پاکستانتازہ ترین

ہزارہ صوبے کے قیام کا بل سینیٹ میں پیش

اسلام آباد(پاک نیوز)مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر صابر شاہ نے ہزارہ صوبے کے قیام کا بل سینیٹ میں پیش کردیا۔ڈپٹی چیئرمین سلیم مانڈوی والا کی زیر صدارت سینیٹ اجلاس ہوا جس میں مختلف قانونی اور آئینی ترامیم کے بل پیش کئے گئے۔مسلم لیگ (ن) کے صابر شاہ نے اسلامی جمہوریہ پاکستان کے دستور میں مزید ترمیم کا بل پیش کردیا۔صابر شاہ نے کہا کہ یہ ترمیم ہزارہ کو صوبہ بنانے کے حوالے سے ہے، ہزارہ کو صوبہ بنانے کے لئے وہاں کے عوام نے جانیں دی ہیں، آئین پاکستان میں ترمیم کرکے ہزارہ کو صوبہ بنایا جائے۔قائد ایوان سینیٹر شہزاد وسیم نے کہا کہ اس میں کوئی ابہام نہیں ہونا چاہیے نئے انتظامی یونٹ ضروری ہیں، نئے صوبوں کی آوازیں آج اٹھ رہی ہیں ہمیں یہ معاملات پارلیمان میں لانے چاہیے۔بل کے حوالے سے وزیر ریلوے اعظم سواتی نے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت آنے کے بعد مجھے صوبوں کے حوالے سے ٹاسک دیا تھا، میں نے جنوبی پنجاب اور ہزارہ کو صوبہ بنانے کیلئے ایک مفصل رپورٹ تیار کرکے جمع کرادی ہے۔اعظم سواتی نے کہا کہ صوبے انتظامی بنیادوں پر بننے چاہیں۔وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے کہا کہ پی ٹی آئی نئے صوبوں کی کبھی بھی مخالف نہیں اور پیپلز پارٹی کی بھی کمٹمنٹ ہے۔ن لیگ کے سینیٹر مشاہد حسین سید نے اپنی ہی جماعت کے سینیٹر کے بل کی مخالفت کردی۔سینیٹر مشاہد حسین سید نے کہا کہ لسانی بنیادوں پر صوبے بننے سے ملک کا نقصان ہوگا۔ہزارہ صوبے کے لسانی بنیادوں پر قیام سے متعلق تحفظات پر سینیٹر صابر شاہ نے کہا کہ ہزارہ صوبہ لسانی بنیاد پر نہیں بن رہا ہے، یہ ہزارہ صوبے کا علحدہ بل ہے۔بعد ازاں ڈپٹی چیئرمین سینیٹ نے بل متعلقہ قائمہ کمیٹی کو بھیج دیا۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button