پاکستانتازہ ترین

وزیراعظم کا ڈی ایٹ بزنس فورم سے خطاب

اسلام آباد(بیوروچیف) وزیراعظم راجہ پرویز اشرف نے ڈی ایت کے رکن ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ 2018ء تک باہمی تجارتی کو 500ارب ڈالر تک لا کر باہمی تجارت کے فروغ کے خواب کو حقیقی رنگ دیں ، تبھی 15سال قبل غربت کے خاتمے اور اقتصادی ترقی کے مقاصد کے حصول کیلئے قائم کردہ آٹھ ترقی پزیر مسلم ممالک کا یہ فورم فعال قرار دیا جاسکے گا۔ اسلام آباد میں ساتویں ڈی ایٹ بزنس فورم سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ رکن ممالک کی بھرپور شرکت جہاں ان کے عزم کی سنجیدگی کا اظہار ہے وہیں یہ اس بات کا بھی ثبوت ہے کہ ایک روز مشترکہ اہداف حاصل کرلئے جائیں گے ، انہوں نے کہا کہ پاکستان میں جمہوریت اور جمہوری ادارے مستحکم ہوئے ہیں اور معیشت بھی بہتری کی طرف گامزن ہے۔ وزیراعظم نے زور دیا کہ 1997ء میں رکن ممالک کا 43کروڑ ڈالر تجارت کا حجم بیس فیصد سالانہ نمو کے ساتھ 2011ء میں 17کھرب ڈالر سے تجاوز کرچکا ہے جبکہ رکن ممالک کے مابین باہمی تجارت 130ارب ڈالر تک پہنچ چکی ہے ، اسے آئندہ چھ سالوں میں 500ارب ڈالر تک لایا جائے گا ، پاکستان خطے میں اقتصادی ترقی ، تجارت اور سرمایہ کاری کی راہداری ہے ، اور سب کیلئے مشترکہ مواقع فراہم کررہا ہے ، اس موقع پر وزیر مملکت برائے خزانہ سلیم مانڈویوالہ ، وفاق ایوان ہائے صنعت و تجارت کے صدر حاجی فضل قادر شیرانی سمیت دیگر نے خطاب کیا جبکہ نائیجریا کی جانب سے ڈی ایٹ بزنس فورم کی سربراہی پاکستان کے حوالے کی گئی۔ بزنس فورم کے ورکنگ سیشن کے دوران ڈی ایٹ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کو مستحکم بنانے کا جائزہ لیا گیا جبکہ رکن ممالک کے نجی شعبوں کے دوران تجارتی تعلقات میں مزید اضافہ کیلئے بھی تجاویز پیش کی گئیں ، فورم میں تجارتی وفود، بزنس کونسلز و مقامی تجارتی تنظیمیں، سفارت کار، ماہرین تعلیم، متعلقہ وزارتوں کے حکام اور مقامی تاجر وں نے شرکت کی

یہ بھی پڑھیں  مکہ المکرمہ:ہوٹل میں آگ لگنے سے 2عازمین حج زخمی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker