شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / پیشہ وارانہ تعلیم صنعتی انقلاب کی اساس ہے
loading...
پیشہ وارانہ تعلیم صنعتی انقلاب کی اساس ہے

پیشہ وارانہ تعلیم صنعتی انقلاب کی اساس ہے

maqsood-anjumنوجوانوں کے علاوہ بالغ ملازمین کی جدید تعلیم وتربیت کی راہ میں ایک بہت بڑی رکاوٹ اس حقیقت میں مضمر ہے کہ مشرقی یورپی ملکوں کے فنی تربیتی مراکز میں اصول اور پالیسی کے طور پرموجودہ زمانے کی ٹیکنیکل ضروریات اورتقاضوں کو مد نظر نہیں رکھا جاتا۔نتیجتاً اب ان تمام ملکوں میں آزمائشی مراکز قائم کیے جا رہے ہیں۔جہاں برسرروزگار عملی تربیت اور بعد ازاں مزید اعلیٰ تربیت دینے کے پروگراموں میں فرموں اور کمپنیوں کو شامل کیا جاتا ہے۔اور مختلف پیشہ ورانہ تربیت کے اداروں کی اعانت کی جاتی ہے۔اب عملے کی تربیت اور فروغ کے لیے اس قسم کے صنعتی مراکز ،تجارتی ،تربیتی دفاتر،ٹیکنالوجی کے متعلق فرمیں مختلف مقامات پر موجود ہیں۔معیشت کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لیے جس بنیادی ڈھانچے کی ضرورت ہوتی ہے اس میں معیشت کے مفادات کی نگرانی کے لیے صنعت وتجارت کے ایوانوں کی شمولیت ضروری ہے۔جو روزگار مہیا کرنے والے مراکز کو اپنی ضروریات کے مطابق مشورے دے سکیں۔کسی علاقے کی اقتصادی ترقی اس کے ساتھ ساتھ منڈی کی معیشت کے فروغ کی خاطر اقدامات کے لیے ایسے اداروں کی موجودگی انتہائی ضروری ہے کیونکہ ان کی عدم موجودگی میں اقتصادی ترقی کا مقصد حاصل نہیں ہوسکتاوفاقی جمہوریہ جرمنی ،وسطی اور مشرقی یورپ میں اصلاحات کے عمل میں تعاون کے ساتھ ساتھ مثالی اور مالی امداد بھی کر رہا ہے۔مختلف اہم شعبوں میں متعلقہ حکومتوں کے ساتھ جرمنی گہرے اور قریبی روابط میں ہے۔تاکہ ان شعبوں میں ترقی کے لیے ممکن حد تک موثر رہنمائی فراہم کی جاسکے ۔ہنرمند کارکنوں کی پیشہ ورانہ تربیت اور تربیتی نظام کے سلسلے میں متعلقہ ضروریات کے بارے میں تجربات کے عام تبادلے کے بعد ابتدائی مراحل میں اپنی مدد آپ کے نظریے کی بنیاد پر تعاون کیا جاتا ہے ۔اگرچہ شعبوں کی اہمیت کے بارے میں اختلاف رائے پایا جاتا ہے اس کے باوجود تمام ممالک میں یکساں بنیاد پر اشتراک اور تعاون کیا جا رہا ہے۔پیشہ ورانہ تربیتی نظام میں اصلاح کے لیے رہنمائی اور قانون کے مطابق فاوٗنڈیشن کا قیام اشتراک اور تعاون کی مختلف کوششیں ہیں۔مثلا ماہرین کی خدمات مہیا کی جاتی ہیں۔رہنمائی کے لیے سیمینار ،مجلس مذاکرہ اورتربیتی ورکشاپس منعقد کی جاتی ہیں اور متعلقہ تحریری و تصویری مواد مہیا کیا جاتا ہے ۔پیشہ ورانہ تربیت کے شعبے میں اداراتی بنیاد پر اصلاحات کے لیے بنیادی قوانین و ضوابط مرتب کیے جاتے ہیں۔اورنئی انتظامی ذمہ داریوں کا تعین کیا جاتا ہے۔جدید مثالی تربیتی مراکز کے قیام میں مدد، تجارتی،صنعتی اور ٹیکنیکل تربیتی مراکز کے قیام میں اس بات کابطور خاص خیال رکھا جاتا ہے کہ ان میں مختلف پیشوں کے بارے میں ایسی عملی تربیت دی جاسکے جومنڈی کی معیشت کی ضروریات پوری کر سکے۔اس کے ساتھ انتظامی امور کی تربیت کے لیے ادارے بھی قائم کیے جاتے ہیں۔جہاں ان لوگوں کی تربیت کی جاسکے۔جنہیں آگے چل کر فیصلے کرنے کی ذمہ داریاں نبھانی ہوں۔اس بارے میں دی جانے والی مدد اور تعاون میں ترقیاتی منصوبہ بندی ۔عملے کی تعلیم اور نصاب کی تیاری اور تعلیم وتدریس کے لیے استعمال ہونے والے مواد ،سازوسامان کی فراہمی شامل ہے۔اور اس کی وجہ یہ ہے کہ اس طریقہ کار کے ذریعے متعلقہ ممالک تربیتی اقدامات کو خود بروئے کار لا سکتے ہیں۔اور اپنے حالات اور ضروریات کے مطابق نئے طریقے اپنا سکتے ہیں۔اس وقت جرمن یورپین مملک سے کہیں آگے جارہا ہے اور نئے نئے فنی کمالات سے صنعتی ،تحقیقی معاملات میں جدت پیدا کر رہا ہے۔یہ ایک سچی حقیقت ہے کہ جرمن نے پاکستان کی صنعتی ترقی میں ان گنت مشورے دئیے اور تعاون کیا ہے۔پیشہ ورانہ تعلیم کو فروغ دینے میں جرمن کا بہت بڑا ہاتھ ہے ۔ہمارے ہاں بیشتر تربیتی ادارے پاک جرمن کے تعاون سے قائم ہیں۔اور ان اداروں کے سٹاف کی تربیت میں بھی جرمن کا ہاتھ ہے۔جرمن نے ہمارے تعلیمی وتربیتی اداروں کو جدید بنانے میں عملی اور مثالی تعاون کیا ہے ،سٹاف کی تعلیم وتربیت کے لیے عملی اقدامات اٹھائے ہیں۔ بلاشبہ جرمن سے ہم نے بہت کچھ لیا اور سیکھا مگر دیکھنا یہ ہے کہ ہماری ٹیوٹا کیاکر رہی ہے ۔اخبارات میں تو ٹیوٹا کی کارگردگی کے بارے میں بہت کچھ کہا جا رہاہے۔روزانہ دو چار خبریں ٹیوٹا کی کارگردگی کے بارے میں شائع ہوتی ہیں لیکن میری نظر میں کارگردگی ایسی نہیں جس پر ہم اطمینان کا اظہار کر سکیں۔ابھی ہمیں بہت کچھ کرنا ہے ۔سٹاف اور ملازمین کی گردنیں دبوچنے سے ٹیوٹا کی کارگردگی کو اچھا نہیں کہا جاسکتا۔دیکھنا تو یہ ہے کہ اداروں سے تعلیم وتربیت حاصل کرنے والوں کی کارگردگی کتنی مثالی اور انقلابی ہے۔بہت سے پولی ٹیکنیک ،ٹیکنیکل ٹریننگ انسٹی ٹیوشنزاور چھوٹے چھوٹے تربیتی مراکز ایسے ہیں جہاں تربیتی معیار اس قابل نہیں کہ وہ صنعتی یونٹوں میں جاکر صنعتی عملے اور سپر وائزروں کو مطمن کرسکیں۔گورنمنٹ ٹیکنیکل ٹریننگ انسیٹیوٹ قصو رکو ہی دیکھ لیں۔یہاں مشین شاپ، الیکٹرونکس شاپ،ویلڈنگ شاپ میں نوجوان داخلہ ہی نہیں لیتے کہ ،جس کے لیے پرنسپل کو دن رات ایک کرنا پڑتا ہے ،اس کی کیا وجوہات ہیں۔ٹیوٹا انتظامیہ کو اس پر غور کرنا ہو گا۔اپنے ادارے کی کمزوریاں تو پرنسپل ہی بتاسکتے ہیں۔مگر جو میرے مشاہدے میں آیا ہے وہ سٹاف کی عدم دلچسپی اور مہارت میں کمی ہے۔جس کی وجہ سے نوجوان ان شعبوں میں داخلہ نہیں لیتے اور پھر یہ سٹاف برسوں سے اسی ادارے میں موج مستی اڑا رہا ہے ۔دیہی مزدور تربیتی مراکز جہاں کوڑا کرکٹ بھرا ہوا ہے اگرکوئی ہیراہے تو وہ بھی پتھر بن کے رہ گیا ہے۔ان اداروں میں سینکڑوں ملازم ایسے ہیں،جنہوں نے صدیاں گزاردیں لیکن تنکا بھی توڑ کر نہیں دکھایا ۔ ایسے ملازم جو کسی شعبے میں سمانا نہیں چاہتے ،ان کو جبری فارغ کردینا چاہیئے تھا۔چاہیئے تو یہ تھا کہ ایسے افراد کو بڑے اداروں میں ایڈجسٹ کرکے ان سے کام کیا جاتا مگر ایسا ہرگز نہیں ہوسکا۔ افسوس کے سوا کچھ نہیں کہا جا سکتا کیوں کہ میرے جیسے شخص کی کون سنتا ہے۔میں اپنے کالموں میں کئی تجاویز و آرادے چکا ہوں مگر آج تک ٹیوٹا انتظامیہ کے کسی فرد نے مجھ سے رابطہ نہیں کیا ۔ حالانکہ میں مفت تعاون کرنا اپنا فرض اولین سمجھتا ہوں۔میں یہ نہیں کہتا کہ مجھے ایڈوائزر بنا کر دو لاکھ روپے ماہانہ دو ۔

note

Share Button
loading...
loading...

About aqeel khan

loading...
Scroll To Top
web stats