ایڈیٹر کے قلم سےتازہ ترینکالم

بچاری عوام اور حکمران

23مارچ 1940 کو برصغیر کے مسلمانوں نے ایک قرار داد منظور کی جس کو قرار داد پاکستان کا نام دیا گیااور اس کی یاد میں ایک تاریخی مینار بھی تعمیر کیا گیا جو ہماری آنے والی نسلوں کو بھی یاد کرائے گا کہ اس جگہ وہ تاریخی میٹنگ ہوئی جس کی بدولت ہم آج آزاد حیثیت سے زندگی گزار رہے ہیں اس جگہ پر جو مینارتعمیرکیا گیا ہے اس کو مینار پاکستان کے نام سے جانا جاتا ہے ۔پاکستان کا نام چوہدری رحمت علی نے تجویز کیاتھا اور پھر 14اگست 1947ئ قائداعظم محمد علی جناح کی قیادت میں ایک آزاد ملک حاصل کرلیا ۔ قائداعظم اس کے پہلے گورنر جنرل بنے۔ آپ نے ہمیشہ پاکستان کی خودمختیاری اور بقائ کی جنگ لڑی۔ قائداعظم نے کبھی پاکستان کی غیر ت کا سودا نہیں کیا اورنہ ہی اس کا برا سوچا۔ قائداعظم نے اپنی تمام عمر ہندئووں سے پاکستان کی خوشحالی اور امن کی لڑائی لڑی لیکن بدقسمتی سے قائداعظم کی وفات کے بعد پاکستان کو آج تک کوئی ایسا لیڈر نہ مل سکا جو اس ملک کو سنبھال سکتا۔1948ئ سے تاحال جو بھی حکمران آیا اس نے پاکستان کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا۔ اس نے صرف اپنی جائیداد اور بنک بیلنس بنایا۔تاریخ گواہ ہے آج تک کوئی حکمران ایسا نہیں جس نے اپنے ملک اور اپنی عوام کا ساتھ دیا ہووہ جب بھی حکومت میں آئے وہ ووٹ تو پاکستان کی عوام سے لیتے ہیں لیکن خیال اپنے آقائوں کا کرتے ہیں کیونکہ پاکستان کی عوام تو سیدھی سادھی اور بھولی بھالی ہے۔ وہ ان کی چکنی چپڑی باتوں میں آجاتی ہے اور ان کو ووٹ دیکر اپنا خیر خواہ سمجھ بیٹھتی ہے لیکن یہ اپنے مفاد کے لیے کسی نہ کسی دوسرے ملک کی غلامی کرتے ہیں اور پاکستان کو ڈش میں رکھ کر دے دیتے ہیں۔لیاقت علی خان ملک کے لیے کچھ اچھے لیڈر ثابت ہونے لگے تو ان کو ایک بھرے جلسے میں گولیوں سے چھلنی کرکے شہید کردیا۔ اس کے بعد ملک میں جو تھوڑا بہت ترقی کا کام ہوا تو ذوالفقار علی بھٹو کا دور تھا ۔ بھٹونے جو سب سے اچھا کام کیا وہ ملک کا آئین تھا جو اس وقت سے ابھی تک چلا آرہا ہے مگر اس کی اصل شکل بگاڑدی گئی ہے۔ شاید یہ لیڈر ملک کے لیے اچھا ثابت ہوتا مگر اس کو بھی قربانی کا بکرا بنا کر پھانسی پر لٹکا دیا۔ اس کے بعد ضیا الحق کا دور شروع ہوا اس نے بھی اسلام کے نام بڑی دیر حکومت کی اور اس نے اپنے دور حکومت میں پہلی بار جنرل اسمبلی کے اجلاس میں تلاوت قرآن پاک کرائی۔ مگر حقیقت میںاس کے دور میں کلاشنکوف کلچر شروع ہواور وہ بھی ایک طیارے کے حادثے میں شہیدکردیے گئے۔ اس کے بعد تو ملک کا اللہ ہی حافظ ۔ جو حکمران آیا وہ پاکستان کا حکمران نہیں تھا بلکہ وہ کسی نہ کسی ملک کا پٹھو تھا۔ پھر ایک لمبے عرصہ کے بعد جمہوری دورکا آغاز ہوا اور اس وقت پیپلز پارٹی کی حکومت کی صورت میں بے نظیر بھٹو کو حکمرانی ملی اور وہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی خاتون وزیراعظم بنیں۔ انہوں نے ملک میں کوئی ایسا کارنامہ انجام نہ دیا جس کو میرا بیان کرنا ضروری ہو۔ ہاں البتہ اتنا ضرور بتاتا چلوں کہ ان کی حکومت کے بعد یہ ایشو ضرور سامنے آیا کہ انہوں نے راجیو گاندھی کو سکھوں کی فہرست دی تھی جو خالصتان کے لیے لڑ رہے تھے اور مسلمانوں کی مد د بھی کررہے تھے۔اس کے بعد میاں نواز شریف کو ملک کی خدمت کرنے کا موقع ملا اور ان کے لیے مشہور تھا کہ یہ ضیاالحق کی باقیات ہیں۔ یہ حکومت بھی زیادہ عرصہ نہ چل سکی اور پھر بے نظیر بھٹو کو ملک کی قیادت دوبارہ مل گئی اور ایک بارپھراسمبلیوں میں اور اسمبلی کے باہر بندر بانٹ شروع ہوگئی ۔ عوام ایک بار پھر پیچھے اور جیبیں بھرنے والے بے نظیر اینڈ کمپنی سے آگے۔اس حکومت کو بھی پوراٹائم نہیں کرنے دیا گیا۔ان کی حکومت کو بھی ان کے بنائے ہوئے صدر فاروق لغاری نے کرپشن کے الزام میں فارغ کردیا۔پھر نوازشریف نے دوبارہ دوتہائی اکثریت کے ساتھ ملک کی بھاگ دوڑ سنبھالی ۔ نواز شریف نے اپنے اس دور میں پاکستان کے مختلف علاقوں میںسڑکوں کا جال بچھا دیاجس میں موٹروے سرفہرست ہے اورپھر پاکستان کو پہلی اسلامی اور دنیا کی ساتویں ایٹمی طاقت بنایا ۔ غیر اسلامی طاقتوں کو یہ گوارانہ ہواکہ مسلمان حکمران اپنے ملک کو اتنا طاقت وربنادیںیہی وجہ تھی کہ اسلام دشمن طاقتوں نے سازش کے تحت اپنے چہیتے ٹولوں کے ذریعے جمہوری حکومت کو ختم کرا دیا اور اپنے ایک اور پٹھوپرویز مشرف کی شکل میں پاکستان پر مسلط کردیا۔ اس نے اور اس کے ساتھیوں نے اپنے دور میں پاکستان کے عوام پر بڑے ظلم ڈھائے۔ جس میں بلوچستان میں نواب اکبر بگٹی کا قتل ، لال مسجدکے واقعات بہت اہم ہیں۔اسی مشرف نے پاکستان میں سٹیجوںپر کھڑے ہوکر مکے دکھائے۔مگر آج اس کے وہ ساتھی اس کوچھوڑ کرموجودہ حکومت کے ساتھ شامل ہوکر پھر عیاشیاں کررہے ہیں۔آج جب اکبر بگٹی کے قتل میںعدالت عالیہ نے مشرف اور اسکے وزیراعظم شوکت عزیز کو انٹرپول کے ذریعے گرفتار کرنے کا حکم دیا تو شوکت عزیز جو کبھی مشرف کا چہیتا وزیراعظم تھا تو اس نے یہ بیان دیاکہ یہ میرا نہیںسب کچھ مشرف کا کیا دھرا ہے۔مشرف کے تقریباً دس سال حکومت کرنے کے بعد دوبارہ جمہوری دورکاآغاز ہوا تو پیپلزپارٹی کو حکومت کرنے کا موقع ملا۔ اس وقت تو یہ حکمرانی کے لیے مسلم لیگ ن ،اے این پی، ایم کیو ایم، جے یو آئی ف اور دوسری چھوٹی پارٹیاں اس حکومت میں شامل ہوئیں۔لیکن آہستہ آہستہ اپنے مفاد کی خاطرحکومت سے جدا ہوتے گئے اور کبھی اکٹھے ہوتے رہے۔ آج جب آصف علی زرداری ﴿صدرپاکستان﴾ کو حکومت پر

یہ بھی پڑھیں  سرائے مغل: علاقے کےماہر تعلیم اورمایہ نازاستاد احسان الہی رڈی ریٹائرڈ

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker