شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / ایکسکیوزمی / بنتِ حوا اور بازارِحُسن

بنتِ حوا اور بازارِحُسن

kafaitماں مجھے بیچ دو !دنیامیں کسی بھی ماں کے لئے ایک بیٹی کی منہ سے نکلے ہوئے یہ الفاظ یقیناًنا قابل برداشت ہیں اور ایسا کرنا تو رہا دور کی بات کوئی بھی ماں اپنی اُلاد کے لیے ایسا سوچ بھی نہیں سکتی۔ لیکن کیا بھوک غربت بے بسی اور لاچاری ایک بے بس ماں کو ایسا کرنے پر مجبور کر سکتی ہے ؟شاید میں یہ کالم نہ لکھتا اگر میرا قریبی دوست عزیز الرحمان شاکر حاصلپور سے کال کر کے مجھے سلیم کی بے ہسی اور زرین کی بے بسی کی داستاں نہ سناتا اپنے دوست کی زبانی سارا واقعہ سننے کے بعد میں اپنے آپ کو لکھنے سے روک نہ سکاکیونکہ میں چاہتا ہوں کہ میں اس تحریر کے ذریعے سلیم کی حیوانیت کا پردہ فاش کروں تاکہ سلیم جیسے انسانی کھال میں چھپے ہوئے بھیڑیوں کا اصلی چہر ہ دنیا کا سامنے بے نقاب ہوسکے۔ ضلع بہاولپور کے ایک چھوٹے سے قصبے قائم پور میں رہنا والا سلیم ایک نہائت ہی لالچی انسان تھا اسے بیٹیوں سے سخت نفر ت تھی اسکا یہ سوچنا تھا کہ بیٹیوں کی اچھی پرورش اور تعلیم پر پیسہ خرچ کرنا بالکل فضول اور نقصان ہے کیونکہ بیٹیوں کو اچھی تعلیم دینے کا فائدہ صرف ان کو ملتا ہے جہاں وہ بیاہ کر جاتی ہیں جبکہ بیٹوں کی پرورش پر پیسہ خرچ کرنا ایک اچھی انوسٹمنٹ ہے جو والدین کو ان کے بڑھاپے میں سود سمیت واپس مل جاتی ہے ایسی گھٹیا سوچ رکھنے والا صر ف سلیم ہی نہیں ہے بلکہ ایسے بے شمار لوگ ہمارے معاشرے میں موجود ہیں جو انسانیت کے ماتھے پر بدنما داغ ہیں۔سلیم کی جب شادی ہوئی تو اس نے اپنی بیوی زرین کو پہلے ہی سے آگاہ کردیا کہ اسے بیٹیوں سے سخت نفرت ہے اس لئے اسے بیٹا ہی چاہیے لیکن شاید وہ بد بخت یہ نہیں جانتا تھا کہ بیٹا یا بیٹی کا پیدا ہونا انسان کے ہاتھ میں نہیں بلکہ اﷲتعالیٰ کے ہاتھ میں ہے اور اُس کی مرضی کے بغیر کچھ بھی نہیں ہوسکتا ہے پھر ایسے میں کسی انسان کو قصور وار ٹھہرانا سرا سر جہالت اور کفر ہے ۔سلیم بھی ایسے جاہلوں میں سے ایک تھا کیونکہ جب اﷲتعالیٰ نے سلیم کے گھر اپنی رحمت بھیجی یعنی اس کے گھر بیٹی پیدا ہوئی تو اس نے پورا گھر سر پر اُٹھا لیا بیوی پر تشدد کیا اور نفر ت کی انتہا دیکھئے کہ اس بد بخت انسان نے اپنی پہلی اُولاد اپنی بیٹی کو دیکھنا بھی گوراہ نہ کیا۔ تقریباً تین چار ماہ بعد گھر کے بڑے بزرگوں اور دوستوں کے سمجھانے پر اس کا غصہ ٹھنڈا ہوا اور بڑی مشکل سے اس نے اپنی بیٹی کو اپنایا اور وہ بھی اس سوچ کے ساتھ کے شاید اگلی بار بیٹا پیدا ہو جائے۔لیکن خدا کو کچھ اور ہی منظور تھا کیونکہ اس بار بھی اس کی خواہش کے برعکس اس کے گھر ایک نہیں بلکہ جڑوا بیٹیاں پیدا ہو ئیں لیکن اس بار جو سلیم نے کیا اس نے حیوانیت کو بھی شرمندہ کردیا پہلے تو اس نے اپنی بیوی پر اتنا تشدد کیا کہ وہ بے ہوش ہوگئی لیکن اس کے غصے کی آگ تب بھی ٹھنڈی نہ ہوئی تو اس حیوان صفت ظالم انسان نے نو مولود بے گناہ بچیوں کے منہ پر تماچے مارنا شروع کردئیے ۔معزز قارئین یہ الفاظ لکھتے ہوئے بھی میرے ہاتھ کانپ رہے ہیں لیکن جن کے ساتھ اور جن کے سامنے یہ سارا وقعہ پیش آیا ہوگا ان پر کیا بیتی ہوگی شاید میں وہ الفاظوں میں بیان نہیں کر سکتا۔ اس حیوان کی اس کی اس حرکت کی وجہ سے پورے محلے میں کہرام برپا ہو گیا اور ہر کوئی اسے ایسا کرنے پر لعنتیں دے رہاتھا لیکن یہ کمینہ اپنی درندگی سے پھربھی بعض نہ آیا اور ا س نے غصے میں بہک کر ا پنی بیوی کو طلاق دے دی جس کا قصور صر ف یہ تھا کہ اس نے تین بیٹٹیوں کو پیدا کیوں کیا۔ طلاق دینے کے بعد اس خبیث نے زرین کو اسی وقت تینوں بیٹیوں کے ساتھ اس کے گھر سے نکل جانے کو کہا اور دھمکی دی کہ اگر ابھی ابھی وہ اس کے گھر سے نہ گئی تو وہ اس کو بیٹٹیوں سمیت زندہ جلا دے گا۔
زرین بچاری تو ابھی اس قابل بھی نہ تھی کہ سہارے کے بغیر بستر سے بھی اُٹھ سکے اور پھر ساتھ تین تین معصوم بچیاں ایسی حالت میں وہ کہاں جاتی او رکیسے جاتی خیرچند نیک دل محلے دا ر وں نے زرین او راسکی بیٹٹیوں پر ترس کھایا اور ان کو سلیم کے ظلم سے محفوظ رکھنے کے لئے اپنے گھر لے گئے۔کچھ عرصے کے بعد جب زرین کی حالت کافی بہتر ہوگئی تو زرین نے ان محلے داروں کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے مصیبت میں اسکا ساتھ دیا اور مدد کی تھی ۔زرین وہاں سے اپنے ایک چچازاد بھائی کے گھر پہنچی اور اسے ساری صورتحال بتائی جو کچھ اس کے ساتھ ہوا تھا لیکن بھائی نے بھی اُسے دلاسہ دینے کے بجائے زرین کو ہی بُرا بھلا کہنا شروع کردیا ۔زرین کے بھائی او راس کی بھابھی کا رویہ اس قابل نہ تھا کہ زرین کچھ عرصے کے یہاں پر رہ جاتی لہذا زرین نے اپنے بھائی کا گھر بھی چھوڑ دیا اب بے یارومدمدگار بچاری زرین جاتی تو کہاں جاتی کوئی بھی تو سہارا نہیں بچا تھا کیونکہ زرین کے ماں باپ تو پہلے ہی اس دنیافانی سے کوچ کرچکے تھے ایک بھائی کا سہارہ تھا لیکن اس نے بھی آنکھیں پھیر لیں۔ یہ ایک ماں کے لئے سب سے بڑا امتحان تھا کیونکہ زرین بالکل خالی ہاتھ تھی اور یہ غم اسے اندر اند ر اسے کاٹ رہا تھا کہ وہ تین تین بچوں کی پرورش کیسے کرے گی اوربچے بھی اتنے چھوٹے تھے کہ انہیں کہیں چھوڑ کر وہ کوئی کام بھی نہیں کرسکتی تھی ۔ اب زرین کے پاس بس ایک ہی راستہ بچاتھا جس سے وہ اپنے بچوں کا پیٹ پا ل سکتی تھی اور وہ راستہ زرین کو بُرائی کی ایسی دلدل میں لے گیا جہاں سے وہ پھر کبھی واپس نہ آ سکی ۔ زرین اس بازار حُسن میں جا پہنچی تھی جہاں ہر روز وہ خود کو بیچ کر اپنی اولاد پالتی رہی۔اب اسی بازار میں زرین کو پندرہ سال ہو چکے تھے لیکن زرین کی مصیبتیں ختم ہونے کو نہ تھیں اب زرین کی جوانی بھی بڑھاپے کی دہلیز پر قدم رکھ چکی تھی اور اسکی جوانی ڈھلنے کیساتھ ساتھ اسکی آمدن میں بھی کمی آنا شروع ہوگی تھی لیکن اب اخراجات پہلے سے کہیں زیادہ ہو چکے تھے کیونکہ اب اسکی دو جڑوا بیٹیاں چودہ چودہ سال اور بڑی بیٹی سترہ سال کی ہوگئی تھی لیکن اب زرین کے لئے آہستہ آہستہ اس بازار حُسن کے دروازے بھی بند ہونا شروع ہوگئے تھے اور حالات پھر فاقوں پر آگئے زرین کی بڑی بیٹی اب کافی سیانی ہوگئی تھی وہ اپنی ماں کی پریشانی سمجھ سکتی تھی اس لئے اسے دلاسے دیتی کہ آپ فکر نہ کریں سب ٹھیک ہو جائیگا اور ساتھ میں اپنی چھوٹی بہنوں کو بھی سمجھاتی رہتی ۔زرین کی بڑی بیٹی اپنی ماں کے بارے میں سب کچھ جانتی تھی کہ وہ کیا کرتی ہے کیونکہ یہ اکشر دیکھتی تھی کہ ہر روز شام سات آٹھ بجے اسکی ماں تیار ہوکر گھرکے دروازے پر بیٹھ جایا کرتی تھی پھر کوئی نہ کوئی اسے پیسے دیتا اور اپنے ساتھ لے جاتا لیکن اب وہ دیکھتی تھی کہ کئی کئی گھنٹے تک اس کی ماں سج دھج کر بیٹھی رہتی تھی لیکن کوئی بھی اسے ساتھ لے کر نہیں جاتا تھا۔ جبکہ اس کی ماں سے جوان اور خوبصورت عورتوں کو لوگ اپنے ساتھ بڑی جلدی لے جاتے تھے۔پھر ایک دن جیسے ہی زرین روز کی طرح اپنے دروازے پر آکر بیٹھی تھوڑی ہی دیر بعد اسکی بغل میں ایک اور لڑکی بھی آکر بیٹھ گئی جب زرین نے اس لڑکی کو غور سے دیکھا تو وہ کوئی اور نہیں بلکہ اسکی بڑی بیٹی تھی جو اسی طرح سج دھج کر آئی ہوئی تھی جیسے جوانی میں وہ خود خوبصور ت ہوا کرتی تھی زرین نے اپنی بیٹی کو دیکھ کر غصے سے کہاتم یہاں کیوں آئی ہو اور یہ میک اپ کیوں کیا ہے ؟زرین کی بیٹی کی آنکھوں میںآنسوں تھے اور ڈرتے ڈرتے ماں سے بولی !اماں میں سب جانتی ہوں آپ کیا کرتی ہیں میں آپ کو کئی دنوں سے دیکھ رہی ہوں کہ آپ یہاں پر کئی کئی گھنٹے بیٹھی رہتی ہیں آپ کو کوئی بھی اپنے ساتھ نہیں لے جاتا لیکن جب آپ جوان اور خوبصورت تھیں تو آپ کویہ لوگ بہت جلدی لے جاتے تھے ۔اماں آپ نے ہمارے لئے بہت کچھ کیا ہے آپ خود توبھوکی رہتی ہیں لیکن ہمارے لئے جیسے بھی ہو ہمیں بھوکا نہیں سونے دیا لیکن میں جانتی ہوں کہ اب دن بدن ہمارے حالات مزید خراب ہونگے اور پھر میری چھوٹی بہنیں بھی تو بڑی ہورہی ہیں اس لئے ماں اب یہ سارا بوجھ آپ اکیلی نہیں اُٹھائیں گی میں آپ کا ساتھ دونگی میں میک اپ کر کے اس لئے آئی ہوں کہ اگر آج یہ لوگ آپ کو نہیں خرید رہے ہیں تو آج آپ اپنی جگہ پر ماں مجھے بیچ دو۔ میں آپ کو اس طرح دکھی اور اپنی بہنوں بھوک سے مرتے ہوئے نہیں دیکھ سکتی۔ بیٹی کے منہ سے یہ باتیں سن کر زرین نے زور زور سے رونا شروع کردیااور اپنی بیٹی سے کہا تم نے آج مجھے جیتے جی مار ڈالا مجھے جتنا دکھ تہماری یہ بات سن کر آج پہنچا ہے اتنا دکھ اس وقت بھی نہیں ہوا تھا جب تمہارے باپ نے مجھے طلاق دی تھی۔بیٹی آج تو نے یہ باتیں کرکے میری ساری محنت رائیگاں کر دی ۔کیا میں نے یہی دن دیکھنے کے لئے اتنی تکلیفیں اٹھائی تھیں اور اگر آج میں نے تمیں اس راستے پر چلنے دیا تو پھر تمہاری ماں کی ہار اور تمہارے اس باپ کی جیت ہوگی جس نے مجھے صر ف اس لیے طلاق دی تھی کہ میں نے بیٹیاں کیوں پیدا کی ہیں اور اگر تم اس راستے پرچلتی ہو تو پھر یاد رکھو کہ کبھی کوئی بھی ماں بغیرباپ کہ بیٹیوں کی پرورش نہیں کرے گی ۔تمہار ا اس راستے پر چلنا نہ صر ف میر ی ہار نہیں بلکہ ایک ماں اور ایک عورت کی ہارہے۔زرین کی باتیں سن کر بیٹی ماں کے سینے سے لپٹ کر رونے لگتی ہے اور ماں کا آنچل تھامے گھر کے اندر چلی جاتی ہے۔
