تازہ ترینکالممحمداعظم عظیم اعظم

اے مسٹرسُنیئے ..سُنیئے انتخابات تو ہوگئے کیا زرداری ابھی صدر رہیں گئے تو….؟

Azam Azim Azamگیارہ مئی 2013کو پاکستان میں ہونے والے عام انتخابات کے حوالے سے برطانوی میڈیاکا یہ کہناہے کہ پاکستان میں عام انتخابات میں انتخابی مہم پر خرچ کی جانے والی رقم سے 35ہزار اسکول بنائے جاسکتے تھے برطانوی میڈیاکا کہناہے کہ ایک رپورٹ کے مطابق ایک طرف تو پاکستان میں اسکول نہ جانے والے بچوں کی تعداد کے لحاظ سے یہ دنیاکا دوسرابڑاملک بن چکاہے اور انتخابی اشتہارات پر اتناپیسہ خرچ کیاگیاہے کہ جن سے 35ہزاراسکول بنائے جاسکتے تھے اَب پاکستانی قوم اندازہ لگائے کہ گیارہ مئی 2013کے عام انتخابات میں الیکشن کمیشن نے انتخابی مہم کے لئے قومی اسمبلی کے جو 4671اُمیدواروں اور اِسی طرح صوبائی اسمبلی کے 10958اُمیدواروں میں سے ہراُمیدوار کو 15لاکھ روپے خرچ کرنے کی اجازت دی تھی اِس طرح قومی اور صوبائی اسمبلی کے اُمیدوارمجموعی طورپر18ارب روپے خرچ کرنے کے اہل قرارپائے اَب ایسے میں جبکہ انتخابات کا مرحلہ الحمدللہ تکمیل پاچکاہے اور غیرسرکاری اور حتمی نتائج بھی سامنے آچکے ہیں اتنی بڑی رقم خرچ ہونے کے بعد بھی اگرکسی کو انتخابات کی شفافیت اور الیکشن کمیشن کی غیرجانبداری پر شک ہوتو پھرایسے لوگوں کو قوم کیا کہے گی یہ اختیار میں اپنے پڑھنے والوں پر چھوڑتاہوں۔
اِس صُورت حال میں، میں یہ سمجھتاہوں کہ اَب بھلے سے کوئی انتخابی نتائج کو اپنی نگاہ سے مشکوک بنانے کے لئے وائٹ پیپر جاری کرے یا کوئی گیارہ مئی کو ملکی تاریخ میں منعقد ہونے والے انتخابات پر دھاندلی کا ڈھنڈورا اور اپنا سرپیٹتاپھرے ، وہ کم ازکم اِس حقیقت سے تو انکارکر ہی نہیں سکتاہے کہ امریکا، برطانیہ ،بھارت اور بانکی مون سمیت ہمارے کئی عرب دوست ممالک کے رہنماجو گیارہ مئی سے بھی پہلے ہی سے ہمارے اِن انتخابات کی شفافیت اور اِس سے اخذ ہونے والے نتائج پر گہری نظررکھے ہوئے تھے اور آج اُنہوں نے اِن انتخابات میں واضح اکثریت لے جانے والی جماعت پی ایم ایل (ن) کے سربراہ میاں محمدنوازشریف کو آئندہ حکومت بنانے اوراِنہیں اگلے پانچ سالوں کے لئے تیسری باروزارت عظمیٰ کے لئے نامزد کئے جانے پر مبارک بادیاں دے دیءں ہیں جو اِس جانب واضح اشارہ ہے کہ عالمی سطح پر گیارہ مئی کے انتخابات کو سراہاگیاہے اور اِن انتخابات سے جو نتائج سامنے آئے ہیں اِنہیں بھی پاکستان ایک مستحکم اور پائیدار حکومت کی تشکیل کے لئے خوش آئندہ قراردیاجارہاہے یوں میرے نزدیک جب عالمی سطح پر گیارہ مئی 2013کے عام انتخابات کو صاف وشفاف قراردے دیاگیاہے اور اِس کے نتائج کوبھی درست سمجھاجارہاہے تو پھر کوئی بات نہیں ہے..؟کہ بھلے سے کچھ حلقوں سے ہارنے والے انتخابات کو مشکوک بنانے کے لئے اپنے اپنے اعتراضات پیش کریں تو کرتے رہیں کیوں کہ یہ سب ہی جانتے ہیں کہ صرف ہمارے ہی یہاں نہیں بلکہ ساری دنیا میں بھی ہارنے والے ایساہی کیا کرتے ہیں جیساآج ہارنے والے ہمارے یہاں کررہے ہیں ۔
بہرحال..!آج جس بات نے مجھے اپنا یہ کالم لکھنے پر متحرک کیا وہ بات یہ تھی کہ جس روزگیارہ مئی کو انتخابات ہورہے تھے اُس روز میں کراچی کے ایک علاقے اورنگی ٹاؤن کی ایک سڑک سے گزررہاتھاتو اِس وقت کئی بزرگوں کا ایک ٹولہ(جوغالباََووٹ کاسٹ کرکے جارہاتھا)میرے قریب آیااور مجھے رکنے کا اشارہ کیا پہلے تو میں سمجھ نہیں سکاکہ یہ کون لوگ ہیں مگر اگلے ہی لمحے میری پریشانی کو بھانپتے ہوئے ایک دانابزرگ نے لب کُشائی کی اورمجھ سے مخاطب ہوتے ہوئے بولے ’’کھبرائے نہیں ہم وہ نہیں ہیں جو آپ سمجھ رہے ہیں…مگرہمیں یقین ہے کہ آپ وہ ہیں جو ہم آپ کو سمجھ رہے ہیں یعنی کیاآپ میڈیاپرسن ہیں..؟میں نے جواب دیا ’’جی فرمائیے ‘‘تواُنہوں نے سوالیہ انداز سے مجھ سے پوچھاکہ ’’اے مسٹر سُنیئے ..! کیاآپ یہ بتاسکتے ہیں کہ زرداری ابھی صدرِ مملکت رہیں گے ..؟اگریہ صدر رہیں گے تو…پھر….؟اِس سے پہلے کہ یہ مزیدکچھ کہتے میں اِن کے تذذب سے اِن کی ہر بات اور اِن کے ذہن میں پیداہونے والے آئندہ کے خدشات کو سمجھ گیااور میں نے مختصراََجواب دیاکہ ’’جی ہاں زرداری ابھی صدرِمملکت رہیں گے‘‘ اور میرے خاموش ہوتے ہی اِن میں سے ایک دوسرے بزرگ نے اپناجملہ مکمل کیا…’’تواِس کا مطلب یہ ہواکہ کیا نئے حکمرانوں کا کڑاامتحان اور قوم کی آزمائشیں پھر شروع ہونے کو ہیں…؟مگراِس سے پہلے کہ میں اِس کی صفائی میں مزیدکچھ کہتااور اِن کے خدشات کو دورکرتا…بزرگوں کا یہ ٹولہ اپنے پیر پٹختے ہوئے آگے بڑھ گیااور میں یہ سوچتاہواکہ ’’ صدر زرداری نے پانچ سالوں میں اپنی مفاد پرستدانہ پالیسیوں اور معنی خیزاپنے مفاہمتی عمل سے اپنا سیاسی قدتو بڑھائے رکھامگراتنے عرصے میں اُنہوں نے عوامی مسائل حل کرنے کی جانب کوئی توجہ نہ دے کرقوم کو اتنامایوس کردیاہے کہ آج قوم اِن کا نام اور اِن کے وجو د کو بھی برداشت کرنے پرآمادہ نہیں ہے‘‘ اپنی منزل کی جانب چل پڑا۔
آج جب کہ گیارہ مئی 2013کے مُلک میں ہونے والے عام انتخابات کے غیر سرکاری اور غیر حتمی نتائج آگئے ہیں اور یہ بھی واضح ہوگیاہے کہ وفاق اور صوبوں میں کس کس کی حکومت بننے جارہی ہے یہ عمل اگلے دوچار روزمیں سرکاری نتائج کے آتے ہی تکمیل کو پہنچ جائے گااورقوم کو لگ پتہ جائے گاکہ مُلک میں وفاق سمیت کس صوبے میں مخلوط تو کہیں ون پارٹی حکومتیں تشکیل پانے کو ہیں اور اِسی کے ساتھ ہی قوم کویہ بھی معلوم ہوجائے گاکہ مُلک اُس مثبت تبدیلی کے ساتھ اُس راہ پر گامزن ہوجائے گاجس کے خاطر ساڑھے اٹھارہ کروڑ عوام نے گیارہ مئی2013 کومنعقد ہونے والے عام انتخابات میں اپنا حقِ رائے دہی استعمال کیاتھا۔
یہاں یہ امرقابلِ ستائش ہے کہ پاکستانی قوم نے گیارہ مئی کے عام انتخابات کے روز دہشت گردوں کی جانب سے دی جانے والی خطرناک دھمکیوں اوراِن کے آگ و خون کے کھیلے جانے والے کھیل کی پراہ کئے بغیراپنے بہترمستقبل کے خاطربڑی تعداد میں گھروں سے نکل کراپناحق اداکیا اور اپنی سمجھ اور نیک جذبوں کے ساتھ ایک ایسی قیادت کو چن لیاہے جومُلک کو توانائی بجلی و گیس کے بحرانوں سے نکالنے سمیت مہنگائی، دہشت گردی اور دیگرمسائل کے حل کی جانب بھی توجہ دے گی،اَب اِس حوالے سے نگراں حکومت پربھی بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ کسی کا آلہء کار بنے بغیراورکسی ھیل حجت اور چون وچراکئے نومنتخب قیادت کواقتدارمنتقل کردے گی اور اِس کے بعدوفاق میں سب سے بڑی پارٹی ہونے کے باعث پاکستان مسلم لیگ (ن) کی حکومت کی بھی اولین ترجیح یہ ہونی چاہئے کہ یہ اپنے مینڈیٹ کا خاص خیال رکھے اور اپنے انتخابی جلسوں، جلوسوں، ریلیوں اور میڈیاپر جاری بیانات کے مطابق عوام سے کئے گئے وعدوں اور ایجنڈوں پر فوری عمل کرکے دکھائے اور مُلک کو بجلی اور گیس کی صُورت میں درپیش مسائل کے فوری حل اور بڑھتی
ہوئی لوڈشیڈنگ جیسے مسئلے کو کم کرنے سمیت ملکی معیشت کو سہرادینے کے ساتھ ساتھ کے ترجیحی بنیادوں پر ایسے اقدامات کرے کے اُس سے یہ معلوم ہو کہ نومنتخب حکومت نے عوامی شعور اور بالغ نظری کو تقویت بخشنے کا سامان کیاہے جس کی بنیاد پر عوام نے اِسے پی پی پی سے اقتدارچھین کر تیسری بارمسندِ اقتدار پربیٹھایاہے اور اگریہ بھی اپنے پیش روکے نقشِ قدم پر چلیں گے تو پھر اگلے انتخابات میں اِن کا بھی قوم وہی حشرکرے گی جیساآج سابقہ حکمران جماعت پاکستان پیپلزپارٹی کا کردیاہے سو اپنے اِس عبرت ناک انجام سے بچنے کے لئے ضروری ہے کہ پی ایم ایل (ن)کو ایساکچھ اچھا کرناہوگاکہ قوم اگلے انتخابات میں اِسے پھر اقتدارکی سیج پر بیٹھادے۔

یہ بھی پڑھیں  اے ایف ٹی سی ایشیاء کا نائب صدر منتخب ہونے کے بعد اپنے اعزاز میں منعقدہ ایک خصوصی تقریب کے شرکاء سے خطاب

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker