علاقائی

پنجاب میں کوئی قانون نہیں یہاں جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا قانون میں رائج ہے،عائشہ احد ملک

لاہور﴿نامہ نگار﴾میاں حمزہ شہباز شریف کی بیوی ہونے کی دعویٰ کرنے والی عائشہ احد ملک نے کہا ہے کہ صوبہ پنجاب میں کوئی قانون نہیں ہے یہاں صرف جنگل کا قانون چلتا ہے جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا قانون پنجاب میں رائج ہے، اس لئے پچھلے کئی ماہ سے پہلے مجھے تھانوں میں گھسیٹا گیا اب مجھے عدالتوں میں ناجائز گھسیٹا جا رہا ہے، میرا قصور صرف اتنا ہے کہ میں نے شریعت کے مطابق حمزہ شہباز سے نکاح کیا تھا یہ بات انہوں نے گزشتہ روز انسداد دہشت گردی کی کورٹ میں پیشی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی، عائشہ احد ملک کے ساتھ ان کے وکیل عامر مسعود رانا بھی موجود تھے، عائشہ نے بتایا کہ مجھے ایک نازک مزاج عورت کو35 سالہ نوجوان جو فلپائن کا رہائشی ہے اور وہ یہاں اپنی والدہ کے ساتھ مل کر ایک ٹرسٹ چلا رہا ہے ان کے اغوائ میں پھنسا کر مجھ پر جھوٹا مقدمہ بنایا گیا اور ایف آئی آر میں دہشت گردی کی دفعہ 365A لگائی گئی جبکہ اس کیس میں میری بیٹی کو بھی جان بوجھ کر پھنسایا گیا، عائشہ احد نے بتایا کہ پہلے مجھ پر تھانے میں ٹارچر کیا گیا، اب ہمیں عدالتوں میں ذہنی تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، یہ کیس دہشت گردی کا نہیں بنتا تھا مگر دہشت گردی کی دفعہ حمزہ شہباز کی ایمائ پر لگائی گئی میرا قصور اتنا تھا کہ میں نے حمزہ شہباز جیسے انسان سے نکاح کیا جب میں نے اپنا حق مانگا تو میرے ساتھ انتقام پر اتر آیا، انہوں نے کہا کہ میں شریف خاندان کے ہر بندے کے پاس گئی مجھے انصاف نہیں ملا، حالانکہ میرے نکاح کا میاں نواز شریف، بیگم کلثوم نواز ، مریم نواز سمیت سب کو پتہ تھا، مگر مجھے انصاف نہیں ملا، اب مجھے اپنے رب کے بعد عدلیہ اورمیڈیا سے امید ہے کہ وہ مجھے انصاف دلائیں گے۔

یہ بھی پڑھیں  اوکاڑا:ڈسٹرکٹ گورنمنٹ ضلع بھرکے صحافیوں کے ساتھ کھڑی ہے، ڈی سی او

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker