تازہ ترینعلاقائی

بہاول نگر: ڈسٹرکٹ اکاؤٹنس آفس بہاول نگر میں کروڑوں کے گھپلے

بہاول نگر(نامہ نگار) ڈسٹرکٹ اکاؤٹنس آفس بہاول نگر میں کروڑوں کے گھپلے۔ اس لوٹ مار میں اکاؤنٹس عملہ کیساتھ ساتھ ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفیسر بھی ملوث۔ کسی بھی محکمہ کے ملازمین کا کام بغیر رشوت نہیں کیا جاتا۔ بعض معاملات کی ڈی سی کے پاس انکوائریاں چلنے کے باوجود معاملات جوں کے توں۔ بقایا جات کے بلوں پر 10سے 15فیصد رشوت لینا عام معمول بن چکا ہے۔ ان خیالات کا اظہار پروفیسر حمید اللہ امیر ضلع جماعت اسلامی بہاول نگر نے ضلعی دفتر میں صحافیوں سے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ بہاول نگر اکاؤنٹس آفیس کرپشن کا گڑھ بن چکا ہے۔ جہاں زندگی کے ہر شعبے سے تعلق رکھنے والے افراد جن میں اساتذہ، دیگر محکموں کے سرکاری ملازمین اور ٹھیکیداران کا واسطہ پڑتا ہے۔ کسی بھی سائل کا کام بغیر رشوت کے نہیں کیا جاتا۔ سائلین لاچارگی کی تصویر بنے ہوئے ہیں اگر کبھی کوئی واویلا کیا بھی جائے تو بے سود ہوتا ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ اکاؤنٹس آفس کے عملہ نے مختلف محکموں کے بدعنوان اہلکاروں کے ساتھ مل کر بوگس تقرریاں کرکے حکومتی خزانہ کو کروڑوں کا ٹیکہ لگایا ہے۔ فورٹ عباس میں بوگس تقرریاں جن میں محمد یاسین C-IV جس کا پرسنل نمبر31176582 ہے اور اس طرح انیلہ لطیف E.S.E ، مقبولاں بی بی E.S.E ، فرزانہ کوثر E.S.E اور مقدس ایوب E.S.E ۔ یہ سرے سے سرکاری ملازم ہی نہیں ہیں۔ ان کے پرسنل نمبر بھی الاٹ ہیں اور انہیں تنخواہیں دی جارہی ہیں۔ آن لائن بھی اور D.D.E.O کے ذریعہ بھی اور چیک کے ذریعہ Payment کی جارہی ہے۔ امیر ضلع نے مزید بتایا کہ ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کا اس سلسلہ میں ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر زنانہ کو جاری کردہ ایک خط اس کرپشن کا واضح ثبوت ہے۔ جس نے اس جعلسازی کا بھانڈا پھوڑا۔ ان پانچ افراد کو اب تک 51,01,959/- روپے کی پے منٹ کی جاچکی ہے۔ پروفیسر حمید اللہ خان نے اور کیسز کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ ایک کیس شمائلہ افضل کا ہے۔ اس کی پوسٹنگ بحیثیت E.S.E، 303/HP کی دکھائی گی ہے۔ یہ ساری کی ساری جعلی کارروائی ۔ان کو اس وقت تک 6,40,000/- روپے کی پے منٹ کی گئی ہے۔ اور اسی طرح ایک کیس شازیہ پروین کا ہے۔ اسے بھی 9,60,000/- کی ادائیگی کی گئی۔ جب اس کا کیس منظر عام پر آیاتو وہ منظر سے غائب ہوگئی۔ انہوں نے پریس کانفرنس میں صحافیوں کو بتایا کہ ایک دلچسپ کیس ایک میاں بیوی کا ہے۔ خاوند کا نام منظور احمد اور بیوی کا نام سمیرا یاسمین ہے۔ ان کا سرے سے کوئی وجود نہیں۔ ان کو مختلف اوقات میں مجموعی طور پر ایک کروڑ کی Payment کی گئی۔ بعد ازاں انہوں نے ایک اور سیکنڈل سے پردہ اٹھاتے ہوئے بتایا کہ ظفر اقبال S.S.T ایلیمنٹری سکول 105/F کا ہے۔ اس کی ماہانہ تنخواہ دسمبر 2016ء میں 9,44,094/- روپے ٹرانسفر کی گئی ہے۔ اس سلسلہ میں D.D.E.O تحصیل چشتیاں کا لیٹر مورخہ 14-01-17 کا واضح ثبوت ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام سکینڈلز کے ثبوت ہمارے پاس موجود ہیں۔ یہ تمام حقائق مبنی بر حقیقت ہیں۔

یہ بھی پڑھیں  بہاولنگر:کروڈوں رپے کی لاگت سے بنائی جانے والی ماڈل غلہ منڈی اثار قدیمہ کے کھنڈرات میں تبدیل ہوگئی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker