پاکستانتازہ ترین

کوئٹہ۔ نیشنل پارٹی نے انتخابی منشور کا اعلان کر دیا

Dr-Malik-Balochکوئٹہ(مانیٹرنگ سیل) نیشنل پارٹی نے انتخابی منشور کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ بلوچستان میں ظلم ،جبر اور نا انصافیوں کے ازالے کیلئے ترجیحی بنیادوں پر عملی اقدامات اٹھائے جائیں گے آنے والے دور اقتدار میں وزیراعلی نیشنل پارٹی سے ہوگا۔یہ بات نیشنل پارٹی کے سربراہ ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کوئٹہ پریس کلب پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا اس موقع پر سینیٹرمیر حاصل خان بزنجو ،نواب محمد خان شاہوانی ،ٹکری شفقت لانگو،سردار کمال خان بنگلزئی،حاجی یوسف نوتیزئی،ملک سمندر خان کاسی اور دیگربھی موجود تھے۔ ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے انتخابی منشور 2013ء کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان ایک کثیرالقومی ریاست ہے اس میں ہرقوم اپنی شناخت،زبان ،ثقافت ،رسم و رواج اور مخصوص سماجی ساخت رکھتی ہے موجودہ استحصالی ڈھانچے کے اندر قوموں کے وجود اور تشخص کو مسخ کرکے آزادانہ سماجی و اقتصادی ترقی کی راہ میں رکاوٹیں حائل کی گئی ہیں بلوچستان میں نا اہل وفاقی و صوبائی حکومتوں کے عوام دشمن رویوں ،ناقص طرز حکمرانی اور غیر سنجیدہ پالیسیوں کی وجہ سے حالات انتہائی گھمبیر صورتحال اختیار کرچکے ہیں بلوچستان میں سیاسی جدوجہد کرنے والوں کے خلاف عسکری حکمت عملی نے جہاں حالات کو مزید خراب کرنے میں اہم کردارادا کیا ہے شہید نواب محمد اکبر بگٹی ،شہید غلام محمد بلوچ کی شہادت کے بعد بلوچ سیاسی کارکنوں کی مسخ شدہ لاشوں کی برآمدگی کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع ہواسیاسی کارکنوں کو خفیہ اداروں کے ہاتھوں ماورائے و قانون لاپتہ کیا جاتا رہا انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں ،ریاستی مہم جوئی ،ظلم و جبر اورا ستحصال کے عمل نے سیاسی جماعتوں اور جمہوری جدوجہد کرنے والی تنظیموں کیلئے بلوچستان کی سرزمین کو تنگ کرنے کی سازشیں جاری رکھیں مگر اسکے باوجود بھی سیاسی ،پارلیمانی جدوجہد کرنے والوں نے ہمت نہ ہاری نیشنل پارٹی حقیقی جمہوریت اورا س ملک کو پارلیمانی فیڈریشن بنانے کیلئے جدوجہد کر ری ہے اور موجودہ ریاستی و حکومتی حکمت عملی کے برخلاف قوموں کے حقوق کے تحفظ ،ساحل و وسائل پر انکے اختیارات اور حق حکمرانی کیلئے ہر فورم پر آوازبلند کر رہی ہے بلوچستان میں عسکری حکمت عملی اور طاقت کے استعمال کے برعکس تمام سیاسی قوتوں کو اعتماد میں لیتے ہوئے نیشنل پارٹی مسائل کے فوری حل کیلئے اقدامات اٹھائے گی لاپتہ سیاسی کارکنوں کی بازیابی کیلئے اقدامات کئے جائیں گے عسکری اقدامات کے باعث نقل مکانی کرنے والے افراد کی انکے علاقوں میں باعزت واپسی اور بحالی کو یقینی بنایا جائے گا بلوچستان کے معاملات پر با اختیار کمیشن تشکیل دیا جائے گا جو یہاں ہونے والی زیادتیوں کے ازالے کیلئے تجاویز مرتب کریگا سیاسی کارکنوں اور رہنماوں کے خلاف تمام مقدمات ختم کرکے انکے ورانٹ منسوخ کئے جائیں گے نواب اکبر بگٹی قتل کیس میں ملوث تمام عناصر کو بے نقاب کرکے قرار واقعی سزا دی جائے گی ۔انہوں نے کہا کہ نیشنل پارٹی نے اپنے انتخابی منشور کا اعلان کردیا ہے جس کے تحت ملک کی تمام وحدتوں پر مشتمل برابری کی ایک ایسی وفاقی جمہوری مملکت تشکیل دی جائے گی جس میں مالیاتی و سیاسی اختیارات وفاق سے قومی وحدتوں اور تحصیل ،یونین کونسل کی سطح تک منتقل کئے جائیں گے کرنسی ،خارجہ امور اور دفاع کے علاوہ تمام اختیارات قومی وحدتوں کے پاس ہوگے ۔نیشنل پارٹی قومی وحدتوں کی ازسر نو تشکیل کرانے کے اصول کو تسلیم کرتی ہے قومی زبانوں ،بلوچی ،پنجابی ،سندھی ،پشتون ،سرائیکی کو قومی زبانوں کا درجہ دیا جائے گابیرونی لوگوں کی آباد کاری اور مقامی آبادی کو اقلیت میں تبدیل کرنے کی پالیسیوں کے خلاف ہر محاذ پر آواز اٹھائی جائے گی اور مقامی آبادی کو تحفظ فراہم کیا جائے گا۔ نیشنل پارٹی قومی وحدتوں کی سرزمین اور سمندری حدود میں موجود وسائل پر قوموں کے حق ملکیت کو تسلیم کرتی ہے ملک کے وفاقی ،فارن ،دفاعی اور پالیسی ساز اداروں میں قومی وحدتوں کے کوٹے کو یقینی بنائیں گے زرعی اصلاحات نافذ کرکے فوجی و سول افسران کو نوازی گئی زرعی اراضی واپس لیکرتمام سرکاری و غیر آباد زرعی ارضیات کسانوں میں تقسیم کی جائے گی ہمسایہ ممالک کے ساتھ دوستانہ تعلقات استوار کرکے انکے اندرونی معاملات میں مداخلت پر فوری طورپر پابندی عائد کی جائے گی بین الاقوامی امن کے حصول کی کوششوں کی حمایت کرتے ہوئے دنیا کو ایٹمی ہتھیاروں سے پاک کرنے کے عمل میں بھر پور حصہ لیا جائے گا اور غیر منصفانہ اقتصادی اور فوجی معاہدوں کومنسوخ کیا جائے گانیشنل پارٹی تحریر و تقریر اور تنظیم سازی کی مکمل آزادی کو یقینی بنانے کیلئے اقدامات اٹھائے گی روزگار ،تعلیم ،علاج ،رہائش کوا نسانی حق تسلیم کرکے اس پر عملدرآمد کیا جائے گا سیکولر اور غیر فرقہ وارانہ نظام کے فروغ کیلئے جدوجہد کی جائے گی کسی کو اپنے عقائد دوسر ے پرمسلط کرنے کی اجازت نہیں دیں گے ایک ووٹ ایک فرد کے اصول کے تحت عوام کے حق رائے دہی کو تسلیم کیا جائے گاخواتین کے سیاسی و معاشی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنائیں گے ملک میں اختیارات اور وسائل کی منصفانہ تقسیم کو یقینی بنایا جائے گا اور اس کیلئے 80فیصدقومی وحدتوں اور 20فیصد وفاق کیلئے مختص کیا جائے گا بلوچستان میں لوکل سرٹیفکیٹ اور ڈومیسائل سرٹیفکیٹ کے دوہری شہری نظام کو ختم کرکے بلوچستان میں آباد تمام شہریوں کو لوکل تصور کیا جائے گا سرکاری ملازمین کی ترقی و تحفظ کو یقینی بناتے ہوئے اہم سرکاری عہدوں پر انکی تعیناتی کو اولیت دی جائیگی ملک اور بلو چستان کے اکثریتی عوام کا درومدار زراعت سے وابستہ ہے جس کی ترقی کی جانب توجہ نہیں دی گئی نیشنل پارٹی زراعت کو بلوچستان کے عوام کی ترقی و خوشحالی میں ریڑھ کی ہڈی تسلیم کرتے ہوئے اس پر خصوصی توجہ دے گی بلوچستان معدنی دولت سے مالا مال صوبہ ہے نیشنل پارٹی بلوچستان کی معدنی دولت کو بلوچستان کے عوام کی قومی دولت تصور کرتے ہوئے اسے یہاں کی عوام کی خوشحالی کا ذریعہ بنائے گی سیندک ،کاپر اینڈ گولڈچین کے ساتھ معاہدے کا ازسر نو جائزہ لیا جائے گا ثمرمبارک مند کو پروجیکٹ سے فوری طور پر فارغ کردیا جائے گا تعلیم انسان کی ضرورت ہے جس کے بغیر کوئی بھی قوم ترقی نہیں پاسکتی ۔انہوں نے کہا کہ نیشنل پارٹی انتخابات میں کامیابی حاصل کرنے کے بعد تعلیم کے شعبے میں اصلاحات کریگی تاکہ تعلیم کے فروغ کو یقینی بنایا جاسکے بلوچستان میں آمدروفت کے بنیادی ذرائع سڑکوں کی تعمیر انتہائی ناگزیر ہے گزشتہ پانچ سال میں ترقیاتی منصوبوں کی جانب توجہ مرکوز نہیں کی گئی نیشنل پارٹی کی ترجیحات میں مواصلات کو اہمیت حاصل ہے بلوچستان میں بنیادی انسانی ضرورت صحت کے حوالے سے ابتک کسی حکومت نے توجہ نہیں دی اور نہ ہی اس میں موجود مسائل کو حل کرنے کی کوششیں کی گئیں ہیں جس کی وجہ سے صحت کا مسئلہ سنگین شکل اختیار کرچکا ہے صحت کی سہولیات عوام تک بہم پہنچانے کیلئے اقدامات کئے جائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ نیشنل پارٹی ملک میں بسنے والے محنت کش ہاریوں ،ماہی گیروں اور کچلے ہوئے افرادکی نمائندہ جماعت ہے اور ہم سمجھتے ہیں کہ ملک کے وجود میں آنے کے بعد عالمی سامراج کے درپردہ ایجنٹوں کا تسلط رہا جنہوں نے عوام دشمن پالیسیاں مرتب کیں ہم ایسی تمام پالیسیوں کے خلاف اقدامات کرینگے تاکہ انکے حقوق کو تحفظ فراہم کیا جاسکے بلوچستان کی ترقی و خوشحالی میں ماہی گیری اور لائیو اسٹاک بنیادی کردار ادا کر سکتا ہے بلوچستان کی طویل ساحلی پٹی ،سمندری حیات سے مالا مال ہے مگر وہ اس وقت بھتہ مافیا کی نظر ہوچکی ہے غیر قانونی جالوں کے استعمال نے عوام کو نان شبینہ کا محتاج بنادیا ہے ماہی گیروں کے حالت زندگی اور کاروبار کی بہتری کیلئے ترجیحی بنیادوں پرعملی اقدامات اٹھائے جائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ نیشنل پارٹی نے ہمیشہ ظلم ،جبر اور استحصال کے خلاف آواز بلند کی ہے آنے والے انتخابات میں عوام نے اعتماد کا اظہار کیا تو وزیراعلیٰ نیشنل پارٹی سے ہوگا۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button