تازہ ترینکالممحمداعظم عظیم اعظم

لوکیاامریکی انتخابات میں گدھا پھرجیت جائے گا…اورہاتھی ہارجائے گا..؟

امریکا میں 6نومبر2012بروزمنگل کو صدارتی انتخابات منعقدہورہے ہیں ماہِ رواں کی چھ تاریخ امریکی صدارتی الیکشن کے حوالے سے اِس لئے بھی خاصی اہمیت رکھتی ہے کہ امریکا کے انتخابی شیڈول میں یہ بات واضح ہے کہ ملک میں چار سال بعد جب بھی صدارتی انتخابات کا انعقاد کیاجائے گا وہ ماہِ نومبر کا پہلامنگل ہی ہوگاخواہ اِس روز تاریخ کچھ بھی ہومگر دن ماہِ نومبر کے پہلے ہفتے کا پہلامنگل ہی ہوگااِس مرتبہ بھی صدارتی انتخابات میں امریکاکی دوبڑی پارٹیاں جن میں ایک ڈیموکرٹیک پارٹی ہے جس کی بنیادروشن خیال، لبرل سوچ اور جمہوریت پسندی پر قائم ہے اور جس کے صدارتی اُمیدوار موجودہ امریکی صدر مسٹر بارک اوباما ہیں جن کا انتخاباتی نشان ’’گدھا‘‘(ڈونکی) ہے جبکہ دوسری جانب اوباما کے مدمقابل مسٹرمٹ رومنی ہیں جن کا تعلق ری پبلکن پارٹی سے ہے جن کی پارٹی کے بارے میں امریکیوں اور دنیا بھر کے مبصرین کا ایک عام اورمشترکہ خیال یہ ہے کہ رومنی کی پارٹی کے نظریات اور سوچ خالصتاََقدامت پسندی اور راسخ العقیدہ بنیادوں پر قام ہے جن کا انتخابی نشان’’ ہاتھی‘‘ (ایلیفینڈ)ہے اِن دوپارٹیوں سے تعلق رکھنے والے اُمیدوار اپنی اپنی عالمی شخصیت کے حوالے سے قدآور حیثیت رکھتے ہیں ابھی جب ہم یہ سطور رقم کررہے تو امریکا ہی سے ایک خبر یہ آئی ہے کہ تازہ ترین سروے کے مطابق اوباما اور رومنی کی حمایت 48,48فیصدہوگئی ہے یوں راقم الحروف کی نظر میں امریکی انتخابا ت میں سخت ترین مقابلہ متوقع ہے ۔
تاہم موجودہ امریکی صدر مسٹر بارک اوباما جن کا انتخابی نشان ’’گدھا‘‘ ہے اِن کے بارے میں مبصرین کا یہ کہناہے کہ گزشتہ چار سالوں میں بارک اوباما نے دنیابھرمیں امریکی وقار وخارجہ پالیسی اور معیشت کوجس دانشمند ی سے روشناس کرایااور امریکی نوجوانوں کو اپنا گرویدہ بنایاہے یہ اِن ہی کا خاصہ ہے یوں اِس مرتبہ بھی اُمیدہے کہ اپنا انتخابی نشان ’’ گدھا‘‘ پسندکرنے والے مسٹربارک اوباما چھ نومبر کو ہونے والے امریکی صدارتی انتخابات میں کامیاب ہوجائیں گے اور اپنی فہم وفراست اور اعلیٰ حکمتِ عملی سے امریکا اور امریکی شہریوں کو طالبان سمیت اور دیگرشرپسندعناصر سے محفوظ رکھنے میں اپنی اہم ذمہ داریاں نبھائیں گے مگراِس کے ساتھ ساتھ مبصرین کا یہ بھی کہناہے کہ ’’ اگر اِس بار اوباما پھر کامیاب ہوجاتے ہیں تو اِنہیں اپنی حکومت کے آئندہ چار سالوں میں کئی اندورنی اور بیرونی چیلنجزکا سامنابھی کرناپڑسکتاہے اگر اِن چیلنجز سے نبردآزماہونے میں اوباما اور اِن کی انتظامیہ ذرابھی ڈھیلی ہوئی تو پھر آئندہ ڈیموکرٹیک پارٹی کو انتخابات میں کامیابی حاصل کرنی مشکل ہوجائے گی یوں چھ نومبر2012کے انتخابات ڈیموکریٹک پارٹی کے کامیاب ہونے والے اُمیدوار مسٹر بارک اوباما کے لئے سخت امتحان ثابت ہوں گے جنہیں امتحان میں کامیابی کے لئے ضروری ہوگاکہ یہ اپنی خارجہ پالیسی بالخصوص پاکستان، افغانستان کی موجودہ صُورتحال سمیت مشرقی وسطیٰ کے معاملات میں ذرابھی لچک کا مظاہرہ نہیں کرناہوگا اوراگر اِنہوں نے اِن معاملات میں لچک دکھائی تو یہ اپنی مدت پوری کرنے سے قبل ہی اپنے ماتھے پر ناکامی کا ٹیکہ اور سینے پر نااہلی کا تمغہ لگالیں گے۔
اُدھررپبلکن پارٹی کے اُمیدوار مسٹر مٹ رومنی جن کا انتخابی نشان ’’ ہاتھی‘‘ہے اِن کی پوزیشن بھی بڑی حد تک مضبوط نظرآرہی ہے کیوں کہ رومنی نے کئی امریکی ریاستوں میں اپنے مباحثوں کے دوران موجودہ امریکی صدر بارک اوباماکی پالیسیوں پر جس طرح تنقیدیں کیں ہیں اِن کی اِن تنقیدوں نے کئی حوالوں سے اوباما کو لاجواب کردیاتھااور یہ اپنی پیشانی پر آئے پیسنے کے قطروں کو مارے گھبراہٹ کے صاف کرتے نظر آئے چوں کہ ہی وہ لمحہ تھاکہ جس نے امریکیوں کو مٹ رومنی کا گرویدہ بنایا اور اِن کے دلوں میں رومنی نے جگہہ بنالی۔
بہرحال..!امریکیوں سمیت عالمی سطح پر قوی خیال یہ بن گیاہے کہ مٹ رومنی خواہ کتنے ہی اچھے کیوں نہ بن جائیں مگراِن کی پارٹی جو قدامت پسندی اور راسخ العقیدہ رکھنے والی جماعت ہے اِس کی کامیابی ممکن نہیں ہے کم ازکم اِس مرتبہ تو مشکل ہی ہے ہاں اگرآئندہ کبھی اِس نے اپنے منشور اور قدامت پسندی اور راسخ العقیدہ رویوں اور نظریئے کو تبدیل کیاتو ہوسکتاہے کہ امریکا میں آئندہ کبھی ہونے والے صدارتی انتخابات میں اِس پارٹی سے تعلق رکھنے والا کوئی اُمیدوار کامیاب ہوکر امریکی صدر بن جائے۔
مگر ہم قبل ازقت یہ پیشنگوئی کرتے چلیں کہ لوامریکی انتخابات میں ایک مرتبہ پھر گدھے کے نشان والا صدر جیت گیااور ہاتھی کے نشان والااُمیدوارہار گیاوہ گدھاجِسے ہم پاکستانیوں کی اکثریت بدعقل سمجھتی ہے آج ایک مرتبہ پھر ہم اور ہمارے پاکستانی حکمران، سیاستدان ، اور دانشورورانِ پاکستا ن گدھے کے انتخابی نشان والے کامیاب صدربارک اوباما اور اِس کی انتظامیہ سے اپنے اُمورمملکت چلانے کے لئے رہنمائی لیں گے( اور گدھے کے ہی دیئے ہوئے) میرامطلب یہ ہے گدھے کے انتخابی نشان والے صدر کے مشوروں ، امدادوں، اور گائیڈلائینوں پر اپنی اپنی ذمہ داریاں سرانجام دیں گے اور پوترہوتے جائیں گے کبھی کبھی میں یہ سوچتاہوں کہ ہمارے حکمران آخرایساکیوں نہ کریں..؟تو خود ہی جواب دے ڈالتاہوں کہ ارے بھئی..! اِنہیں اپنی دال دلیہ بھی توچلانی ہے جو امریکی صدر کی خوشامدکرنے ہی سے اِنہیں نصیب ہوتی ہے بھلے سے امریکی صدر کوئی گدھاہویا اِس کا انتخابی نشان گدھاہو… اورارے ہاں..! ہمارے میڈیاکے تو کیاکہنے صدارتی انتخابات توامریکامیں ہورہے ہیں مگر اپنے پاکستانی الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا (سرکاری و نجی ٹی وی چینلزاور اخبارات )کے انتظامات اور اہتمام جس میں اِنہوں نے اپنے چار اور پانچ نومبر کو امریکی صدارتی انتخابات کے حوالے سے خصوصی پروگرام دکھائے اور اسپیشل صفحات نکالے ہمیں اِنہیں دیکھ کر ایسالگاکہ جیسے یہ انتخابات امریکاکے نہیں ہمارے اپنے انتخابا ت ہورہے ہیں جب اِس بات کا تذکرہ ہم نے اپنے سنیئرلکھاری دوست کالم نگار محمداحمدترازی سے کیاتو اُنہوں نے ترنت کہااِس میں بھی کیا کوئی شک ہے ..؟یہ ہمارے ہی انتخابات تو ہیں کیوں کہ پاکستان میں جس طرح پچھلی کئی دہائیوں سے امریکیوں کی مداخلت بڑھ گئی ہے اِس سے توایساہی لگتاہے کہ جیسے ہماراملک پاکستان امریکی کالونی بن گیاہے یہ بات یکدم درست ہے کہ امریکی صدر خواہ کوئی بھی ہواِس کا تعلق کسی بھی پارٹی سے ہو وہ اپنی کرسی سنبھالتے ہی امریکی خارجہ پالیسی میں پاکستان کو ترجیحی دیتاہے اور اپنی دانش سے ایسے اقدامات کرتاہے جس میں امریکی زیادہ مگر پاکستانیوں کے مفادات آٹے میں نمک جتنے بھی نہیں ہوتے ہیں۔
بہرکیف ..! یہاں میں اپنے قارئین کو یہ بتاتاچلوں کہ گدھاایک ایسا جانور ہے جو ساری دنیامیں پایا جاتا ہے مگربدقسمتی سے جِسے برصغیر پاک و ہند اور دنیاکے دیگر ترقی پزیدممالک میں احمق ، نادان اور ایک بیوقوف جانور سمجھامگرحیرت کی بات یہ ہے کہ دنیا کی سُپر طاقت گرداننے والے ملک امریکا میں یہ عقل مندی اور محنت کش جانور کی حیثیت سے جانااورپہچاناجاتاہے تب ہی تو امریکا میں زیادعرصے تک حکمرانی کرنے والی ڈیموکرٹیک پارٹی کا انتخابی نشان گدھاہے اَب چوں کہ گدھے کی اہمیت اور اِس کے امریکی وقار اور احترام کی بات چل نکلی ہے تو یہاں میں اپنے بیٹے کا بھی تذکرہ کرناضروری سمجھتاہوں گوکہ ابھی یہ ہے تو ساڑھے تین سال کا مگر مجھے جانوروں میں اِس کی پسندیدگی کے حوالے سے حیرانگی ہوتی ہے کیوں کہ اُسے سب جانوروں میں گدھاسب سے زیادہ پسندہے گدھے سے اِس کی محبت اور عشق کا یہ عالم ہے کہ جب اِسے راہ چلتے ، اسکول جاتے ، بازار جاتے یامیرے ساتھ گاڑی میں سفرکرتے کہیں بھی گدھانظر آجائے تویہ گاڑی رکواکر اِس کے منہ پر ہاتھ لگاکر پیارکئے بغیر نہیں رہ سکتاہے اِس کا یہ معاملہ گدھے کی فوٹو سے بھی ہے جب تک یہ اُسے پیار نہیں کرلیتاہے اِسے چین ہی نہیں آتاہے کبھی کبھی تو گدھے سے اِس کی محبت اور تڑپ کا یہ عالم دیکھ مجھے ا ور اِس کی مماکو ایسالگتاہے کہ جیسے یہ امریکی بچہ ہے جو گدھے سے محبت کرتاہے اور اِس پر فداہوتاہے یہ پاکستان میں پیداہوگیاہے اگر امریکا میں ہوتایا مستقبل میں کبھی امریکا گیایا وہاں کا شہری بناتو یہ ایک کامیاب امریکی شہری ہوگاکیوں کہ یہ گدھے سے ٹوٹ کر محبت کرتاہے اور اگر یہ بدقسمتی سے امریکا نہ جاسکااور یہاں پاکستان ہی میں رہ گیا تو گدھاہی رہے گا کیوں کہ ہمارے یہاں گدھے کو بیوقوف اور بدعقل سمجھاجاتاہے ہاں تو میں بات کررہاتھا امریکا کے صدارتی انتخابات کی مجھے اِس بات کا پورایقین ہے کہ چھ نومبر کو امریکا میں ہونے والے صدارتی انتخابات میں ڈیموکرٹیک پارٹی سے تعلق رکھنے والے موجودہ امریکی صدر مسٹر بارک اوباما جن کا انتخابی نشان گدھاہے دوبارہ صدر منتخب ہوجائیں گے اور اِس مرتبہ یہ پاکستان سے متعلق ایسی سخت ترین پالیسیاں مرتب کریں گے کہ ہم پاکستانیوں کے سرچکراکر رہ جائیں گے اِس لئے ہمیں اوباما کی حمایت کرنے سے پہلے یہ ضرور سوچ لیناہوگاکہ اُنہوں نے اپنے اقتدار کے پہلے چار سالوں میں ہم پاکستانیوں کے لئے کیا کچھ اچھاکیاہے…؟ اور آئندہ کیاکریں گے…؟ جس پر ہم اِن کی دوبارہ حمایت کریں۔

یہ بھی پڑھیں  ظفروال: توبہ انسان کو قربت خدا وندی کی لا زوال بلندی تک پہنچاتی ہے،پیر تبسم اویسی

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker