تازہ ترینڈاکٹر بی اے خرمکالم

کوئٹہ میں دہشت گردی کی نئی لہر

dr. b.aچند ہفتوں کے بعد بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں‌یہ دوسری بڑی دہشت گردی کی واردات رونما ہوئی جس میں ہلاکتوں کی تعداد بڑھتی  جارہی ہے پہلی دہشت گردی کے خلاف دہشتگردی کی بھینٹ چڑھنے والوں کے لواحقین کے پرعزم اور پر امن احتجاج نے بلوچستان کی منتخب حکومت کو گھر بھیج کر دم لیا گورنر راج آنے سے امید کر کرن نظر آئی کی شاید اب امن قائم ہو جائے لیکن یہ پاکستان عوام کاخواب ہی تھاکل شام
کوئٹہ میں کرانی روڈ پر مارکیٹ کے باہر خودکش بم دھماکے میں خواتین اور بچوں سمیت 84 افراد جاںبحق اور 200 سے زائد زخمی ہو گئے۔ متعدد کی حالت تشویشناک ہے۔ پولیس کے مطابق یہ خودکش دھماکہ پانی کے ٹینکر کے ذریعے کیا گیا۔ دھماکے سے 2 عمارتیں خاکستر، 25 گاڑیاں، موٹر سائیکل اور رکشہ تباہ ہو گئے۔ پولیس حکام کے مطابق جاںبحق ہونے والے افراد کا تعلق ہزارہ برادری سے ہے۔ دھماکے سے 4 مارکیٹیں بھی مکمل تباہ ہوئیں۔ بم دھماکہ اتنا شدید تھا کہ دور دراز تک آواز سنائی گئی۔ سکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے کر سرچ آپریشن شروع کر دیا۔ شہر کے داخلی و خارجی راستوں کی ناکہ بندی کی گئی۔ دھماکے سے عمارتوں اور گاڑیوں، رکشوں کو شدید نقصان پہنچا۔ قریبی عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے۔ دھماکے کے بعد فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا، کسی کو بھی دھماکہ کی جگہ جانے کی اجازت نہ دی گئی حتی کہ میڈیا کو بھی جانے سے روک دیا گیا ۔ سول اور پی ایم سی ہسپتال میں ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے۔ دھماکے کے بعد کیرانی روڈ اور اطراف میں وقفے وقفے سے فائرنگ کا سلسلہ جاری رہا۔ زخمیوں کو ہسپتال میں منتقل کر دیا گیا ہے۔ زخمیوں میں خواتین اور بچے شامل ہیں، دھماکے کی جگہ دھواں اٹھتا دکھائی دیا۔ علاقے میں شدید خوف و ہراس پیدا ہو گیا، دھماکے کی آواز پورے شہر میں سنی گئی۔ دہشت گردی کی نئی لہر کے بعدمشتعل افراد نے ریسکیو ٹیموں پر پتھراؤکیا،  مشتعل افراد نے سڑکوں پر رکاوٹیں کھڑی کر دیں ۔ ۔ ڈی آئی جی کے مطابق دھماکہ خیز مواد 800 سے 1000 کلو گرام تک تھا اور علمدار روڈ سے زیادہ مقدار میں دھماکہ خیز مواد استعمال کیا گیا۔    صدر آصف علی زرداری، وزیراعظم راجہ پرویز اشرف، مسلم لیگ (ن) کے صدر نوازشریف، گورنر پنجاب مخدوم سید احمد محمود، وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف، تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان، (ق) لیگ کے صدر چودھری شجاعت حسین، نائب وزیراعظم چودھری پرویز الٰہی، جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن نے کوئٹہ بم دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے اسے دہشت گردی کا المناک واقعہ قرار دیا ہے۔ قومی رہنماؤں نے کہا کہ بے گناہ انسانی جانوں کے ضیاع کے ذمہ دار انسانیت کے دشمن ہیں۔ ان رہنماؤں نے جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین سے اظہار تعزیت اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کے لئے دعا کی۔ تازہ دہشت گردی کی لہر نے امن امان قائم  کرنے والے اداروں اور گورنر راج  پہ بھی سوالیہ نشان لگا دیا ہے ملک عزیز میں سرعت سے بڑھتی ہوئی دہشت گردی کی وارداتوں سے عوالناس میں شدید خوف ہراس پایا جاتا ہے امن و امان قائم کرنے والے اداروں کو دہشت گردی پہ قابو پا کرعوام کا اعتماد بحال کرنا ہوگا اللہ رب العزت وطن عزیز پاکستان کو دہشت گرد عناصر سے محفوظ رکھے آمینnote

یہ بھی پڑھیں  سندھ میں سی این جی پمپ کھلتے ہی سی این جی ایسوسی ایشن کی ہڑتال

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker