تازہ ترینصابرمغلکالم

براق۔ جدید ترین ٹیکنالوجی کا شاہکار

sabirدشمن ملک بھارت کی جانب سے 1965میں اچانک حملہ اورپاک فوج کے ہاتھوں ناکوں چنے چبوانے کے 50سال بعد ۔یوم دفاع ۔انتہائی جوش و جذبہ سے منایا گیا ،یوں لگ رہا تھا کہ پوری قوم میں ایک نیا جذبہ نئی طاقت ایک نئے سرے سے شامل ہو گیا ہے دوسرے روز ۔یوم فضائیہ ۔کے موقع پرپاکستانی فوج نے سرحدی اور دشوار گذار علاقہ شوال میں اپنے ذاتی تیار کردہ ڈرون ۔براق۔سے پہلی بار کامیاب ترین حملہ کرتے ہوئے تین اہم ترین کمانڈروں کو جہنم واصل کر دیا،براق کے پہلے کامیاب حملے سے پوری پاکستانی قوم جھوم اٹھی ۔ہر کوئی ایک دوسرے کو مبارکباد دے رہا تھا۔عالمی طاقت امریکہ نے افغانستان پر حملہ کے بعد 18جون 2004کو پہلی بار پاکستان کے قبائلی علاقوں پر ڈرون حملوں کاآغاز کیا تھا،تب سے لے کر جون 2015تک امریکہ پاکستانی علاقوں پر 419 ڈرون حملے کر چکا ہے،اس وقت امریکہ کے MQ-1B Predator اورMQ-9 Reaperنامی ڈرون طیارے دنیا بھر میں اپنی مثال آپ ہیں،ڈرون کو (یو سی اے وی )Unmanned Combact Arial Vehicleبھی کہتے ہیں جس کا بنیادی کام جاسوسی اور اہداف کو نشانہ بنایا ہے جس کے انجن روٹیکس 914(ایف چار سلنڈر) ،قوت ایک سو پندرہ ہارس پاور ،پروں کا پھیلاؤ 48.7فٹ،لمبائی 27فٹ،اونچائی 6.9فٹ ،وزن 1103پاؤنڈ،اڑان کا وزن 2225پاؤنڈ،ایندھن کی گنجائش665پاؤنڈ،رفتار84سے135میل فی گھنٹہ اور پرواز کی بلندی 25سے 35ہزار فٹ ہے یہ ڈرون جو صرف ایک جہاز ہی نہیں بلکہ ایک پورا نظام ہے ،اس نظام میں 4جہازایک زمینی کنٹرول سٹیشن اور اس کو سیٹلائٹ سے منسلک کرنے والا حصہ ،اس نظام کو چلانے کے لئے55افراد درکار ہیں ابتدائی طور پر امریکہ کی جنرل ٹامک کمپنی نے اسے بنایا تھا 32لاکھ امریکی ڈالر کی لاگت سے تیار ہونے والے یہ ڈرون طیارہ 1995سے امریکی فوج کے زیر استعمال ہے،پاکستانی حدود میں اس عالمی طاقت کی جانب سے ڈرون حملوں کے بعد پاک فوج نے بھی اس منصوبے پر غور کیا اور قرآن مجید کی 17ویں سورہ ۔الاسرا۔جو 15ویں سپارہ میں ہے اور واقعہ معراج کے موقع پر نازل ہوئی تھی میں سے ۔براق۔کے نام پر منصوبے کا آغازنیشنل انجینرنگ اینڈ سائینٹیفک کپنی (NESCOM)نے ائیر فورس کے ساتھ مل کر2009میں کر دیا تھا،اس عظیم منصوبے پر پاکستان ایرو ناٹیکل کمپلیکس ۔ائیرو پلین کمپلیکس اور نیشنل ڈویلپمنٹ کمپلیکس سے تعلق رکھنے والے سائنسدانوں نے بھی حصہ لیا۔چینی اور ترکش ماہرین نے بھی پاکستانی سائنسدانوں کی بھرپور معاونت کی ،بغیر پائلٹ کے یہ لڑاکا فضائی گاڑی اب مکمل طور پر پاکستان میں تیار کی گئی ہے جو چین کے ڈرون CH-3سے مشابہت رکھتی ہے،یہ چائنا کے ڈرون AR-1کی طرح گائیڈڈ لیزر میزائل اور چھوٹے بم سیریز F7چائنا سیریزPGMسے لیس ہے، جس کا پہلا کامیاب تجربہ 13مارچ2015کو ٹیلہ جوگیاں جہلم میں کیا گیا، 7ستمبر کو پہلی بار اس سے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنا کر پاکستان ان آٹھ ممالک کی فہرست میں شامل ہوگیا ہے جو جدید ترین ڈرون طیاروں سے لیس ہیں جن میں امریکہ ،چین،ساؤتھ افریقہ،فرانس،نائجیریا،برطانیہ اور اسرائیل شامل ہیں،یہ پاکستانی براق 7لیزر گائڈڈ میزائلوں سے لیس ہدف کو ٹھیک ٹھیک نشانہ بنا نے کی صلاحیت رکھتا ہے،جدید ترین ٹیکنالوجی کا یہ شاہکار ہر موسم میں چاہے وہ آندھی ہو یا طوفان کام کر سکتا ہے،عربی میں البراق اپنے نشانے کو لیزر لائٹ سے پہچانتا ہے ،تیس ہزار فٹ کی بلدی تک پرواز کرنے کی صلاحیت سے مالا مال یہ طیارہ مسلسل 12گھنٹے تک تیس نا مساعد موسمی حالات میں بھی تیس ہزار فٹ کی بلندی تک پرواز کر سکتا ہے،اس سے قبل پاکستان کی مایہ ناز کمپنیNESCOMنے برق میزائل،حتف کروز میزائل،شاہین بلاسٹک میزائل جس کی رینج 2750کلومیٹر تک ہے بنائے تھے۔دوست ملک چین کی مدد او ر معاونت سے پاکستان ائیر فورس کے پاس F-17تھنڈر طیارے دنیا بھر میں اپنی مثال آپ ہیں،بدترین دہشت گردی کے شکار وطن عزیز کو پاک فوج کی جانب سے شروع کی گئی ۔ضرب عضب۔نے بڑی کامیابی سے محفوظ بنایا ہے اور یہ سلسلہ بڑی سرعت سے جاری ہے۔ دشمن ملک کی مدد سے یہاں خون کی ہولی کھیلنے والے دہشت گرودوں کا اب کہیں ٹھکانہ نہیں ،اب ان ناسوروں کے خلاف کاروائی کے لئے ہمیں کسی اور ملک کے ڈرونز پر انحصار نہیں کرنا پڑے گا بلکہ براق نامی یہ ۔ڈرونز۔ دشمن کو کہیں چھپنے یا بھاگنے نہیں دیں گے،پیشہ ورانہ صلاحیتوں سے اعتبار سے دنیا کی نمبر ون فوج جو جذبہ اور قوت ایمانی سے لبریز ہے ہمہ قسم کی جارحیت سے نبٹنے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے،پاکستان میں ڈرون ۔براق۔کی تیاری نے یہ ثابت کر دیا ہے کہ پاکستانی قوم اپنی خدادصلاحیتوں کی بدولت دنیا کی کسی قوم سے پیچھے نہیں یہ محدود وسائل کے باوجود دنیا کی نمبر ون فوج ہونے کا اعزاز رکھتی ہے،اس کی انٹیلی جنس ایجنسی (ISI)بھی دنیا میں پہلے نمبر پر۔جدید ترین میزائل ٹیکنالوجی ،فائٹر او رڈرون طیارے تک خود تیار کر لیتی ہے ،یہی وجہ ہے کہ دنیا کی سب سے خطرناک اور منافق قوم جس پر ہر وقت جنگی جنون سوار رہتا ہے جن کا ملک ہندوستان ہمارا پڑوس ہے ،ہر سال اپنے قومی بجٹ کی کثیر رقم خرچ کر کے بھی جسے اپنے مذموم مقاصد میں آج تک کامیاب نصیب نہیں ہو سکی اور نہ کبھی ہو سکے گی ۔وہ وقت بھی دور نہیں جب بقول چیف آف آرمی سٹاف جنرل راحیل شریف ۔مسئلہ کشمیر بر صغیر کی نامکمل تقسیم ہے۔وہ کشمیر جو پاکستان کی شہ رگ ہے ہندوستانی تسلط سے آزاد ہو گااور یوں بر صغیر کی غیر منصفانہ تقسیم اور کشمیر پر غاصبانہ قبضہ کسی درست سمت پر گامزن ہو گا۔ اس عظیم ترین کارنامے پر پوری قوم دھرتی کے ان سپوتوں کو خراج تحسین پیش کرتی ہے جنہوں نے قوم کو ۔براق ۔جیسا تحفہ دیا۔

یہ بھی پڑھیں  بے خوف قیادت ہی کراچی کو بھتہ خوری و قتل سے نجات دلاسکتی ہے،سمیعہ قاضی

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker