تازہ ترینعلاقائی

داؤدخیل رورل ہیلتھ سینٹر سے ڈاکٹر اسحاق احمد خان کی ٹرانسفر کے بعد مریضوں کو شدید پریشانی کا سامنا

داؤدخیل ( ضیانیازی سے )داؤدخیل رورل ہیلتھ سینٹر سے ڈاکٹر اسحاق احمد خان کی ٹرانسفر کے بعد مریضوں کو شدید پریشانی کا سامنا بالخصوص ایمرجنسی مریضوں اور ایم ایل سی والے مریضوں کو شدید مشکلات درپیش ہیں کیونکہ ڈاکٹر ظفر کمال صبح نو بجے کے بعد ہسپتال آتے ہیں اور دن دو بجے کے بعد وہ اپنی ڈیوٹی انجام دیکر واپس چلے جاتے ہیں جس کے بعد مریضوں کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے ان خیالات کا اظہار امیر جماعت اسلامی عبد اللہ خان ،اور عبدالرشید خان جماعت اسلامی ،جبکہ نعمت اللہ خان ،یونس خان ،ظفر اللہ خان نے مشترکہ بیان میں کہا انہوں نے کہا کہ رورل ہیلتھ سینٹر پر بعض عناصر کی مرضی پر ڈاکٹر اسحا ق احمد کام نہیں کرتے تھے جس پر انہوں نے سیاسی دباؤ ڈال کر موصوف ڈاکٹر کا تبادلہ کرا دیا ان کی تعیناتی کے دوران رورل ہیلتھ سینٹر چوبیس گھنٹے چلتا تھااور ا س سے قبل ڈاکٹر امیر احمد خان کے دور میں بھی مریضوں کو ہر قسم کی سہولیات رورل ہیلتھ سینٹر میں مریضوں کو ہر قسم کی سہولیات میسئر تھیں اور اب ڈاکٹر ظفر کمال صبح نو بجے کے بعد آتے ہیں اور دن دو بجے تک مریضوں کو چیک کر واپس چلے جاتے ہیں جس کے بعد شام کے وقت مریضوں کو شدید مشکلات در پیش ہیں گزشتہ روز بھی ایک ایمر جنسی شام کے وقت آئی لیکن ہسپتال میں ڈاکٹر نہیں تھے جس کی وجہ سے ان کو مریض کو پرائیویٹ ڈاکٹر کے پا س لیکر جا نا پڑا اور آج پھر ایک ایم ایل سی کا مریض جس کو چاقو لگے ہوئے تھے ہسپتال لایا گیا لیکن ڈاکٹر ظفر کمال تین روز کی چھٹی پر تھے جس کی وجہ سے مریض کو ایم ایل سی کے لیے میانوالی جا نا پڑ اانہوں نے سیکرٹری ہیلتھ ،ڈی سی ا ومیانوالی اور ای ڈی او ہیلتھ سے مطالبہ کیا ہے کہ رورل ہیلتھ سینٹر میں ڈاکٹر کی دو آسامی جو خالی ہیں ان پر ڈاکٹر تعینات کیے جائے اور ڈاکٹر امیر احمد خان اور ڈاکٹر اسحاق احمد خان کو رورل ہیلتھ سینٹر داؤدخیل واپس لا کر مریضوں کو داؤدخیل میں بنیادی سہولتیں بہم پہنچائی جائیں تاکہ مریضوں کو مشکلات سے نجات مل سکے ۔

یہ بھی پڑھیں  پاکستان فائنل میں،انگلینڈ کو 3وکٹ سے شکست دے دی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker