پاکستانتازہ ترینسائنس و آئی ٹی

دو سے زائد سمزایک موبائل میں استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہوگی، پی ٹی اے

4 sim mobileکراچی(نامہ نگار)سپریم کورٹ نے کراچی بد امنی عمل درآمد کیس کی سماعت کے دوران حکم دیا ہے کہ غیر قانونی موبائل فون سمز کی روک تھام کے لئے چیئرمین پی ٹی اے کی سربراہی میں ٹاسک فورس قائم کی جائے جس میں سیلولر کمپنیوں کے نمائندے ، پولیس،آئی بی ، ایف آئی اے ، آئی ایس آئی ، ایم آئی ، ایف بی آر کے نمائندے شامل ہوں۔کراچی بد امنی عمل درآمد کیس کی سماعت سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ کی۔دوران سماعت چیئرمین پی ٹی اے اسمعیل شاہ نے ملٹی میڈیا پر غیر قانونی سموں کی روک تھام سے متعلق سیریم کورٹ کو پریزنٹیشن دی۔ انہوں نے کہا کہ ایک دن میں دو سے زائد سمز ایک موبائل یا آئی ایم ای ائی نمبر پرفعال کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ جبکہ ایک شناختی کارڈ پر پانچ سے زائد سمز فعال نہیں ہوسکیں گی۔انہوں نے کہا کہ تمام سروس پرووائیڈر پہلے مرحلے میں دس سے زائد سمز رکھنے والے صارفین کی نشاندہی کریں گے۔ بغیر آئی ایم ای آئی نمبر کے موبائل فون درآمد کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ بغیر آئی ایم ای آئی کے نمبرز موبائل فون کی درآمد روکنے کیلئے کسٹم حکام کے تعاون کی ضرورت ہے۔ چیئرمین پی ٹی اے نے مزید کہا کہ سترہ دسمبر 2013 تک حتمی سفارشات طے کرلیں گے۔عدالت نے حکم دیا کہ ٹاسک فورس 17دسمبر تک حتمی سفارشات مرتب کرکے رپورٹ پیش کرے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ تین ہفتے بعد دوبارہ سماعت میں ٹاسک فورس کی رپورٹ کا جائزہ لیا جائے گا۔انہوں نے استفسار کیا کہ غیر فعال سمز فعال کرنے کی مشینیں کہاں سے اور کیسے آئیں چیئرمین پی ٹی اے نے کہا کہ یہ مشینیں غیر قانونی سروس پرووائیڈر سے برآمد ہوئی ہیں اور کراچی پولیس کے سربراہ اے آئی جی شاہد حیات نے ٹارگٹڈ آپریشن کے دوران ایسی 20مشینیں برآمد کی ہیں۔ کراچی بد امنی عمل درآمد کیس کی سماعت 3ہفتے کے لیے ملتوی کردی گئی۔

یہ بھی پڑھیں  رینالہ خورد:قائداعظم کی رہائش گاہ کو بموں سے اڑاناپاکستان کی سالمیت پرحملہ ہے،زاہد شاہ

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker