تازہ ترینعلاقائی

بدین:پولیس کاوڈیرے کے بیٹے کو بچانے اور باورچی کو جرم قبول کرنے کیلئے تشدد

بدین﴿نامہ نگار﴾ بدین پولیس نے ایک بااثر وڈیرے کے بیٹے کو بچانے کے لئے وڈیرے کے باورچی کو گرفتار کر کے وڈیرے کے بیٹے کا کردہ جرم اپنے سر لینے کے لئے سخت تشدد کر کے اسے غائب کر دیا۔15 روز پہلے بدین شہر کے تاجروں کو نامعلوم بھتہ خوروں کی جانب سے ڈیڑھ کروڑ روپے بھتہ تین دن کے اندر فراہم کرنے کی پرچیاں ملی تھی ، بھتہ نہ دینے کی صورت میں ان کو اغوا کر کے قتل کرنے کی دہمکیاں بھی لکھی گئی تھی،تین دن گزرنے کے بعد بھتہ خوروں کی جانب سے تاجروں کو بھتے کی رقم دینے کے لئے مختلف موبائیل نمبروں سے فون آنے لگے ،بدین کی تاجر برادری نے وہ بھتے کی پرچیاں اور موبائیل نمبر لیکر ایس ایس پی بدین فدا حسین مستوئی کے پاس پہنچ گئے،جنہوں نے تاجروں کی مدعیت میں نامعلوم بھتہ خوروں کے خلاف بدین تھانے پر مقدمہ درج کرنے کا حکم جاری کر کے ملزمان کو فوری طور گرفتار کرنے کا بھی حکم دیا،تاجروں کی جانب سے بدین پولیس کو وہ موبائیل فون نمبرز بھی دیئے گئے جن نمبروں سے بھتہ خور ان کو فون کر تے تھے، بدین پولیس نے ان موبائیل فون نمبرز کو ٹریس کر کے بھتہ خور گروہ کہ سرغنہ حاکم علی چانڈیو تک پہنچ گئی۔
حاکم علی چانڈیو بدین کے بااثر وڈیرے کا بیٹا ہے اور بدین تھانے کا ھیڈ محرر گل حسن لغاری اس وڈیرے کا انتہائی قریبی دوست ہے ،اس نے اپنے وڈیرے دوست کے بیٹے کو بچانے کے لئے وڈیرے کے باورچی 18 سالہ نوجوان محمد عثمان ملاح جو کہ ایک ٹانگ سے لنگڑا ہے ،اور ایک ہاتھ کی تین انگلیاں نہیں ہیں،کو گرفتار کر کے لے گئے ،اور وہ موبائیل سیٹ جو کہ وڈیرے کے بیٹے کا ہے ،اس باورچی کا ظاہر کر کے عثمان پر بے انتہا تشدد کر کے وڈیرے کے بیٹے کا بھتہ خوری کا کردہ جرم اپنے سر لینے کے بیان پر دستخط لے لئے،بااثر وڈیرے کے بیٹے کو گرفتار نہ کرنے اور اسے بچانے کے عیوض میں اس نے اپنے باقی ساتھیوں کہ نام بھی پولیس کو دے دیئے،ان میں ایک مجرم معشوق ھنگورجوکو بدین پولیس نے گرفتار کر کے سارا سچ اگلوا لیا،،اور معشوق ھنگورجو نے وڈیرے کے بیٹے حاکم علی چانڈیو کو اپنا سرغنہ ظاہر کیا بلکہ اس نے یہ بھی بتایا کہ تاجروں کو پرچیاں اور خط وڈیرے کا بیٹا خود اپنے ہا تھ سے لکھتا تھا،اور مختلف لوگوں کہ ہاتھوں تاجروں کو روانہ کرتا تھا،معشوق ھنگورجو کے بیان کے مطابق باورچی عثمان ملاح ان کے ساتھ شامل نہیں ہے،اس کے باوجود بدین پولیس نے عثمان ملاح کو غائب کر رکھا ہے،
دوسری طرف بااثر وڈیرے کے ملزم بیٹے حاکم علی چانڈیو کو ہر صورت میں بچانے کے لئے بدین پولیس کے اعلیٰ اہلکار بدین ضلع سے منتخب با اثر رکن صوبائی اسمبلی بدین کہ تاجروں کو تحفظ دینے ، بھتہ خوروں کے خلاف کاروائی کرنے کے بجائے ان پر دبائو ڈال رہے ہیںکہ حاکم علی چانڈیو بچہ ہے اس نے مذاق میں یہ کام کیا ہے، آپ کیس واپس لیں جس کی زندہ مثال یہ ہے کہ 15 دن گزر جانے کے باوجود بدین پولیس بھتہ خوروں کے خلاف درج کئے گئے مقدمے کی تصدیق کرنے سے انکار کر رہی ہے ملزمان کی گرفتاری اور تمام شواہد ملنے کے باوجود ملزمان کے نام ایف آئی آر میں درج نہیں کئے گئے ہیں، اور نہ ہی ملزمان کی گرفتاری کی تصدیق کی جا رہی ہے،
وڈیرے کے بیٹے کے عوض گرفتار کیئے گئے معذور باورچی عثمان ملاح کی والدہ مسمات بھاگی نے پریس کلب بدین میں صحافیوں کہ سامنے روتے ہوئے فریاد کی کہ ان کا بیٹا عثمان بے گناہ وڈیرے کے بیٹے کے عوض گرفتار کیا گیا ہے،15 دنوں سے میرا بیٹا غائب ہے میں اس سے ملنے کے لئے بدین تھانے پر گئی تو ایس ایچ او عبدالرحیم خاصخیلی اور بڑے منشی گل حسن لغاری نے مجھے گالیاں دے کر دھکے مار کر تھانے سے نکال دیا ہے، مسمات بھاگی کا کہنا ہے کہ میرے بیٹے کی ایک ٹانگ پہلے سے ہی ٹوٹی ہوئی ہے اور اس کا ایک ہاتھ بھی معذور ہے،مسمات بھاگی نے بتایا کہ میرا بیٹا میرا واحد سہارا ہے جس دن سے پولیس نے اس کو پکڑا ہے میں بھیک مانگنے پر مجبور ہو گئی ہوں ، اس نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ میرے بیٹے عثمان نے زندگی میں کوئی جرم نہیں کیا اس کے باپ کے مرنے کے بعد وہ محنت مزدوری کرکے ہمارا پیٹ پالتا ہے ، اور اس کی ٹانگ خراب ہو جانے کے بعد وہ بے روزگار تھا،وڈیرے شیر چانڈیو نے مجھے کہا کہ عثمان کو میرے پاس چھوڑ دو مجھے باورچی کی ضرورت ہے ، ایک ماہ ہوا ہے میرے بیٹے کو وڈیرے کہ پاس نوکری کرتے ہوئے،کہ اس کو پولیس کے حوالے کردیا گیاہے۔
دریں اثنا ئ اسی سلسلے میں ایس ایس پی بدین سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہاکہ وہ عنقریب پریس کانفرنس کر کے تفصیل بتائینگے، دوسری طرف بھتہ خوری اور تاجروں کو پرچیاں لکھنے میں ملوث ملزم حاکم علی چانڈیو کو بچانے کے لئے پیپلز یوتھ ضلع بدین کا صدر واحد بخش چانڈیو نے اپنا سیاسی اثر رسوخ استعمال کرنے کے ساتھ وڈیرے شیر چانڈیو سمیت برادری کے لوگوں کا وفد لیکر تاجر سجاد علی خواجہ اور زاہد حسین خواجہ کے پاس پہنچ گئے ، لیکن انہوں نے مقدمے سے دستبردار ہونے سے انکار کر دیا۔۔

یہ بھی پڑھیں  زمبابوے کی ٹیم کے کھلاڑیوں کو روایتی لاہوری ناشتہ بھی پیش کیا گیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker