تازہ ترینکالممحمد فرقان

امریکہ کی منصوبہ بند دہشت گردی

افغانستان میں اب امریکی فوج کو شکست ہو رہی ہے اور امریکہ اِس شکست کو ماننے کے لیے تیار ہی نہیں ہے۔جس کی وجہ سے اب مسلمانوں کے خلاف امریکہ کی طرف سے نئے نئے ہتھکنڈے استعمال کیے جا رہے ہیں۔امریکی شہری ٹیری جونز نے ہمارے پیارے نبیﷺ کی شان میں گستاخی کرتے ہوئے INNOCENCE OF MUSLIMSکے نام سے ایک فلم بنائی ہے جس کے ردِعمل میں پوری دنیا میں بسنے والے مسلمان متحد ہو کر امریکہ کے خلاف اُٹھ کھڑے ہوئے ہیں ۔پاکستان میں بھی اسی طرح 21ستمبر کو سرکاری سطح پر یوم عشقِ رسول منایا گیا اور پاکستانی عوام سڑکوں پر نکل آئی اور شدید احتجاج کرتے ہوئے امریکہ کے خلاف اپنی نفرت کا اظہار کیا،کہیں امریکہ کے پرچم کو نذر آتش کیا گیا تو کہیں امریکی صدر باراک اوباماکا پتلا جلایا گیا اور امریکہ کے خلاف شدید نعرے بازی کی گئی۔
قارئین :دنیا کا سپر پاورامریکہ جو کہ انسانی حقوق کے متعلق بڑے بڑے ادارے چلا رہا ہے تو کیا اُسے یہ علم نہیں کہ اُس کی طرف سے کیے جانے والے ڈرون حملوں میں دہشت گردوں کے بجائے بے گناہ قبائلی پاکستانیوں کو قتل کر رہے ہیں۔یہاں انہیں انسانی حقوق کے قوانین یاد نہیں آتے ؟مسلمانوں کو ذلیل کرنے کے لیے سب کچھ جان بوجھ کر کیا جا رہا ہے ۔قبائلی علاقوں میں بے گناہوں کو قتل کر کے اُن پہ ظلم کیا جا رہا ہے اور انہی معصوم لوگوں کی نسلیں آئندہ دہشت گرد بنیں گی اور امریکہ سے بدلہ لیں گی تو ہم کہہ سکتے ہیں کہ ڈرون طیاروں سے دہشت گرد ختم نہیں کیے جارہے بلکہ دہشت گرد پیدا کیے جا رہے ہیں۔
انسانی حقوق پر زور دینے والا خود امریکہ دہشت گرد ہے جس نے عراق میں دہشت گردی کے نام پر بے گناہ لوگوں کا خون بہایا اور اس میں دوسرے ممالک کے سربراہان نے بھی امریکہ کا ساتھ دیا ۔امریکہ نے سب سے زیادہ ظلم تو جاپان پر کیا تھاجس کے دو شہروں ہیروشیما اور ناگا ساقی پر ایٹمی بم برسا کر نیست ونابود کر دیا اور اب اسلامی ممالک کے تعاقب میں ہے۔امریکہ مسلمانوں کو ہمیشہ غلام بنا کر رکھنا چاہتا ہے مگر اسے سخت ناکامی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے کیوں کہ مسلمان اتنا جلدی انگریزوں کے اب غلام بننے والے نہیں ہیں۔
جب امریکی حکومت سے گستاخانہ فلم کے متعلق پوچھا گیا کہ آپ نے اس فلم کوبین کیوں نہیں کیا تو امریکی حکومت کا کہنا تھا کہ یہ محظ ایک امریکی شہری کا فعل ہے اس میں حکومت ملوث نہیں ہے۔اب اس حکومت سے سوال کرے کہ امریکی سنسر بورڈ کو کیا اس فلم کے متعلق علم نہیں تھا کہ اس میں کیا ہے؟بات سیدھی سی ہے امریکی حکومت بھی ہاتھ دھو کر مسلمانوں کے پے در پے ہے اسی لیے اس نے گستاخانہ فلم کو ریلیز ہونے سے نہیں روکا ۔اب مسلم ممالک میں یوٹیوب کے بند ہونے سے گوگل گروپ کو تکلیف ہو رہی ہے کہ اُس کے یوزرکم ہو گہے ہیں لیکن اگر یوٹیوب گستاخانہ فلم ہٹا دیتے تو انہیں اِس مشکلات کا سامنا نہ کرنا پرتا۔
امریکہ اصل میں تمام مسلم ممالک پر اپنا رعب جمانا چاہتا ہے جس کے لیے فلاحی تنظیمیں مختلف ممالک میں بھجوا کر اپنے لوگ دوسرے ممالک میں داخل کر رہا ہے،جو کبھی بلیک واٹر کے روپ میں آتے ہیں تو کبھی کسی اور روپ میں جن کا اصل مقصد لوگوں کو اغوا و قتل کرنا ہے جس کی مثال ریمنڈ ڈیوس کی صورت میں آپ کے سامنے ہے۔
حالیہ دور میں امریکہ کو منہ کی کھانی پڑ رہی ہے جس کی بڑی وجہ افغانستان میں امریکی فوج کو شکت اور ایران کا امریکہ کے سامنے سینہ تان کے جواب دینے کی صورت میں ہے۔پاکستانی حکومت بھی اب امریکہ سے آنکھوں میں آنکھیں ڈال کربات کر رہی ہے ۔اس کی ایک بڑی وجہ امریکی فوج کا سلالہ چیک پوسٹ پر حملہ کر کے ہمارے 26جوانوں کو شہید کرنا ہے اور دوسری بڑی وجہ حالیہ دنوں میں امریکی شہری کی طرف سے بنائی جانے والی وہ فلم ہے جس میں ہمارے پیارے نبی حضرت محمد ﷺ کی شان میں گستاخی کی گئی۔ایران کی حکومت بھی اب امریکہ سے ڈرنے والی نہیں ہے جبکہ امریکہ خود چین سے گھبرا رہا ہے۔
مگر بد قسمتی کی بات یہ ہے اتنا کچھ ہونے کے باوجود اگر تمام پاکستانیوں کے امریکہ کے ویزے فری میں جاری کر دیے جائیں تو 95فیصد لوگ جانے کے لیے تیار ہو جائیں گے اور اگر فلائٹ میں بیٹھنے کی جگہ کم پڑ گئی تو کہیں گے کہ ہم جہاز میں کھڑے ہو کر 15گھنٹے کا سفر برداشت کر لیں گے مگر امریکہ ضرور جانا ہے اور 5فیصد وہ لوگ ہیں جو کسی قیمت پربھی امریکہ جانے کا نہیں سوچیں گے کیوں کہ وہ امریکہ کو انتہائی کرپٹ ترین ملک سمجھتے ہیں جن میں شائد میرا بھی شمار ہوکیوں کہ مجھ میں امریکا جانے کی خواہش نہیں ہے۔ہمیں سوچنا چاہیے کہ جس ملک کی پالیسیاں ہی مسلمانوں کے خلاف ہوں تو بھلا ہم کیوں اُس ملک جائیں؟
دنیا کی بڑی بڑی تنظیمیں امریکہ نے بنائی ہیں مگر کوئی ایسی تنظیم یا قانون کیوں نہیں بنایاجو کہ مذاہب کا تقدس قائم رکھنے میں اہم کردار ادا کرے۔پاکستان میں مسلمانوں کی اکثریت کے علاوہ بے شمار اقلیتیں آباد ہیں لیکن یہاں سب اپنے اپنے عقیدے اور مذہب کے مطابق آزاد زندگی بسر کر رہے ہیں تو امریکہ کو کوئی حق حاصل نہیں ہے کہ وہ ہمارے پیارے نبی ﷺکی شان میں گستاخی کر کے اربوں مسلمانوں کی دل آزاری کرے۔

یہ بھی پڑھیں  بلدیاتی انتخابات میں مبینہ دھاندلی کے خلاف کے پی کے میں احتجاجی مظاہرے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker