پاکستانتازہ ترین

اسلام آباد:آزادی کی جنگ لڑنے والوں کودہشتگرد نہیں کہاجاسکتا، چوہدری نثار

اسلام آباد(بیورو رپورٹ) وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثارعلی خان کا کہنا ہے کہ بھارت آزادی کی جنگ لڑنے والوں پردہشت گردی کاالزام لگاتاہے کوئی ملک دہشت گردی کے پیچھے چھپ کر آزادی کی تحریک کو کوکچلنے کی کوشش نہ کرے۔ سارک کانفرنس میں کبھی سیاسی بات نہیں ہوئی، بھارتی وزیرداخلہ نے نام لئے بغیرپاکستان پرالزامات لگائے، جبکہ راج ناتھ سنگھ کو جواب دینا ضروری تھا۔ سارک وزرائے داخلہ کانفرنس کے اختتام پرپریس کانفرنس کرتے ہوئے چوھدری نثارعلی خان کا کہنا تھا کہ روایت ہے کہ سارک فورم میں سیاسی معاملات پربات نہیں ہوتی، رولز کی خلاف ورزی تب ہوتی جب کسی ملک کانام لیاجاتا سیاسی بیانات آنے پر جواب دینے کا فیصلہ کیا۔ مجھ پر ذمہ داری ہے کہ میں ملک کے مفاداور مؤقف کی تایئد کروں۔ بھارت جیسا برتاؤ کرے گا اسے ویسا ہی جواب دیں گے، میں نے ریکارڈ درست کرنے کے لیئے خطاب کیا اور بھرپور انداز میں پاکستان کا موقف پیش کیا۔ چوہدری نثار علی خان کا کہنا تھا کہ راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ ممبئی، پٹھانکوٹ اور ڈھاکہ میں دہشتگردی ہوئی، جبکہ میں نے بتایا کہ آرمی پبلک اسکول اور گلشن اقبال پارک میں بھی دہشتگردی ہوئی۔ دہشتگردی ہمارے یہاں ہوتی ہے تو ہمارے پاس بھی ثبوت ہوتے ہیں۔ اگرآپ کوہمارے بارے تحفظات ہیں توہمیں بھی تحفظات ہیں۔ وزیرداخلہ کا مزید کہنا تھا کہ کوئی قانون دہشتگردی کے نام پرشہریوں پرفائرنگ کی اجازت نہیں دیتا۔ دہشتگرد وہ ہے جو فساد پھیلاتا ہے، جب دہشتگردی کے تصور پرہی اختلاف ہوتوبات مشکل ہے، تاہم مذاکرات کے لئے ہروقت تیارہیں لیکن وقاراورعزت کے ساتھ مذاکرات چاہتے ہیں۔ ہمیں الزامات لگانے سے آگے بڑھنا ہوگا، ناراض ہوکر اٹھ کر چلے جانا مسئلے کا حل نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button