آج تو زرین نے اپنی سترہ سال کی جوان بیٹی کو بازارِ حُسن میں بکنے سے بچالیا لیکن کل کیا ہوگا یہ ایک سوالیہ نشان ہے لیکن میر ا ضمیر مجھے ملامت کرتا ہے اور مجھ سے یہ سوال کرتا ہے کہ کیا بازار حسن میں بکنے والی ہر عورت اپنی مرضی اور خوشی سے اپنے آپ کو بیچتی ہے؟ نہیں ایسا بالکل نہیں ہوسکتا کیونکہ وہ عورت جو اگر ماں ہے تو اس کے قدموں تلے جنت ہے بیٹی ہے تو باعث رحمت ہے بہن ہے تو عزت کی علامت ہے اور اگر بیوی ہے تو نسلوں کی محافظ ہے اتنے عظیم رتبوں کی مالک حوا کی بیٹی کیسے بازارِ حُسن کی زینت بن جاتی ہے۔ اگر حوا کی بیٹی گھر کی عزت سے بازار حُسن کی زینت بنتی ہے تو اس کے ذمہ دار ہم اور ہمارا معاشرہ ہے کیونکہ ہم ہی میں سلیم جیسے بھیڑئیے چھپے ہوئے ہیں جو عورت کو پاؤں کی جوتی سمجھتے ہیں اور بیٹیوں باعث زحمت اور سلیم جیسے ہی بے حس او ربے ضمیر مردوں کی ڈسی ہوئی زرین جیسی عوتیں مجبور ہوکر اس بازار میں بکنے پر مجبور ہو جاتی ہیں اور باقی کی رہی سہی کسرہمارے معاشرے کی پید اکردہ بہیودہ رسومات نے پوری کردی ہے۔ جیساکہ ہمارے معاشرے میں تیزی سے پھلیتی ہوئی جہیز کی لعنت ہے اور بیٹوں کے پیدا ہونے سے نفرت کرنیوالے لوگوں کی یہ بھی ایک اہم وجہ ہے اور اسی لعنت کی وجہ سے ہی آج بیٹی کو رحمت نہیں بلکہ زحمت سمجھا جاتا ہے۔ انسانی کھال میں چھپے ہوئے آج بھی بے شمار سلیم جیسے بھیڑئے ہمارے معاشرے میں موجود ہیں جو صر ف بھاری جہیز کے عوض شادیاں کرتے ہیں اورشادی کے بعد صرف بیٹے کی ہی پیدائش چاہتے ہیں کیونکہ ایسے لوگ شادی نہیں صر ف بزنس کرتے ہیں اور یہ ایک نہیں بلکہ بے شمار شادیاں کرتے ہیں ایسے بے ضمیر لوگوں سے بچنے کے لیے ہر والدین کا یہ فرض بنتا ہے کہ وہ بیٹیوں کو بوجھ نہ سمجھیں جسکو سر سے اتارنے کے لئے جلد بازی میں اپنی بیٹیوں کو بیاہ دیں اپنی بیٹیوں کی شادیاں کرتے ہوئے اس بات کا خاص خیال رکھیں کہ اگرکوئی ان سے بھاری جہیز لینے کا مطالبہ کرے اور صرف بیٹے پیدا کرنے کی خواہش کا بھی اظہار کرے تو ایسے لوگوں سے اپنی بیٹیوں کی شادیاں مت کریں کیونکہ ایسے لوگ شادی نہیں بلکہ بیوپار کرتے ہیں۔ بیٹیاں سب کی سانجھی ہوتی ہیں اس لئے بیٹی بیاہنے والے اور بیاہ کرلے جانے والے دونوں کو ایک دوسرے کا خیال رکھنا چاہیے ۔جہیز کے اس بڑھتے ہوئے فیشن نمالعنت کو اگر ختم نہیں کیا گیا اور اس کی کوئی حد مقرر نہ کی گئی تو پھریاد رکھیں کل کو اور بیٹی ازرین جیسی ماں سے یہ کہنے پر مجبور نہ جائے !اماں مجھ بیچ دو۔

یہ بھی پڑھیں  ۔،۔ نوجوان نسل کی ذمہ داری ۔،۔