شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / کھیل / پاکستان کے ساتھ سخت مقابلے کی امید ہے

پاکستان کے ساتھ سخت مقابلے کی امید ہے

انگلینڈ کرکٹ ٹیم کے ٹی ٹوئنٹی کے کپتان گریم سوان کا کہنا ہے کہ انگلینڈ اور پاکستان کی کرکٹ ٹیموں کے مابین ’سپاٹ فسکنگ سکینڈل‘ کی وجہ سے کوئی بدمزگی نہیں ہے۔

بی بی سی سپورٹس کو ایک انٹرویو میں سوان کا کہنا تھا کہ پچھلے چھ ٹیسٹ میچوں سے نہ ہارنے والی پاکستانی ٹیم سے وہ سخت مقابلے کی امید رکھتے ہیں۔ پاکستان کی ٹیم نے حال ہی میں سری لنکا کی ٹیم کو ٹیسٹ سیریز میں شکست دی تھی۔

سپاٹ فکسنگ کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ جو لوگ اس سکینڈل میں ملوث تھے وہ اب ٹیم میں شامل نہیں اور چنانچہ دونوں ٹیموں کے درمیان سیریز اس سکینڈل سے متاثر نہیں ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ وہ توقع کرتے ہیں کہ اس سکینڈل کے پیشِ نظر تو دونوں ٹیمیں زیادہ کوشش کریں گی کہ سیریز خوشگوار ماحول میں کھیلی جائے۔

دوسری طرف انگلینڈ کی ٹیسٹ کرکٹ ٹیم کے کپتان اینڈریو سٹراس نے کہا ہے کہ پاکستان کے ساتھ دبئی اور ابوظہبی میں ہونے والی تین ٹیسٹ میچوں کی سیریز کھیلنے کے لیے انگلینڈ کی ٹیم تازہ دم ہے۔

انہوں نے متحدہ عرب امارات کے دورے پر جانے سے پہلے کہا: ’ہمیں اس بات کا علم ہے کہ پاکستان کے خلاف یہ ٹور ہمارے لیے ایک زبردست چیلنج ہو گا۔‘

’لیکن ہم بہت تازہ دم اور پرجوش ہیں۔‘

انہوں نے کہا کہ ہم سپاٹ فکسنگ سکینڈل کو بھلا کر ’صرف کرکٹ پر توجہ مرکوز کرنا چاہتے ہیں۔‘

پاکستان ٹیم کی سلیکشن کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے بارے میں انہوں نے کہا کہ ’یہ ان (پاکستان) کی مرضی اور فرض ہے کہ وہ جو انہیں جو میسر ہے اس میں سے جو انہیں بہتر سائیڈ لگتی ہے چنیں۔ جو بھی XI چنی جائے گی ہم اس کے خلاف کھیلیں گے۔‘

دو ہزار دس میں سوان انگلینڈ کی جانب سے دونوں ممالک کے بیچ ہونے والی سیریز میں حصہ لے رہے تھے جب تین پاکستانی کھلاڑیوں کی سپاٹ فکسنگ میں ملوث ہونے کی خبر نیوز آف دی ورلڈ نامی اخبار نے شائع کی تھی۔

پاکستانی کھلاڑیوں محمد آصف، سلمان بٹ اور محمد عامر کو گزشتہ سال نومبر میں سپاٹ فکسنگ کے لیے سوچی سمجھی نو بالیں کرانے کی وجہ سے جیل کی سزا سنائی گئی تھی۔

اس سکینڈل میں اور بھی پاکستانی کھلاڑیوں کے ملوث ہونے کی افواہیں ملی تھیں۔

اگست دو ہزار دس میں بھارت کو چار صفر سے ٹیسٹ سیریز ہرانے کے بعد انگلینڈ نے ٹیسٹ کرکٹ کی درجہ بندی میں پہلی پوزیشن حاصل کر لے تھی۔ اس کامیابی کے بعد انگلینڈ کی یہ پہلی ٹیسٹ سیریز ہے۔

متحدہ عرب امارات میں ٹیسٹ کرکٹ کے بارے میں سوان کا کہنا تھا کہ وہاں زیادہ ٹیسٹ کرکٹ نہیں کھیلی گئی ہے اور اس نئے رجحان کا حصہ ہونا خوشگوار ہے۔

پاکستان انگلینڈ سیریز 2012

  • 17 جنوری، پہلا ٹیسٹ، دبئی
  • 25 جنوری، دوسرا ٹیسٹ، ابو ظبی
  • 3 فروری، تیسرا ٹیسٹ، دبئی
  • 13 فروری، پہلا ون ڈے، ابو ظبی
  • 15 فروری، دوسرا ون ڈے، ابو ظبی
  • 18 فروری، تیسرا ون ڈے، دبئی
  • 21 فروری، چھوتا ون ڈے، دبئی
  • 23 فروری، پہلا ٹی ٹونٹی، دبئی
  • 25 فروری، دوسرا ٹی ٹونٹی، دبئی
  • 27 فروری، تیسرا ٹی ٹونٹی، ابو ظبی
error: Content is Protected!!