شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / تازہ ترین / سانگھڑ:ضلع بھر کے 332سرکاری اسکولوں کے پانی کو سرکاری لیبارٹیرز نے انسانی صحت کیلئے خطرناک قرار دے دیا

سانگھڑ:ضلع بھر کے 332سرکاری اسکولوں کے پانی کو سرکاری لیبارٹیرز نے انسانی صحت کیلئے خطرناک قرار دے دیا

سانگھڑ (نامہ نگار) ضلع بھر کے 332سرکاری اسکولوں کے پانی کو سرکاری لیبارٹیرز نے پانی کو انسانی صحت کے لئے خطر ناک قرار دے دیا تمام اسکولوں کے لئے آراو پلانٹ لگانے کی ڈیمانڈ کردی گی ہے جلد سرکاری اسکولوں میں آراو پلانٹ لگانے کا کام شروع ہوجائے گا۔ای ڈی او ایجوکیشن یار محمد بالادی۔تفصیل کے مطابق تین سال قبل یونین سیف نے بھی سانگھڑ کے پانی کو انسانی جانوں کے لئے خطر ناک قرار دیکر میونسپل کمیٹی میں پانی چیک کرنے کے لئے لیبار ٹری قائم کی تھی ضلع میں ہزاروں کی تعداد میں کالے یرقان کی بیماری پھیل جانے کو مد نظر رکھتے ہوئے حکومت سندھ کی جانب سے ضلع بھر کے سرکاری اسکولوں کے332اسکولوں کے پانی کواسلام آباد چیک کرنے کے لئے روانہ کیا گیا سرکاری لیبارٹریز کی رپورٹ آنے کے بعد ای ڈی او ایجوکیشن سانگھڑ یار محمد بالادی نے ضلع بھر کے سرکاری اسکولوں کے لئے آراو پلانٹ کی حکومت سندھ سے ڈیماند کردی ہے یار محمد بالادی کا کہنا ہے کہ بالا افسران کے حکم پر ضلع بھر کے مختلف اسکولوں سے ہینڈ پمپ اور واٹر سپلائز کا پانی کا سیمپل لیکر اسلام آباد چینکنگ کے لئے روانہ کیا گیا تھا جہاں سے تمام اسکولوں کے پانی کی رپورٹ نیگیٹو آنے کے بعد صوبائی حکومت کو اسکولوں میں آراو پلانٹ لگانے کی ڈیمانڈ کر دی ہے جلد ضلع بھر کے اسکولوں میں آر او پلانٹ لگانا شروع ہوجائیں گے ان کا کہنا تھا کہ اسکولوں میں میڈیکل کی سہولتیں بھی فراہم کرنے کی ڈیمانڈ کی گی ہے

error: Content is Protected!!