Uncategorized

ڈسکہ:ڈاکٹرکی پیشہ وارانہ غفلت لاپرواہی پرصحافیوں نے بھر پوراحتجاج کیا

ڈسکہ﴿نامہ نگار﴾ڈاکٹر کی پیشہ وارانہ غفلت لاپرواہی اور زر پرستی سے صحافی کی شہادت کے خلاف تدفین کے بعد صحافیوں نے بھر پور احتجاج شروع کردیا ہے نماز جنازہ کے بعدصحافیوں کے ہنگامی اجلاس میں تین روزہ سوگ کا اعلان کرتے صحافیوں نے بازئوں پر سیاہ پٹیاں باندھ لیں تمام اخبارات ٹی وی چینلز کے دفتروں پر سیاہ ماتمی پرچم لہرا دیئے گئے ڈاکٹر شاہد فاروق نے اپنے اسٹیڈیم روڈ پر نجی ہسپتال میں نامور صحافی کامران افضال کا اپنڈیکس کامعمولی آپریشن کرنا تھا جس میں ڈاکٹر شاہد فاروق نے مستند عملہ کی فیسیں بچانے کیلئے غیر مستند عملہ کے ساتھ آپریشن شروع کردیا جو کنٹرول نہ ہوسکا اور سوا دو گھنٹے آپریشن کے بعد کامران ا فضال کو وارڈ میں شفٹ کیا جس کی حالت مسلسل بگڑتی گئی اور ڈاکٹر ورثائ اور صحافیوں کو جھوٹی تسلیاں دیکر ٹالتا رہا اور نویں روز صحافی وفات پا گیا جس پر صحافیوں نے شدید احتجاج کیا تو ڈی سی او سیالکوٹ اور ڈی پی او سیالکوٹ نے فوری ایکشن لیا اور ای ڈی او ہیلتھ کی ہدائت پر پوسٹ مارٹم کے بعد نعش ورثائ کے حوالے کردی نماز جنازہ کے بعد ہزاروں افراد کی موجودگی میں مرحوم کو سپردخاک کردیا گیا نماز جنازہ کے بعد صحافیوں کے ہنگامی مذمتی اور تعزیتی اجلاس میں تین روزہ سوگ اور احتجاج کا اعلان کیا گیا جس کے تحت صحافیوں نے بازئوں پر سیاہ پٹیاں باندھ لیں اخبارات اور ٹی وی چینلز کے دفتروں پر سیاہ پرچم لہرا دیئے گئے اجلاس میںغفلت کے مرتکب ڈاکٹر اور عملہ کے خلاف ہر فورم پر قانونی کاروائی کا فیصلہ کیا گیا جس کیلئے ڈیڑھ لاکھ کا فنڈ قائم کیا گیا بعدازاںصحافیوں نے پریس کلب سے تھانہ اور سول ہسپتال تک احتجاجی جلوس نکالا اور ملاقاتوں میں انچارج سٹی پولیس اور ایم ایس سول ہسپتال نے میرٹ اور قانونی کے مطابق کاروائی کا یقین دلایا جبکہ 2جون12بروز ہفتہ پانچ بجے شام پریس کلب سے میلاد چوک ،مین بازار، صوبیدار بازار، سمبڑیال روڈ، کچہری چوک، کچہری روڈ سے ریسٹ ہائوس تک احتجاجی جلوس نکالا جائے گا جبکہ ڈاکٹر شاہد فاروق ہسپتال بند کرکے عملہ سمیت رو پوش ہو چکا ہے

یہ بھی پڑھیں  ڈسکہ: لاپتہ ہو نے والے نوجوان کی نعش کھیتوں سے برآمد، چھریوں کے وار سے قتل

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker