پاکستانتازہ ترین

سی این جی مصنوعی بحران، صارفین سراپااحتجاج

لاہور(مانیٹرنگ سیل) پاکستان میں سی این جی یعنی نیچرل کمپریسڈ گیس کا مصنوعی بحران شدت اختیار کر گیا ہے، بعض شہروں میں ہفتہ وار لوڈ شیڈنگ ہے تو کئی شہروں میں سی این جی اسٹیشنز کھولے ہی نہیں گئے۔گزشتہ روزتیل اور گیس کی قیمتوں کا تعین کرنے والے ادارے اوگرا اور سی این جی ایسوسی ایشن مذاکرات میں ناکامی کے بعد ملک کے اکثر اسٹیشنز بند ہیں۔سی این جی اسٹیشنز مالکان صارفین کو گیس سے محروم رکھنے کے لیےمختلف ہتھکنڈے آزما رہے ہیں۔ فلنگ اسٹیشن پر کم پریشر کا بہانہ بھی تراشا جا رہا ہے۔ملک کے مختلف شہروں میں جو فلنگ اسٹیشن کھلے ہیں ان پر گاڑیوں کی طویل قطاریں دیکھنے میں آ رہی ہیں۔سی این جی اسٹیشنز کی احتجاجا بندش کے باعث صارفین کا صبر جواب دے گیا، گاڑی مالکان اور پمپ مالکان گتھم گتھا ہو گئے۔ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں صارفین کئی کئی گھنٹوں سے سی این جی کے حصول کے لیے انتظار میں کھڑے ہیں اور گیس نہ ملنے پر احتجاجا ایم اے جناح روڈ بند کر رکھا ہے۔صارفین کا کہنا ہے کہ حکومت نے انہیں بیروزگار کر دیا،قانون نافذ کرنے والے ادارے بھی ان کی داد رسی کرنے سے قاصر ہیں۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ حکومت دہشت گردی کی روک تھام کے لئے موٹر سائیکل اور موبائل فون بند کر سکتی ہے، تو سی این جی پمپ مالکان سے فلنگ اسٹیشنز کیوں نہیں کھلواسکتی۔ ادھرکراچی پولیس حکام کا کہنا ہے کہ فلنگ اسٹیشنز کھلوانے کے لیے اقدامات کیےجا رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں  جے یو آئی ف فیصلہ کرے کہ حکومت میں ہے یا اپوزیشن میں،چوہدری نثار

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker