی کاروبارسے آمدن 92 لاکھ اورملازمت سے 32 لاکھ ہے،کاغذات نامزدگی میں خواجہ آصف کی تنخواہ نو ہزاردرہم بتائی گئی۔جواب میں کہا گیا ہے کہ خواجہ آصف کی 62لاکھ 80ہزارغیرملکی آمدن میں تنخواہ کے 32لاکھ شامل تھے،کاغذات نامزدگی میں تنخواہ کانہیں واجبات اوراثاثوں کاپوچھاگیا،انہوں نے کہا کہ خواجہ آصف کے دبئی کے اکاو¿نٹ میں کبھی کوئی ٹرانزیکشن نہیں ہوئی،بنداکاؤنٹ کوظاہرنہ کرناکوئی غلط بیانی نہیں ہے۔ان کا کہنا تھا کہ دبئی کے اکاؤنٹ کو ظاہرنہ کرناغیرارادی غلطی تھی کوئی فائدہ حاصل نہیں کیا گیا،خواجہ آصف نے غلطی کاادراک ہونے پراپنااکاؤنٹ اثاثوں میں ظاہرکردیا،عدالت سے استدعا ہے کہ خواجہ آصف کی نااہلی کافیصلہ کالعدم قراردیاجائے۔عدالت نے خواجہ آصف کی اپیل سماعت کے لیے مقرر کر دی ہے، جسٹس عمر عطاء بندیال کی سربراہی میں تین رکنی خصوصی بینچ اکیس مئ کو سماعت کرے گا،جسٹس فیصل عرب اور جسٹس سجاد علی شاہ تین رکنی خصوصی بینچ کا حصہ ہیں۔

error: Content is Protected!!