تازہ ترینعلاقائی

مانسہرہ:کم عمر لڑکی کے ساتھ ایس ایچ اوسمیت دیگراہلکاروں کی زیادتی

مانسہرہ﴿قاضی بلال سے﴾نکاح اور شادی کی غرض سے کراچی سے بھگا کر لائی جانے والی کم عمر لڑکی کے ساتھ رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں قانون نافذ کرنے والے ادارے کے نواہلکاروں کا جنسی تشدد۔ زیادتی کا شکار ہونے والی لڑکی کے عدالت میں بیانات اور میڈیا کی نشاندہی کے بعد ڈی پی او مانسہرہ نے زیادتی کے مرتکب ایس ایچ او سمیت دیگر اہلکاروں کو معطل کرکے پانچ رکنی تحقیقاتی ٹیم تشکیل دے دی۔ تفصیلات کے مطابق مانسہرہ کا رہائشی عادل نامی شخص کراچی مہاجر کیمپ نمبر5سے ہری پور سے تعلق رکھنے والی17سالہ لڑکی مسماۃ ’’س‘‘ دختر علی زمان کو شادی و نکاح کی غرض سے بھگا کر مانسہرہ لایا۔ مانسہرہ کے مقامی ہوٹل میں تین دن قیام کے بعد عادل اسے بازار میں چھوڑ کر بھاگ گیا۔ جبکہ نو عمر لڑکی کو پولیس تھانہ سٹی کے اہلکار پکڑ کر تھانہ سٹی مانسہرہ لے آئے۔ نوعمر لڑکی نے گذشتہ روز اپنے ساتھ نو پولیس اہلکاروں کی اجتماعی زیادتی کا پردہ چاک میڈیا کے سامنے چاک کرتے ہوئے صحافیوں کو بتایا کہ وہ ہری پور کی رہائشی ہے اور کراچی مہاجر کیمپ نمبر5میں اپنے مقیم ہے۔ اس کا والد علی زمان معذور شخص ہے جبکہ اس کا بھائی محنت مزدوری کرتا ہے۔ مسماۃ’’س‘‘نے بتایا کہ وہ سودا سلف لینے کے لئے اکثر بازار جایا کرتی تھی۔جہاں اس کی ملاقات مانسہرہ کے رہائشی عادل نامی شخص کے ساتھ ہوئی۔ جس نے اس کے ساتھ نکاح و شادی کو مانسہرہ آنے سے مشروط کیا۔ رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں وہ عادل کے ساتھ بھاگ کر مانسہرہ آئی۔ جہاں عادل نے ایک مقامی ہوٹل میں اسے رکھا اور تین دن قیام کے بعد ہوٹل کے کمرے کو تالا لگا کر اسے بازار لایا اور اسے بازار میں چھوڑ کر خود فرار ہو گیا۔ جہاں پولیس تھانہ سٹی کے نوجوان اسے تھانہ سٹی مانسہرہ لے آئے۔ مسماۃ’’س‘‘نے بتایا کہ تھانہ میں اسے پولیس افسر نے لاٹھیوں سے تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد لیڈی پولیس کانسٹیبل کے حوالے کیا اور لیڈی پولیس کانسٹیبل اسے لتروں سے تشدد بناتی رہی اور آخر اس لیڈی کانسٹیبل نے اسے پولیس اہلکاروں سے بدکاری کرانے پر اکسایا اور تین پولیس اہلکار یکے بعد دیگرے لیڈی کانسٹیبل کے کمرے میں آ کر اس سے بدکاری کرتے رہے۔ تین دن تھانہ سٹی مانسہرہ میں حبس بے جا میں رکھنے کے بعد اسے تھانہ کاغان لے گئے جہاں پر اسے زبردستی تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد اس سے زیادتی کی جاتی رہی۔ مسماۃ’’س‘‘کے بقول اس کے ساتھ مجموعی طور پر 9پولیس اہلکاروں نے زیادتی کی اور دوبارہ اسے تھانہ سٹی مانسہرہ میں لا کر بند کر دیا گیا۔ مسماۃ’’س‘‘نے بتایا کہ اسے دارلامان لانے سے قبل میڈیکل کے لئے پیش کیا گیا۔ جہاں لیڈی کانسٹیبل کے ایمائ اور اس کے اصرار پر اس نے اپنا طبی معائنہ کروانے سے انکار کیا۔ اس نے بتایا کہ زیادتی کرنے والے جملہ ملزمان کو شکل سے پہنچان سکتی ہے۔ زیادتی کا شکار ہونے والی نوعمر لڑکی کی جانب سے گینگ ریپ کا واقعہ منظر عام پر آنے کے بعد مسماۃ’’س‘‘کا بیان عدالت میں قلمبند کروایا گیا۔ جس میں بھی اس نے اپنے ساتھ ہونے والی زیادتی کا بھانڈا پھوڑا۔ دریں اثنائ گینگ ریپ واقعہ میں ملوث ایس ایچ او سمیت دو افسران کو ڈی پی او مانسہرہ شیر اکبر خان نے معطل کر کے پانچ رکنی کمیٹی تشکیل دے دی۔ ڈی پی او کی سربراہی میں تحقیقاتی ٹیم میں ایس ایس پی انویسیٹی گیشن ،ڈی ایس پی انویسٹی گیشن مانسہرہ، انسپکٹر عظیم خان اور نذیر السلام ڈی ایس پی بالاکوٹ شامل ہیں۔ ڈی پی او مانسہرہ شیر اکبر نے پریس کانفرنس میں کہاہے کہ گینگ ریپ سکینڈل کیس میں کسی کے ساتھ رعایت نہیں بھرتی جائے گی اور ملزمان کو قرار واقعی سزا دی جائے گی جس کے لیے جلد پولیس شناخت پریڈ کروا کر ملزمان کے خلاف ایف آئی آر درج کردی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں  چنیوٹ:دہشت گردوں کے خلاف کامیاب آپریشن پولیس کے جوانوں نے محکمہ کا نام بلند کر د

یہ بھی پڑھیے :

One Comment

  1. aap ke khayal mein siref muaatil karna kiya kafi hai pakistan mein ye koy pehla waqia nahein hai aay roz is tareh ke waqiat ronma hote rehte hein or us ke baad mulziman ko bartaref karne ka daawa kiya jata hai jo haqiqat mein siref muashre or sammaj ko waqti tor pe dekhane keliye hota hai or baad mein ye log sare aam aazad dandanate phirte hein ramazanul muqaddis ke mahine mein is tareh ka mujarimana ammil humare liye lammah-e-fiqriya hai sawaal ye paida hota hai ke jin logon ko hakoomate waqat ne awam ki hafazat par maamur kar rakha hai wohi log maasum awam ki
    ezzat par daaka daal rehe hein to bechare awam kis se insaf ki bheek mangein.
    Aap ke tawast se mein janab chif justice of pakistan janab iftekhar muhammad chouhdri se appeil karta houn ke khud ra is maasum qaum ki beti ko filfor insaf dilaaya jay or
    mulziman ko qarar waaqey saza de kar kifare qardar tak pohnchaaya jay aaj agar in ko waaqey saza di gay to
    umid karte hein ke aainda is tareh ke waaqiyat ki rok
    thaam mein khater khuwa kami aay gey.

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker