شہ سرخیاں
Home / تازہ ترین / رجب طیب ،امت مسلمہ اور امریکہ
loading...
رجب طیب ،امت مسلمہ اور امریکہ

رجب طیب ،امت مسلمہ اور امریکہ

qasim ali logoدنیائے اسلام میں شاندار ماضی کی حامل ترک قوم کو کبھی سرنگوں نہیں کیا جاسکا اس کی دلیری و جفاکشی ہمیشہ سے ہی ضرب المثل رہی ہے آج سے نوے برس قبل سیکولر مصطفیٰ کمال اتاترک نے اگرچہ ترکی کی اصل اسلامی شناخت کومٹانے کیلئے مساجد و مدارس کو تالے لگاکرشراب و شباب اور ڈانس کلبوں کو ترویج دی اسلام کی بجائے سیولرازم اس ملک کا سپریم لاء اور لادین فوج کو اس کا مالک بنادیاگیا قرآن و حدیث کی تعلیم جرم قرارپائی علمائے کرام کو پابندسلاسل کردیا گیا لیکن ان تمام تر اقدامات کے باوجود ترک قوم نے اپنی شناخت کو دبنے نہیں دیا اور اللہ نے عدنان میندرس،نجم الدین اربکان جیسی شخصیات کو اس قوم کیلئے مسیحا بنا کر بھیجا جنہوں نے ترک قوم کو اس کا اصل تشخص یاددلایا اور 1996ء میں ستنبول کے میئر کے طور پر رجب طیب اردگان نے جب چارج سنبھالا تو اس وقت استبول فحاشی و عریانی ،منشیات اور دیگر جرائم کا گڑھ تھا مگر رجب طیب نے اپنے اقدامات سے استنبول کے عوام کے دل جیت لئے اور چند ہی برسوں میں استنبول منشیات سے پاک اور امن و امان کا گہوارہ بن چکا تھاان کی یہی کامیابی ہی آگے چل کر انہیں جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ پارٹی کے پلیٹ فارم سے ملک کا سربراہ بناگئی ۔رجب طیب اردگان ترکی کے ہی نہیں بلکہ عالم اسلام کے انتہائی دلیر لیڈر ثابت ہورہے ہیں بنگلہ دیش کے مظلوم مسلمان بھائیوں کا معاملہ ہو یا صیہونیوں کی ریشہ دوانیوں کے شکار فلسطینیوں کی فریڈم فلوٹیلاکے ذریعے مدد کی بات ہر جگہ رجب طیب نے جرأتمندی کا مظاہرہ کیا ہے اور حال ہی میں جب روس کے جہاز نے ترک فضاؤں میں بغیر اجازت مداخلت کی تو چوکس ترک افواج نے اسے مارگرایا جس پر روس نے ترکی کو بہت دھمکایا مگر رجب کی جرأت کے آگے روس بھی بلی بن گیا ۔گزشتہ دنوں جب طیب اردگان نے پاکستان کے دورہ کے دوران پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں ایک بار پھر جہاں کشمیر پر پاکستانی موقف کی تائید کی وہیں یہ بھی ببانگ دہل کہا کہ مسلم دنیا میں فساد کی جڑ امریکہ ہے کاش ڈیڑھ ارب مسلمانوں پر حکومت کرنیوالے ساٹھ حکمران اور مسلمانوں کے مسائل کی ترجمان ہونے کی دعویدار اوآئی سی بھی اسی جرأت و فراست کا مظاہرہ کریں تو کشمیر و فلسطین سمیت امت مسلمہ کے تمام مسائل کو حل ہونے سے کوئی نہیں روک سکتا۔بیشک امریکہ اس دور کا وہ سانڈھ ہے جو خود کو سکی قانون اور ضابطے کا پابند نہٰں سمجھتا وہ نہ صرف لڑاؤاور حکومت کرو کے فلسفہ پر عمل کرتے ہوئے پوری دنیا میں جنگ کی بھٹی دہکائے رکھتا ہے بلکہ اپنے مکروہ عزائم وارادوں کی تکمیل کیلئے اپنے ہی قوانین اور اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کنونشن کو بھی اپنے پاؤں کی ٹھوکر پہ رکھتا ہے جس کی پہلی شق ہی یہ بتاتی ہے کہ تمام انسانوں کو بلاتفریق رنگ و نسل اور مذہب یکساں عزت اور حقو ق حاصل ہیں مگر اس خونی بھیڑئیے کی سفاکیت کا جوعالم ہے اس کیلئے مثال کافی ہے کہ جب اس کا کو ئی ریمنڈ ڈیوس دن دیہاڑے قرطبہ چوک پر دوپاکستانیوں کو خاک و خون میں نہلا دیتا ہے تو اس کو سزا دلوانے کی بجائے کی بازیابی کیلئے سرکاری سطح پر دھمکیاں دی جاتی ہیں اور اسے چھڑوالیا جاتا ہے جب کہ دوسری جانب جب ایک پاکستانی لڑکی اپنے دفاع کیلئے کسی امریکی پر صرف بندوق تانتی ہے تو اس پر اس کو 86برس کی سزا سنادی جاتی ہے حالاں کہ یہ اس کا کوئی جرم بھی نہیں بلکہ اس نے اپنا دفاع کاوہ حق استعمال کیا تھاجو اسے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق چارٹرکی شق نمبر 5دیتی ہے جس میں واضح درج ہے کہ کسی بھی شخص کے ذاتی معاملات میں مداخلت نہیں کی جاسکتی اور اگر مداخلت کی جائے تو اس شخص کو اپنے دفاع کا حق حاصل ہے۔صرف یہی نہیں بلکہ اس شیطان نے جنیوا کنونشن کو بھی اپنے پاؤں تلے خوب رولا ہے جس کے آرٹیکل نمبر13کے مطابق کوئی ممبر ملک جنگی قیدیوں کی تصاویر نہ دکھانے کا پابند ہے مگر امریکہ نے ان قیدیوں کی تصاویر اور وڈیوز تک میڈیا پر چلادیں،آرٹیکل 18کے مطابق جنگی قیدیوں کو ہتھکڑیاں نہیں لگائی جاسکتیں ،آرٹیکل26اور28ان قیدیوں کیلئے کھانے کے کمرے اور کینٹین بناے کی ہدائت کرتا ہے ،آرٹیکل 34انہیں اپنے مذہب کے مطابق آزادی کا حق حاصل ہوتا ہے،آرٹیکل 38انہیں جسمانی ورزشوں آرٹیکل71خطوط لکھنے اور72انہیں کتابیں وصول کرنے اور مطالعہ کی بھی اجازت دیتا ہے مگر امریکہ اپنے ان ٹارچر سیلوں اور ایکسرے کیمپوں میں قید ان انسانوں کو ان میں سے کوئی بھی سہولت نہیں دیتابلکہ ان کے ساتھ جو سلوک کیاجاتاہے اسے انسانیت کی بدترین تذلیل کہاجاسکتا ہے
جس کی ایک ہلکی سے جھلک ملاحظہ ہوکہ گوانتا ناموبے اور ابوغریب کی بدنام زمانہ جیلوں میں انہیں نہ صرف یہ کہ شدید سردی میں ننگا اور بھوکا رکھا بلکہ ان کو نماز اور تلاوت کی اجازت بھی نہیں دی جاتی بلکہ جو ایک جدید ترین سزا دی جاتی ہے وہ یہ ہے کہ ان کے ہاتھ اور پاؤں باندھ کر ان کے منہ پر ٹیپ لگادی جاتی ہے ،ان کی داڑھی اور سرکے بال مونڈھ دئیے جاتے ہیں،ان کی آنکھوں پر سیاہ چشمے پہنادئیے جاتے ہیں ان کے کانوں پر آلے لگا کر انہیں سننے کی حس سے بیگانہ کردیا جاتا ہے اور ان کے ہاتھوں پر بھاری دستانے چڑھادئیے جاتے ہیں یہ تشدد کا بھیانک ترین طریقہ ہے جس کے ذریعے انسان کے حواس خمسہ ختم ہو کررہ جاتے ہیں اب وہ نہ سن سکتے ہیں،دیکھ سکتے ہیں ،بول سکتے ہیں،سونگھ سکتے ہیں اور نہ ہی چھوسکتے ہیں کئی ہفتے اس حالت میں رکھنے کے بعد انہیں2,3میٹر کے پنجروں میں ڈال دیا جاتا ہے جس میں وہ سو بھی نہیں سکتے انہیں اس میں اکڑوں ہو کر بیٹھنا پڑتا ہے ۔یہ تفصیلات ٹونی بلیئر کے دور حکومت میں برطانیہ کی کوششوں سے رہاہونے والے ایک باشندے نے بتائیں اور سب سے بڑھ کر یہ کہ ان کی نظروں کے سامنے قرآن پاک کی بارہا بے حرمتی کر کے ان کو شدید نفسیاتی اذیت سے بھی دوچار کیا اس کا مزید یہ کہنا تھا کہ انہیں اس وقت بہت خوشی ہوتی تھی جس دن انہیں جسمانی تشدد کیلئے باہر نکالا جاتا تھا اگرچہ یہ تشدد بھی بدترین ہوتا تھا مگر ہم یہ چاہتے تھے کہ ہمیں اسی طرح مارمار کر ختم کردیا جائے مگر اس نفسیاتی اذیت سے نجات مل جائے جس کی وجہ سے ہم ہر لمحہ موت کا ذائقہ محسوس کرتے تھے ۔ہومن رائٹس کیلئے کام کرنے والی ایک تنظیم کے عہدیدار نے جب یہاں کا دورہ کیا تو وہ یہ کہنے پر مجبور ہوگیا کہ ”ایسا لگتا ہے کہ میں دس ہزار سال پہلے کے دور میں آگیا ہوں یہ وہ جگہ ہے جہاں دنیا کا کوئی قانون اور ضابطہ لاگو نہیں ہوتا اور انسانوں کو جانوروں سے بھی بدتر حالت میں رکھ کر انسانیت کی توہین کی جارہی ہے ۔یہ ہے بدمعاش اور عالمی غنڈے امریکہ کی اصلیت کی ایک ہلکی سی جھلکی مگرامریکہ کے جنگی جرائم یہیں پر ختم نہیں ہوتے بلکہ اگر یہ کہا جائے کہ انسانی حقوق کی ہونے والی ہر پامالی میں اسی امریکہ کا واضح ہاتھ رہاہے
تو غلط نہیں ہوگا جو آج پوری دنیا میں امن و انسانیت کا واحد ٹھیکیدار ہونے کا دعوایدار بنا پھرتا ہے اب یہاں ایک سوال کیساتھ اپنا کالم ختم کرتا ہوں کہ جن اقوام اور ممالک کے باسیوں کیساتھ امریکہ اس قدر وحشیانہ مظالم روا رکھے ہوئے ہے اس کے ردعمل میں کیا امریکہ کو پھول پہنائے جائے گے ؟ نہیں ہرگز نہیں بلکہ اس ظلم و ستم کے نتیجے میں دنیا کا امن و امان تباہ ہی ہوگا جو کہ ہوبھی چکا ہے بیشک درست کہا گریٹ طیب نے کہ تمام فتنوں کے پیچھے امریکہ ہی کا ہاتھ ہے۔

note

Share Button
loading...
loading...

About aqeel khan

loading...
Scroll To Top