تازہ ترینکالممحمداعظم عظیم اعظم

کیاامریکا جیسے دہشت گرد کا قلع قمع ضروری ہے..؟

آج دنیا میں دہشت گردی کے حوالے سے اُمتَِ مُسلمہ تو بس یوں ہی فضو ل کی بدنام ہے ویسے تو اصل میں دنیا کے دہشت گردِ اعظم امریکا کے ہر دور میں آنے والے صدورہی رہے ہیں مگر بالخصوص موجودہ حالات میں تو یہ بات واضح ہوچکی ہے کہ آج کے ہر لحاظ سے سب سے بڑے دہشت گرد اِس کے صدر بارک اوباماسمیت سام بیسائل اور وہ پاپی پوپ ٹیری جونزہی ہیں جنہوں نے نائن الیون کے بعدایسے حالات پیداکردیئے ہیں کہ عیسائیت اور یہودیئیت اُمت مسلمہ کے خلاف ہوگئی ہے اور ماہِ رواں کی گیارہ تاریخ یعنی نائن الیون 2012کو جب امریکی اپنے یہاں پیش آنے والے واقعہ (نائن الیون 2000)کی گیارہویں یاد منارہے تھے اور اِس واقعہ میں واصل جہنم ہوجانے والے اپنے ہم وطنوں کی چیتا کے مقام پر موم بتیاں جلارہے تھے تو اِس موقع پر اسرائیلی یہودی اور سیاہ فارم امریکی سام بیسائل نے پاپی پوپ ٹیری جونز کی رہنمائی میں توہین رسالت پر مبنی متنازعہ فلم ’’ انونس آف مسلمز‘‘ ریلیز کرکے مسلمہ اُمہ کے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا سامان پیداکیااِس طرح شاید اِن دونوں شیطانوں نے یہ سمجھ لیا تھا اِن کے اِس فعلِ شنیع سے امریکیوں کو تسکین ہوگی اور ملتِ اسلامیہ کی زیراثرہوجائے گی یوں اِن کی طاقت کا ڈنکاچار سو بج اُٹھے گا اور یہ امریکیوں کے ہیروز قرار پائیں گے۔
مگر آج درحقیقت سب اِن کی سوچوں کے برعکس ہورہاہے.. جب آج ملت اسلامیہ کی طرح خود امریکا،برطانیہ اور دیگر یورپی ممالک میں بھی اِس گستاخانہ فلم کے خلاف جاری احتجاجوں اور مظاہروں شدت آتی جارہی ہے اور آج اِس سے انکار ممکن نہیں ہے کہ سام بیسائل اور پاپی پوپ ٹیری جونز کی متنازعہ فلم نے مسلمہ اُمہ میں امریکا کے خلاف نفرت کاایک ایسالاوا بھردیاہے کہ جس کے شعلے ایک ہفتہ گزرجانے کے بعد بھی ابھی تک بھڑک رہے ہیں اور اِن میں ہر لمحہ تیزی ہی آتی جارہی ہے یوں آج اُمتِ مسلمہ اِس گستاخانہ فلم سے اپنے جذبہ ایمانی کو پہنچنے والی ضرب سے مشتعل ہے اور اَب کا غصہ دیکھ کر یہ اندازہ لگانا کوئی مشکل نہیں ہے کہ یہ اُس تک حالتِ غیض و غضب میں رہے گی جب تک یہ اِ س فلم کے بنانے والوں کا قلع قمع نہیں کردیتی ہے۔
اگرچہ اِس میں کوئی شک نہیں ہے کہ آج دنیا بھر میں متنازعہ فلم کے ریلیز ہونے کے ساتھ ہی مسلمہ اُمہ کے ہاتھوں امریکی املاک اور سفارت خانوں اور اِس کے اسٹاف کو جتنا بھی نقصانات پہنچ رہاہے اِس کے ذمہ داربھی خود امریکا ، امریکی صدر، امریکی انتظامیہ، سام بیسائل اور پاپی پوپ ٹیری جونز ہی ہیں آج جو ایسی گستاخانہ فلم بناکر یہ اپنی ہی لگائی ہوئی آگ میں خود ہی جل رہے ہیں کیوں کہ ا صل میں چنگاری توخود امریکیوں کی ہی لگائی ہوئی ہے مسلم اُمہ تو بس اِس کوہوا دینے کا ایک ذریعہ ہی بن رہی ہے ایسے میں یہاں سوا ل یہ پیداہوتاہے کہ سام بیسائل اور پاپی پوپ ٹیری جونز نے جب اپنی یہ متنازعہ فلم بنانے کا ارادہ کیا توکیا عالم اسلام کو آگ بگولہ بنانے والے اِن دونوں دہشت گردوں کو اِس بات کا اندازہ نہیں تھا کہ اِن کی اِس مذہبی دہشت گردی کے کیا نتائج مرتب ہوں گے …؟ جب مسلمہ اُمہ کا ناقابل برداشت ردِ عمل سامنے آئے گا تو امریکا کا کیا بنے گا..؟اور جب اِن ناپاک عزائم کے متحمل شیطانوں (سام بیسائل اور پاپی پوپ ٹیری جونز) کی فلم منظرعام پر آئے گی تو کیا مسلم اُمہ امریکاکے خلاف جو اِس سے ہوسکے گا اپنا صائب ردِ عمل نہیں کرے گی…؟
اِس پر ہم یہ سمجھتے ہیں کہ سام بیسائل اور پاپی پوپ ٹیری جونز کی اِس ناپاک کارستانی کے پیچھے یقیناًامریکی صدر بارک اوبام اور امریکی انتظامیہ سمیت امریکی خفیہ اداروں کا بھی برابر کا حصہ ہے جس نے فلم بنانے والے دونوں مذہبی دہشت گردوں کی بھر پور حوصلہ افزائی کی اور اِنہیں اپنے ہر قسم کے تعاون کا وعدہ کرکے مسلمانوں کی مذہبی جذبات بھڑکانے والی گستاخانہ فلم کو منظرِ عام پر لانے میں مدد کی اَب اگراِن تمام باتوں کو جان لینے کے بعد ملتِ اسلامیہ کا کوئی سخت ردِ عمل سامنے آرہاہے تو اِس پر امریکی شیطانوں کو جامے سے باہر نہیں ہوناچاہئے بلکہ صبر اور شکرکا سہار الیتے ہوئے اپنے گاڈ سے اپنے ہی ہاتھوں لگائی گئی مذہبی دہشت گردی کی اِس آگ کو ٹھنڈاہونے کی دعا کرنے کے ساتھ عالمِ اسلام کے مذہبی جذبات کو پہنچنے والی ٹھیس پر معافی مانگنے اور آئندہ ایسی غلطی نہ دہرانے کی بھی تدبیر کرنی چاہئے اور اِسی کے ساتھ ہی آئندہ مذہب اسلام سمیت دیگر ادیان کی مقدس ہستیوں کی شان عظمت میں گستاخی نہ کرنے کا بھی خودکو پابندبناناچاہئے۔
آج اُمتِ مسلمہ مشتعل ضرور ہے مگر اِس کے ساتھ ہی یہ اپنے جذبانی ایمانی کے تحت جو کچھ بھی کررہی ہے یہ حق بجانب ہے اِس کے کسی بھی ایسے فعل پر انگلی اُٹھانے والے پہلے اپنے گربیانوں میں ضرور جھانک لیں کہ اُنہوں نے جوکچھ بھی کیا ہے کیا وہ ٹھیک ہے..؟آج اگرگستاخانہ فلم بنانے والے اپنی غلطی پر کسی قسم کی ندامت محسوس نہیں کررہے ہیں تو پھر ہم مسلمان اپنے کسی ایسے عمل پر کیسے ندامت محسوس کرسکتے ہیں جو اپنے پیارے محمدمصطفی ﷺ کی نشان میں گستاخی کرنے والے کو سبق سکھانے کے خاطر ہم کررہے ہیں…؟امریکاجواپنے نام نہاد سُپر طاقت کے غرور میں غرق ہوکر مست ہاتھی بناہواہے اور بالخصوص مسلم اُمہ پر اپنی حکمرانی قائم کرنے کے خواب دیکھ رہاہے اِسے یہ بات ذہن نشین رکھنی چاہئے کہ اِس کی معیشت کا سارادارومدار مسلم اُمہ کی دولت پر قائم ہے آج اگر اُمت مسلمہ اِس کے یہاں سے اپنی ساری دولت نکالے اور اِس سے اپنااقتصادی اور معاشی رابطہ ختم کرلے تو اِس کی ساری معیشت زمین بوس ہوجائے گی اور اِس کا ساراگھمنڈ خاک میں مل جائے گااگر امریکانے ملتِ اسلامیہ کی مقدس ہستیوں کی گستاخی کرنے والی اپنی روش نہ بدلی تو پھر مسلمہ اُمہ کواِس کا قلع قمع کرنے کے لئے اپنی اِس منصوبہ بندی پر ضرور عمل کرکے دِکھاناہوگااَب بہتری اِسی میں ہے کہ امریکااپنی حرکتوں سے باز آجائے اور آئندہقوام متحدہ اور او آئی سی کے باہمی صلہ و مشورے سے مسلم اُمہ کی مقدس ہستیو ں سے متعلق تشکیل پانے والے بین الاقوامی قانون کی پاسداری اور پابندی کا خود کو ذمہ دار ٹھیرائے تو ٹھیک ورنہ اپنے انجام کے لئے تیار ہوجائے۔

یہ بھی پڑھیں  خدا کی قسم ہماری ’’را‘‘ سے کوئی دوستی نہیں،الطاف حسین

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker