تازہ ترینعلاقائی

لالیاں ایلیمنٹری سکول میں مالی بے ضابطگیوں اور سرکاری خزانے پر لاکھوں روپے کا مبینہ طور پر ٹیکہ لگانے کا انکشاف

چنیوٹ (بیورورپورٹ)چیف سیکرٹری پنجاب کے احکامات ہوا میں اڑا دئیے گئے لالیاں ایلیمنٹری سکول میں مالی بے ضابطگیوں اور سرکاری خزانے پر لاکھوں روپے کا مبینہ طور پر ٹیکہ لگانے کا انکشاف ایلیمیٹری سکول لالیاں کی ہیڈ مسٹریس نے سکول کو سونے کی چڑیا بنا لیااپنے قوانین کے تحت بھرتیاں اور کمیٹیاں تشکیل دیکر ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ میں نئے قوانین متعارف کروانے کا ریکارڈ قائم کردیا بچوں سے سکول فیس اور پیپرز فنڈ کی مد میں بھاری رقوم بٹوری جا رہی ہیں۔لاکھوں روپے کی تعمیراتی گرانٹ ہضم۔سکول کے قیمتی پردے غائب۔قیمتی درخت کٹوا کر کھڈے لائن لگا دئیے گئے۔سکول کی مائی کے نام سکول کونسل میں درج۔کینٹین کی مالکہ خود ہیڈ مسٹریس۔ تفصیلات کے مطابق گورنمنٹ گرلز ایلیمنٹری سکول لالیاں کی ہیڈ مسٹریس طاہرہ نے لکڑ ہضم، پتھر ہضم واے مقولے کو سچ ثابت کرتے ہوئے وسیع پیمانے پرکرپشن کا گندہ دھندہ شروع کیا کر دیا۔ ایک شہری نے تحریری درخواست EDOایجوکیشن کو گزاری کہ موصوفہ کی کرپشن کا نوٹس لیتے ہوئے اس کا مستقل سدباب کیا جائے۔ شہری نے بتایا کہ سکول کے بچوں سے سکول فیس اور پیپرز فنڈ کے نام پر بھاری رقم بٹوری جا رہی ہیں۔جبکہ پنجاب حکومت نے مفت تعلیم کے احکامات جاری کئے ہیں۔سکول کونسل لاہور میں بچوں کو وظائف اور کارکردگی بارے معلومات میں سکول میں کام کرنے والی مائی ثمینہ کا نام درج ہے ۔جبکہ جائنٹ ممبر اپنا ہی ڈرائیور رکھ لیا ۔اور اس طرح سکول کونسل میں خود اپنے ذاتی ملازمین کے نام ڈال کر خود ساختہ کاروائیاں تحریر کر کے فنڈز کو ہضم کرنا اپنا وطیرہ بنا لیا۔ کچھ عرصہ قبل سکول کی تعمیرات کروائیں گئیں جس پر سابقہ بلڈنگ کا ملبہ بغیر کسی آکشن کے خود ہی بیچ دیا گیا اور اس سے ملنے وال رقم ہڑپ کر لی گئی۔بتایا گیا کہ سکول کے بچوں سے اکٹھا کیا جانے والا فروغ تعلیم فنڈ جو کہ تقریباً20ہزار روپے ماہانہ بنتا ہے اسے بھی اپنی ذاتی ملکیت سمجھ کر ہضم کر لیا جاتا ہے۔گزشتہ دو ماہ قبل سکول میں پودوں کے نام پر 30ہزارروپے کا غبن کیا گیا اور پودوں کی جگہ600روپے کی پنیری لگا کر خانہ پوری کر دی گئی۔جبکہ سکول سے 8قیمتی درخت پراسرار طور پر غائب ہیں ۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ سکول میں موجود کینٹین کی مالک بھی میڈم موصوفہ ہیں اور سٹاف سے ایک ٹیچر کی ڈیوٹی اس کینٹین پر لگائی گئی ہے۔جو کہ بچوں کو پڑھانے کی بجائے کینٹین کا بزنس سنبھالتی ہیں۔شہری کی درخواست پر EDOایجوکیشن سید توقیر حسین شاہ نے ڈسٹرکٹ آفیسر ایلیمنٹری (زنانہ)کو انکوائری مارک کر دی۔جس پر DOایجوکیشن (زنانہ) نے کوئی کاروائی نہ کی ہے اور درخواست گزار کو اپنی شکایت واپس لینے کیلئے بااثر لوگوں سے پریشر ڈلوایا جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں  وزیراعظم کی آصف زرداری سے ون آن ون ملاقات

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker