شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / پاکستان / بلاول کی قیادت میں پیپلزپارٹی کا کاروان بھٹو لاڑکانہ کی جانب رواں دواں

بلاول کی قیادت میں پیپلزپارٹی کا کاروان بھٹو لاڑکانہ کی جانب رواں دواں

کرا چی(پاک نیوز)حکومت کو ٹف ٹائم دینے کے پہلے مرحلے میں بلاول بھٹو کی زیر قیادت ٹرین مارچ کراچی سے لاڑکانہ کے لئے روانہ ہوگیا ہے،جسے کاروان بھٹو کا نام دیا گیا ہے۔تفصیلات کے مطابق ٹرین مارچ کی قیادت چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کررہے ہیں، ٹریم مارچ میں صوبائی قیادت سمیت بڑی تعداد میں کارکنان شرکت کررہے ہیں ٹرین مارچ کے آغاز سے قبل بکروں کاصدقہ دیا گیا،ٹرین مارچ کے آغاز سے قبل کینٹ اسٹیشن پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر بلدیات سندھ سعید غنی کا کہنا تھا کہ ٹرین مارچ حکومت کے خرچے پر نہیں اپنے خرچے پر کر رہے ہیں،پیسے دے کر ٹرین بک کرائی ہے، اگر حکومت ٹرین مارچ میں مداخلت کرے گی تو دیکھیں گے۔اس موقع پر صوبائی وزیر حسین شاہ نے کہا کہ بلاول نے لاڑکانہ جانا تھا،مگر موہنجو داڑو اور سکھر ائیر پورٹ بند ہونے کی وجہ سے بلاول نے ٹرین کا انتخاب کیا،بلاول کے فیصلے پر کارکنان نے بھی ساتھ جانے کیلئے اصرار کیا، جس پریہ کاررواں ٹرین مارچ میں تبدیل ہوگیا۔ناصر حسین شاہ کا کہنا تھا کہ ٹرین مارچ چار اپریل کے جلسے کی تیاریاں ہیں،یہ ٹرین مارچ پنڈی تک جاسکتا ہے،ٹرین مارچ پنڈی تک گیا تو حکومت نہیں رہے گی کیونکہ موجودہ حکومت نا اہل ہے، جو روزگار دینے کے بجائے چھین رہی ہے۔اس موقع پر ناصر حسین شاہ نے واضح کیا کہ ہم نہیں چاہتے کہ حکومت اپنی مدت پوری نا کرے، مگر حکومت کو اپنا قبلہ درست کرنا ہوگا۔ٹرین مارچ کے روٹ کا شیڈول کے مطابق بلاول بھٹو کینٹ اسٹیشن کراچی، لانڈھی ، جنگ شاہی، کوٹڑی اور حیدرآباد اسٹیشنز پر خطاب کریں گے۔اس کے علاوہ بلاول بھٹو اڈیرو لعل، ٹنڈو آدم، شہداد پور، اور نواب شاہ ریلوے اسٹیشن پر بھی خطاب کریں گے۔بلاول بھٹو زرداری ہاؤس نوابشاہ میں رات گزاریں گے،جس کے بعد کل صبح دس بجے کارواں کی صبح دس بجے لاڑکانہ روانگی ہوگا۔بلاول بھٹو دوسرے روز دوڑ، پڈ عیدن، محراب پور ، بھریا روڈ، رانی پور، خیرپور روہڑی، سکھر،، مدیجی، نوڈیرو، اور آخر میں لاڑکانہ میں کارکنان سے خطاب کے بعد کارواں بھٹو کا اختتام پزیر ہوگا

یہ بھی پڑھیں  مائیکل جیکسن کو بچھڑے 7 برس بیت گئے
error: Content is Protected!!