تازہ ترینعلاقائی

قصور: ڈسٹرکٹ ہسپتال قصور میں صحافی پر تشدد ،کمرے میں تین گھنٹے بند رکھا

قصور(بیورورپورٹ )ڈسٹرکٹ ہسپتال قصور میں صحافی پر تشدد ، کمرے میں تین گھنٹے بند رکھا ،سینئر صحافیوں کی مداخلت پر حبس بے جاں میں رکھا گیا صحافی باز یاب تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی کے رپورٹر محمد وسیم صحافتی ذمہ داریا ں پوری کرنے کیلئے ڈسٹر کٹ ہسپتال قصور کے کاڈیالوجی ورڈ میں گیا تو وہاں پر ڈاکٹر وارڈ میں موجود نہ تھا اور ایک ڈسپنسر تمام مریضوں کو مزکورہ ڈاکٹر کے پرائیوئٹ کلینک پر رجوع کرنے کیلئے کہہ رہا تھا جب صحافی نے یہ سارے مناظر اپنے کیمرے میں بند کر لیے تو چار عدد پرائیوئٹ گارڈ ز نے محمد وسیم اکرم پر بے رحمانہ تشدد کرنا شروع کردیااور گسٹتے ہو ئے ایم ایس کے کمرے میں لے گئے جہاں پر ایم ایس نے اپنے سامنے صحافی پر تشدد کروایا اور کمرے میں بند کر دیا واقع یہ اطلاع ملنے پر پریس کلب قصور کے سینئر صحافیوں نے ڈسٹر کٹ ہسپتال قصور جاکر حبس بے جاں میں رکھے ہو ئے صحافی کو بازیاب کرواکر قصور پو لیس کو اندراج مقدمہ کیلئے درخواست دے دی ہے اس واقع کے خلاف ضلع بھر کے تمام پریس کلبوں کا ہنگامی اجلاس طلب کر کے قراردار مذمت پاس کی گئی اور ضلعی انتظامیہ سے اس بہیمانہ واقع کی صاف شفاف انکوائری کرواکر ذمہ داروں کے خلاف سخت ترین کاروائی کروانے کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button