پاکستانتازہ ترین

امریکا نے پاکستان میں اب تک350 ڈرون حملے کیے، 3000 سے زائد افراد ہلاک

drone attackاسلام آباد( ڈیسک رپورٹر) امریکا نے پاکستان میں اب تک 350 ڈرون حملے کیے ہیں جن میں3  ہزار سے زائد افراد ہلاک اور سینکڑوں زخمی  ہو گئے۔پاک افغان سرحد پر امریکا کی طرف سے پہلا حملہ 2004 میں کیا گیا، اب تک 350 حملوں میں سے 52 جارج ڈبلیو بش کے دور میں ہوئے جب کہ 298 حملے موجودہ امریکی صدر باراک اوباما کے دور میں کئے گئے، ان حملوں کے نتیجے میں 3 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوئے جن میں سے 800 سے زائد عام شہریوں کے علاوہ 176 معصوم بچے بھی شامل ہیں۔ دوسری طرف پاکستان کی درخواست  پر اقوام متحدہ نے تحقیقات کے لئے کمیٹی بھی بنا دی ہے جو رپورٹ تیار کر کے جنرل اسمبلی میں پیش کریگی۔

یہ بھی پڑھیں  رینالہ خورد:محکمہ تعلیم میں کرپشن اور بدعنوانیوں کی یلغار

یہ بھی پڑھیے :

One Comment

  1. شمالی وزیر ستان میں القائدہ اور طالبان
    جو کہ پاکستان کے دشمن ہیں ،کے تمام
    گروپوں اور غیر ملکی جہادیوں کے محفوظ
    ٹھکانے ہیں اور ان دہشت گردوں نے پاکستان کی سالمیت و یکجہتی کو خطرہ میں ڈال دیا
    ہے۔ القائدہ کے دہشت گردوں اور غیر ملکی
    دہشت گردوںکا مارا جانا اس چیز کا ثبوت ہے کہ
    ڈرون حملے صرف دہشت گردوں کے خلاف
    ہو رہے ہیں اور پاکستان کے مفاد میں ہیں۔ صوبہ خیبرپختونخواہ کے سینئر وزیر اور
    عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما بشیر بلور نے کہا کہ دُنیا کے تمام دہشت گرد ہمارے
    علاقے میں موجود ہیں۔ انہوں نے مزید
    کہاکہ شمالی وزیرستان میں مقامی لوگ کم اور ازبک، تاجک اور داغستان کے لوگ
    زیادہ نظر آئیں گے.

    اسامہ بن لادن و الظواہری
    کے ساتھی غیرملکی دہشت گرد شمالی وزیرستان پر قبضہ کئے بیٹھے ہیں اور انہوں نے
    پاکستان کی خود مختاری اور سالمیت کو چیلنج کر کے اسےخطرے میں ڈال دیا ہے۔ شدت پسندوں نے
    شمالی وزیرستان کے امن پسند لوگوں کو یرغمال بنا رکھا ہے اور شمال وزیرستان میں اب
    بے پناہ غربت ہے جو کہ دہشت گردوں کے سٖایا کے بعد ختم ہو جائے گی۔ ڈرون حملوں کے
    متعلق سابق صدر پرویز مشرف کا کہناہے کہ ڈرون حملے وہاں کئے جاتے ہیں جہاں عسکریت
    پسند ہوتے ہیں اور ان حملوں میں بہت دیکھ بھال کر نشانہ لگایا جاتا ہے۔ٓ

    ڈرون حملے صرف اور صرف
    دہشت گردوں کے خلاف کئیے جاتے ہیں جو نہ صرف پاکستان بلکہ دوسرے ممالک کے لئے بھی
    ایک خطرہ ہیں۔۔ ڈرون حملوں سے عام شہریوں کو کسی قسم کا
    خطرہ لاحق نہ ہے ۔ڈرون حملوں کے نتیجے میں ہلاک ہونے والے صرف شدت پسند
    ہوتےہیں اور بے گناہ پشتون اس سے
    بالکل متاثر نہ ہوتے ہیں۔.

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker