پاکستانتازہ ترین

آمدن سے زائد اثاثے: آغا سراج درانی گرفتار

اسلام آباد(پاک نیوز) نیب نے آغا سراج درانی کو اسلام آباد سے گرفتار کرلیا۔ احتساب عدالت نے سپیکر سندھ اسمبلی کا 3 روزہ راہداری ریمانڈر منظور کر لیا۔آغا سراج درانی کو احتساب عدالت کے جج محمد بشیر کے روبرو پیش کیا گیا۔ نیب نے موقف اختیار کیا کہ مجاز اتھارٹی نے وارنٹ گرفتاری جاری کیے، ملزم کے خلاف کراچی میں اثاثہ جات ریفرنس زیر سماعت ہے، 7 دن کے راہداری ریمانڈ کی استدعا ہے۔ احتساب عدالت نے سپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کا 3 روزہ راہداری ریمانڈ منظور کرتے ہوئے کراچی کی متعلقہ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔ نیب نے آغا سراج درانی کو آمدن سے زائد اثاثوں اور فنڈز میں خردبرد کے الزام میں گرفتار کیا۔ نیب ذرائع کے مطابق، آغا سراج درانی کی کراچی، حیدر آباد اور سکھر میں جائیدادیں ہیں، سپیکر سندھ اسمبلی نیب کو اپنی جائیدادوں کے ذرائع آمدن سے متعلق مطمئن نہ کرسکے۔ سراج درانی اور ان کے گھر کے 11 افراد کے نام پر ساری جائیدادیں ہیں، نیب نے ایس ای سی پی سے آغا سراج درانی اور اہلخانہ کی کمپینوں کا ریکارڈ بھی لے لیا۔ادھر بختاور بھٹو نے اپنے ٹویٹر پیغام میں کہا کہ چیئرمن پی پی، وزیراعلیٰ کا نام ای سی ایل پر ڈالا گیا اب سپیکر کو گرفتار کیا گیا، ای سی ایل پر نام ڈالنا اور سپیکر سندھ اسمبلی کو گرفتار کرنا جمہوریت کی تذلیل ہےبختاور بھٹو کا مزید کہنا تھا کہ 27 دسمبر کی تقریر کے بعد چیئرمن بلاول بھٹو زرداری کا نام ای سی ایل پر ڈالا گیا، پی ٹی آئی نے پریس کانفرنس کر کے سندھ پر قبضہ کرنے کے دعوے کئے، کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں کہ پی ٹی آئی ای سی ایل اور ان گرفتایوں سے کیا چاہتی ہے۔ مشیر اطلاعات سندھ مرتضیٰ وہاب کا کہنا ہے سراج درانی کی گرفتاری سمجھ سے بالا تر ہے، جرم ثابت ہونے سے قبل گرفتاری کیسے ہوسکتی ہے ؟ وزیراعظم، سپیکر قومی اسمبلی، وزرا کے خلاف انکوائریاں جاری ہیں، کیا وزیراعظم سمیت دیگر وزرا کے ساتھ بھی یہی رویہ اپنایا جائیگا ؟۔مولا بخش چانڈیو نے سپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کی اسلام آباد سے گرفتاری کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ سندھ کے سپیکر کو اسلام آباد سے ہتھکڑیاں لگا کر کراچی لے جانا کیا پیغام دے گا، سراج درانی سندھ اسمبلی کے سپیکر ہیں، انہیں اس طرح کیسے گرفتار کیا جا سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں  سعودی حکومت نے امن مہم کے لئے ایپ متعارف کروادی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker