تازہ ترینضیغم وارکالم

غیروں میں جا نےسے بہتر اپنے ہیں جناب

کچھ عجیب ہی ہو رہا ہے ، بلکے عجیب تر ہو رہا ہے ، اپو ز یشن جما عتیں حیران پر یشان ہیں ، الیکشن کے بعد خاں صا حب کی ہر تقر یر عوام کے دلوں میں گھر کر تی جا رہی ہے ، اب ان کا کا روبا ر کیسے چلے گا ، خاں صا حب کو بھی اچھے سے اندازہ ہے با ئیس سال کو شا ں رہے ہیں ،اب عوام کی امید یں تو ڑیں گے کیسے ، مشکلا ت تو آ تی ہیں ،اور بہت زیا دہ آ ئیں گئیں ، شا عر نے کہا تھا ۔۔۔
ادا سو چو تو خو شبو کا سفر آ سا ن نہیں ہو تا
رواج رہاہے کہ ہر آ نے والی حکومت اس بات کو رونا روتی ہے کہ جا نے والے خز انہ خا لی کر کے گے ہیں ، اب ہم کو وقت لگے گا اور صو رت حا ل سے نمٹنے کے لیے قر ضے لینا مجبو ری ہو چکا ہے ، خاں صا حب جب اپو ز یشن میں تھے ،دبنگ انداز میں عوام کو بتا تے رہے ہیں کہ ن لیگ کی حکومت دعو ے کر رہی ہے کہ ملک تر قی کی رہ پر گا مزن ہے اور ملک کا وقا ر بلند ہو رہا ہے مگر صو رت حال مختلف ہے ،دوسر ی جا نب خاں صا حب نے کیس کی پیر وی ایسی کی کہ ن لیگ کے قا ئد جیل جا پہنچے ہیں ، اب خاں صا حب حکو مت میں ہیں ،کچھ دنوں میں تین چا ر با ر تقر یر یں کر چکے ہیں ، اور ہر تقر یر اور خاں صا حب کے اظہا ر خیا لات کو بہت چر چا ملا ، دشمن کی صفت سے بھی تعر یفی الفا ظ ادا ہو تے آ ئے ہیں ، خا ں صا حب رونے دھو نے کی بجا ئے ایک بات پر عوام کا فو کس کر وا رہے ہیں کہ ملک میں مسا ئل بہت سے ہیں ، مگر ہم مسا ئل کی جڑ کر پشن کو ختم کر یں گے اور جو کرپٹ ہے اس کو قا نون کے مطا بق سزا ء دلو ائیں گے ، بڑ ے بڑے پر وجیکٹ کا اعلا ن نہیں کیا گیا ، اور نہ ہی جو ش خطا بت میں اعلان کر دیا جائے کہ کچھ ما ہ میں لو ڈ شیڈ نگ کا خا تمہ ہو جا ئے گا اور دودھ کی نہر یں نکلیں گئیں ، خاں صا حب نے ثا بت کیا کہ وہ یو رپ اور با قی تر قی یا فتہ ممالک میں گھو متے پھر تے رہیں تو وہاں جیسے اگلی نسل کے لیے سو چا جا تا ہے اور اقدا ما ت کیے جا تے ہیں ، ایسی ہی پا لیسیاں ہما رے ہا ں بنا ئی جا ئیں اورا قداما ت اٹھا ئے جا ئیں ، شجر کا ری مہم کا آ غا ز کیا گیا ، ما حول کو صا ف رکھنے کیلے زیا دہ درختوں کا ہو نا ضر وری ہے ، پچھلی حکو مت میں درخت کا ٹے گے ہیں یا ان کے نما ئند ے صر ف خاں صا حب کے صو بے میں درخت گنتے رہے ہیں ، اب خاں صا حب کو دیکھتے دیکھتے پو رے پا کستان میں شجر کا ری کی مہم میں جو ش جذ بہ دیکھنے کو ملا ہے ، دنیا کے سمجھدار لو گ کہہ چکے ہیں اب اقوام کے درمیان پا نی کے ایشو پر جنگیں ہو ں گئیں ، بھا رت کے عزائم اور اس کے ایمر جنسی کے اقداما ت کچھ ایسے ہی ہیں کہ وہ ڈیموں پر فو کس کر رہا ہے اور وہ چا ہے گا کہ پا کستان با قی مسا ئل میں مبتلا رہے اور پا کستانی زمین بنجر بن جا ئے ،کیو نکہ کئی سالوں سے ایک ڈیم بھی نہیں بنا یا گیا تا کہ پا نی کو محفو ظ کیا جا سکے اور اس کے استعما ل سے کسا نوں کو فا ئد ہ پہنچے ، ہما ری پچھلی حکو مت کی تر جیحا ت کو دیکھتے ہو ئے بھا رت یہ کہتے اب نہیں تھکتا کہ ہم پا کستان کے لیے ایسی صو رت حا ل بنا دیں گے کہ یہ پا نی کی ایک ایک بو ند کو تر سے گا ، ہما ری ما ضی کی حکو متیں ملک کو تر قی کی رہ پر گا مزن کر تی آ ئی ہیں ، مگر اب عوام کے لیے سوچ کا مقام ہے کہ ہما را دشمن ہما ری تبا ہی کا انتظا ر کر رہا اور ہما رے لیڈ ر کہتے تھے ہم بہت تر قی کر رہے ہیں ، خاں صا حب نے ڈیم کے ایشو کو اہمیت دی اور جب خزا نے کی صو رت حا ل دیکھی اور بیرون ممالک سے قر ضے بھی نہ لیے جا ئیں تو عوام سے اپیل کی کہ بڑا ڈیم بنا نے کے لیے تما م پا کستان اپنی طاقت کے مطا بق فنڈز جمع کر وائیں، اوور سیز پا کستانیوں سے خاص طو ر پر اپیل کی گئی ، اس اپیل کے کچھ گھنٹے بھی نہیں گز رے تو پو ری دنیا میں جہاں بھی پا کستانی آ با د ہیں انہوں نے اس فنڈ ز جمع کر نے کے ایشو کو بہت سنجید گی کے سا تھ لیا اور اب تک کئی ہزار لاکھ روپے ڈیم کے لیے جمع کر وا چکے ہیں، یہ وہی اوور سیز ہیں جن کو طعنہ دیا جا تا ہے کہ یہ اپنے وطن میں محنت نہیں کر تے اور دوسر ے ملکوں میں جا کر مز دوری کر نے کو تر جیح دیتے ہیں ، ہر با ر کی طر ح اب بھی ڈیم کے لیے اوور سیز پا کستا نی دل کھول کر مالی امداد کر رہے ہیں ۔
خاں صا حب کی اپیل کے بعد اپو زیشن جما عتوں کی طر ف سے یہ کہا جا رہا ہے کہ ملک چندہ جمع کر نے سے نہیں چلا کر تا ،بلکے بہتر پا لیسی بنا ئی جا ئیں تب ملک کھڑا ہو گا، تو جنا ب چندہ تو اپنوں سے جمع کر نے کی اپیل کی گئی ہے ،کسی غیر کے آ گے کشکو ل نہیں رکھا گیا ، آ پ تو قر ضے لے کر گزارہ کر تے رہے ہیں اور صرف کر پشن کی گئی ، اب وہ قر ضے واپس تو اس عوام نے کر نے ہیں ، جو بھی کا م کیا جا ئے تو اس کے پیچھے ماضی کی ہسٹر ی دیکھی جا تی ہے ،ما ضی میں خاں صا حب کی اپیل پر ہسپتال کے لیے لو گوں نے اربوں روپے دیے پھر یو نی ور سٹی کے لیے فنڈز اکھٹے کیے گے ، عوام کے اعتما د میں کمی نہیں آئی ، خاں صا حب اس با ت کو با خو بی جا نتے ہیں کہ پا کستانی عوام ان کی اس طر ح کی اپیل پر کیسے ایکشن دکھا تی ہے ، اپو زیشن جما عتیں سیا ست تو کر یں گئیں ، مگر ان کو جان لینا چا ہیے کہ عام عوام ان کے بیانا ت کو ا ب نہیں تو جہ دیتی بلکے عام عوام اب ایک دوسرے سے یہ کہتے پھر تے ہیں کہ خاں صا حب اگر بقول ان سیا ست دانوں کے چندہ ہی اکٹھا کر رہے ہیں تو جو ڈیم بنے گا اس میں ہما ری آ نے والی نسلوں کا مستقبل ہی محفو ظ ہو گا، خاں صا حب ہما ری آ نے والی نسلوں کی پر یشا نی کو دیکھ کر اقدامات کر رہے ہیں تو ان کا سا تھ کیو ں کر نہیں دیا جا ئے، عوام میں بہت شعو ر آ چکا ہے ،عوام سوال کر تی ہے کہ ن لیگ نے جب قر ض اتا رو ملک سنوار کے نام پیسے کھا ئے اور ملک کے قر ضے بڑ ھتے گے اب وہ خاں صا حب کو چند ہ اکٹھا کر نے کا طعنہ دے رہے ہیں ، اسی سا ری صو رت حال میں سیا ست دانوں کو اس با ت کو سمجھ لینا چا ہیے کہ عوام کی سپو رٹ اس سیا سی جما عت کی جانب ہو گئی جو اصل معنوں میں ملک قوم کے مستقبل کی بات کر ئے گی اور اس کے لیے عملی اقدات کر ئے گی ، کچھ عجیب ہی ہو رہا ہے ، بلکے عجیب تر ہو رہا ہے ، اپو ز یشن جما عتیں حیران پر یشان ہیں ، الیکشن کے بعد خاں صا حب کی ہر تقر یر عوام کے دلوں میں گھر کر تی جا رہی ہے ، اب ان کا کا روبا ر کیسے چلے گا ، خاں صا حب کو بھی اچھے سے اندازہ ہے با ئیس سال کو شا ں رہے ہیں ،اب عوام کی امید یں تو ڑیں گے کیسے ، مشکلا ت تو آ تی ہیں ،اور بہت زیا دہ آ ئیں گئیں ، شا عر نے کہا تھا ۔۔۔
ادا سو چو تو خو شبو کا سفر آ سا ن نہیں ہو تا

یہ بھی پڑھیں  ورلڈکپ:آسٹریلیا نے اسکاٹ لینڈ کو 7 وکٹوں سے ہرا دیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker