شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / پاکستان / بابراعوان سمیت متعدد وزراء کو توہین عدالت کا نوٹس جاری

بابراعوان سمیت متعدد وزراء کو توہین عدالت کا نوٹس جاری

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) سپریم کورٹ آف پاکستان نے سابق وفاقی وزیر قانون بابر اعوان سمیت وزیر اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان، قمرزمان کائرہ، خورشید شاہ اور فاروق اعوان کو تضحیک آمیز پریس کانفرنس پر توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا ہے۔

سپریم کورٹ کے دورکنی بینچ نے بابر اعوان کو کی جانب سے یکم دسمبر 2011ء کو کی جانے والی تضحیک آمیز پریس کانفرنس کیس کی سماعت کی۔

یہ بھی پڑھیں  بلدیاتی انتخابات 2015: پنجاب میں مسلم لیگ ن، سندھ میں پیپلز پارٹی آگے

سماعت کے دوران جسٹس اطہر سعید نے کہا کہ عدلیہ کی آزادی اور غیر جانبداری کو چلینج کرنا عدالت کی تضحیک ہے، پریس کانفرنس کے دوران ان کی باتوں سے توہین دالت کے کئی پہلو نکلتےہیں۔

یادرہے یکم دسمبر کو کی جانے والی پریس کانفرنس کے دوران بابر اعوان نے کہا تھا کہ سپریم کورٹ کی جانب سے میمو اسکینڈ ل پر تشکیل دیئے جانے والے کمیشن سے متعلق بات کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ وہ کمیشن غیر آئینی ہے کیوں کہ کمیشن کی تشکیل دینے کا اختیار صرف انتظامیہ کے پاس ہے۔ آئن معاہدہ عمرانی کی آخری دستاویز ہے اسے پس پشت ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے لیکن اسے کامیاب نہیں دیں گے۔

یہ بھی پڑھیں  اسلام آباد میں طاہرالقادری کےلانگ مارچ پرخود کش حملےکا خطرہ ہے,رحمان ملک

سپریم کورٹ نے تضحیک آمیز پریس کانفرنس کیس کی سماعت 13 جنوری تک ملتوی کردی ہے۔

یہ بھی پڑھیں  سانحہ ماڈل ٹاؤن کی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے وزیراعظم اور وزیراعلیٰ پنجاب کو کلین چٹ دیدی

قانون پر گہری نظر رکھنے والے تجزیہ نگاروں کا کہنا ہےکہ توہین دالت کے مرتکب افراد اگر کسی سرکاری عہدے پر فائز ہوں تو ان کا وہ عہدہ ختم ہوجاتا ہے اور وہ پبلک آفس کےلئے نااہل ہوجاتےہیں۔