تازہ ترینکالممحمداعظم عظیم اعظم

اَب مسئلہ کشمیر بھی حل کردو

مدرٹریسا کا کہناہے کہ’’ جب تک آپ لوگوں کو پرکھنے میں لگے رہتے ہیں تو آپ کوکبھی اتنی توفیق حاصل نہیں ہوتی ہے کہ آپ کسی کے لئے کوئی بھلاکرسکیں اور جب آپ اپنی اِس روش میں تبدیلی لے آتے ہیں تو پھر اِس کے مثبت نتائج مرتب ہوتے ہیں‘ ‘یعنی اِسی طرح جب تک بھارت اور پاکستان کے حکمران اور عوام ایک دوسرے کو پرکھتے رہے اُس وقت تک اِن میں بھلائی کی توفیق ہی پیدانہیں ہوئی مگرآج جب اِنہیں مدرٹریسا کی یہ بات سمجھ آگئی تو اِنہوں نے اپنی اپنی بھلائی کی راہ بھی خود ہی ڈھونڈ نکالی ہے اور اِسی طرح اِنہیں یہ بات بھی سمجھ آجانی چاہئے کہ یہ اَب خطے کے دوایسے اچھے پڑوسی بھی بن جائیں جن کی اچھی خصوصیات اور صلاحتیں اِنہیں پہاڑوں کی چوٹیاں بنادیں اورپھر اِن کے اندرپہاڑوں کی چوٹیوں والی ایسی خصوصیات بھی پیداہوجائیں جو ایک دوسرے کو دیکھتی رہتی ہیں اور آسمان کو چھونے کی جستجواِنہیں اوجِ ثریاتک لے جاتی ہیں آج جب پاکستان اور بھارت نے ماضی کے تمام تلخ تجربات کے بعد اپنی مثبت اور تعمیری راہ خود تلاش کرلی ہے تو ایسے میں ہم اتناضرور کہنا چاہیں گے کہ اَب خطے کے یہ دونوں ایٹمی ممالک اپنے اندر پہاڑوں کی چوٹیوں والی ہی ایسی خصوصیات کے سہارے بلندیوں کو چھونے کا عزم کریں اور اِس بات کا بھی عہد کریں کہ اَب یہ اُن گڑھوں کی جانب کبھی نہیں دیکھیں گے جن میں گرکر یہ گڑھوں کی طرح ایک دوسرے کو دیکھ بھی نہیں سکے تھے۔
آج یہ بات یقیناجنوبی ایشیاکے دونوں ایٹمی ممالک پاکستان اور بھارت کے کڑوروں افراد کے لئے خوش آئندہے کہ پاکستان اور بھارت کا مشترکہ کمیشن بڑے عرصے کے انتظار کے بعد کئی خوشگوار اور تاریخی اقدامات کرنے کے ساتھ بحال ہوگیاہے اوراِس موقع پرپاکستان اور بھارت نے محبت کے نئے جذبوں کے ساتھ یہ عزم بھی کیا ہے کہ خطے کی یہ دونوں ایٹمی طاقتیں ماضی کے تمام تلخ اختلافات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ایک دوسرے کے قریب آنے کے لئے ایسے اقدامات کریں گے کہ دنیا کو بتادیں گے کہ ہمارا ماضی تلخ ضرور رہامگراِس سے ہم نے جو سبق سکھاوہ یہ ہے کہ ہم نے اگر اِسے نہ بھلایاتو ہم دونوں ممالک ایٹمی قوت ہوکر بھی اپنے عوام کے روشن مستقبل کے لئے ایسا کچھ کبھی نہیں کرسکیں گے جیساآج دنیا کی دوسری ایٹمی طاقتیں اپنے عوام کی بہتری کے لئے کررہی ہیں اِس حوالے سے ایک اور حوصلہ افزاء پیشرفت یہ ہوئی ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان نیا ویزامعاہدہ بھی طے پاگیاہے جس کے ذریعے خطے کے دونوں ایٹمی طاقت کے حامل ممالک پاکستان اور بھارت نے ایک دوسرے کے شہریوں کو ویزااجراء کی سہولتوں میں قابلِ تعرف اقدامات کرتے ہوئے نرمی کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے نئے ویزا معاہدے کے تحت تاجروں، فنکاروں اور سیاحوں کے لئے خصوصی ویزے جاری کئے جائیں گے جس کے تحت65سال سے زائد عمرکے شہریوں کو بارڈر پر ہی ویزاجاری کئے جائیں گے، بزرگ شہریوں کو ملٹی پل ویزاملے گا،تاجروں کو ایک سال کا ویزا10شہریوں کے لئے دیاجائے گا، معاہدے کے تحت ممبئی کراچی فیری اور دہلی اسلام آباد فضائی سروس شروع ہوگی اِس تاریخ ساز لمحات نے پاکستان اور بھارت نے یہ عہد بھی کیا ہے کہ آج جس طرح اپنے شہریوں کے لئے دونوں ممالک نے سرحد پار آنے جانے کے لئے نئے ویزامعاہدہ کے تحت سہولتیں دی ہیں تو اِس طرح کشمیر، سیاچن اور سرکریک سمیت اُن تمام تصفیہ طلب معاملات پر بھی ضرور بیک وقت پیش رفت کریں گے جن کی وجہ سے دونوں ممالک میں ہر وقت جنگی جنون سوار رہتاہے اور دونوں ہی ممالک ایک دوسرے پر بزور طاقت سبقت لے جانے کے لئے اپنے دفاعی بجٹ میں ہر سال اربوں کا اضافہ کرکے اپنے اپنے عوام کو اِن کے بنیادی حقوق سے محروم کررہے ہیں مگر اَب پاکستان اور بھارت کا مشترکہ کمیشن بحال ہوجانے کے بعد دونوں ممالک کے عوام میں یہ اُمیدضرور پیداہوجانی چاہئے کہ آج کے بعد ایسانہیں ہوگا جس کی وجہ سے دونوں ممالک کے عوام کو اِن کے بنیادی حقوق سے محروم رکھاگیااور غربت اور لاچارگی اِن دونوں ایٹمی ممالک کے عوام کے چہروں سے ٹپکتی ہے۔
اگرچہ یہاں پاک بھارت عوام اور دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ کے لئے اِنتہائی خوش آئندامرہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان وزرائے خارجہ سطح کے مذاکرات میں فریقین نے کھلے دل اور دماغ سے تمام مسائل پُرامن طریقے سے حل کے لئے اپنے تئیں جس طرح باہمی مفاد اور اعتماد پر تعلقات قائم کرنے کے لئے کام کرنے کا عزم کیا وہ خطے کے عوام کو ایک دوسرے سے قریب لانے اور آپسمیں اعتماد بحال کرنے میں بڑی حد تک معاون اور مددگار ہوں گے ہمیں اِس بات کی بھی اُمیدضرور رکھنی چاہئے کہ مستقبل قریب میں بھی دونوں ممالک کی حکومتیں خطے میں جاری کشیدگی کے خاتمے اور قیام امن اور دونوں ممالک کے عوام کو ایک دوسرے سے قریب تر لانے کے لئے بھی مزیدایسے اقدامات کرتی رہیں گے جس سے جنوبی ایشیاامن اور سکون کا ایک ایساگہوارہ بن جائے گا جس کی مثال آنے والی نسلیں صدیوں دیتی رہیں گے اور اِس کے ساتھ ساتھ ہمیں یہ بھی قوی اُمیدرکھنی چاہئے کہ وہ دن کوئی دور نہیں جب ایسے ہی پُرامن مذاکرا ت کے ذریعے یہ دونوں ممالک مسئلہ کشمیرسمیت تمام معاملات پر بیک وقت پیشرفت کریں گے یوں اِن کے اِس عمل سے مسئلہ کشمیر بھی حل ہوجائے گااور پھر وادی کشمیر میں بھی خوشیاں رقص کرنے لگیں گیں اور پھردنیا میں ایک ایسی مثال بھی قائم ہوجائے گی جِسے اِنسانیت ہمیشہ یادرکھے گی۔
آج پاک بھارت موجودہ حکومتوں نے خطے میں قیام امن اور ایک دوسرے کو جنگ اور اِس سے پیداہونے والے مسائل سے نجات دلانے کے لئے مذاکرات کے عمل کو بنیاد بناکر جس اچھے عمل کی شروعات کی ہے ہمیں ہردم یہ دعاکرتے رہناچاہئے کہ پاکستان اور بھارت کے حکمرانوں کو اللہ عقل دے اور دونوں ایٹمی ممالک کے حکمران اور عوام اچھائی کرنے کے لئے ہمیشہ کسی بہانے کی تلاش میں رہیں اور ایک دوسرے کے لئے اچھائی کرتے وقت اِس پر نظر رکھیں کے اِن کے ایک اچھے عمل سے اِن کا حال اور مستقبل بھی تابناک ہوجائے گااور اَب ہم آخر میں اپنے اِس جملے کے ساتھ ہی اجازت چاہیں گے کہ کیوں نہ اَب
گرادوتمام دیواریں اور ہٹادو سب رکاوٹیں اِس لئے کہ اِنسان دوستی کے چھوٹے چھوٹے کام زندگی کو خوشگوار بنادیتے ہیں اور جیسے جیسے ہمارے کئے ہوئے اِن چھوٹے چھوٹے کاموں کی تعدادبڑھتی جاتی ہے آدمی ، معاشرہ ، ملک وقوم اور خطہ ممتاز اور معز ہوجاتاہے توپھر کیوں نہ جلد مسئلہ کشمیر کا حل بھی نکالاجائے۔

یہ بھی پڑھیں  ڈسکہ: پولیس جرائم کو کنٹرول کرنے کے لئے کوشاں اورصحافی برادری کے تعاون کی ضرورت، شعیب چیمہ

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker