تازہ ترینعلاقائی

میاں برادران اور ان کے وزراءجہاں جائیں گے ’’گو نواز گو‘‘ کے نعرے ان کا پیچھا کرتے رہیں گے: غلام سرور خان

ٹیکسلا(ڈاکٹر سید صابر علی سے)تحریک انصاف کے کور کمیٹی کے ممبر و رکن قومی اسمبلی غلام سرور خان نے کہا کہ پورے پاکستا ن سمیت دنیا کے ہر حصے میں جہاں جہاں میاں برادران اور ان کے وزراء جائیں گے ’’گو نواز گو‘‘ کے نعرے ان کا پیچھا کرتے رہیں گے ،اب پوری قوم حقیقت میں بیدار ہو چکی ہے، نااہل اور کرپٹ حکمرانوں نے ملکی معیشت کا بیٹرہ غرق کر دیا ہے اور عالمی برادری میں پاکستان کو تنہا کر دیا ہے اور ہر جگہ ملک کی جگ ہنسائی ہو رہی ہے،اگر تحریک انصاف دھرنے نہ دیتی تو آج حکمران آئی ایم ایف کی تمام شرائط پوری کر چکے ہوتے اور پوری قوم کو ان کے ہاتھوں بیچ چکے ہوتے۔ آج دھرنوں کی وجہ سے عوام پر ملازمتوں کے دروازے کھولے جا رہے ہیں، تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے عوام میں اپنے حقوق کی جنگ لڑنے کا شعور دے بیدار کیاہے ، اب تبدیلی آچکی ہے، آن دی ریکاڈ بات ہے کہ جب میں وفاقی وزیر تھا تو نہ تو میں نے پولیس کا پروٹوکول لیا او ر نہ ہی منسٹر کالونی میں گھر لیا، میں نے اپنے پرٹوکول کے لئے دیئے گئے پولیس والوں کو یہ کہہ کو واپس بھیج دیا کہ وہ جائیں اور عوام کی حفاظت کرنے کی ڈیوٹی سرانجام دیں،ظالم و جابر حکمرانوں نے صرف ایک دن میں بجلی کے بلوں کی مد میں ان بین الاقوامی ڈکیتوں نے 70 ارب کا ڈاکہ عوام کی جیب پر ڈالا اور اب کوئی بھی ادارہ اپنے آپ پر ذمہ داری کو لینے کے لئے تیار نہیں اور ایک دوسرے پر ذمہ داری ڈالنے کی کوشش کر رہے ہیں، نندی پور جیسا ناکام پروجیکٹ جس کا عوام کو کوئی فائدہ نہیں ہواجو کہ 10 ارب سے شروع ہوا مگر اب یہ بھی 84 ارب تک پہنچ چکا ہے، انھوں نے ملکی اثاثوں کا بیڑہ غرق کر دیا ہے ،کرپٹ حکمرانوں کے جانے سے ملک میں جمہوریت کو کوئی بھی خطرہ نہیں ہے ، بھارت میں تامل ناڈو کی سابق وزیر اعلیٰ جے لیلتاء کو کرپشن کے الزام میں چار سال کی سزا اور بھاری جرمانے کی سزا ہوئی تو کیا بھارت میں جمہوریت ڈیل ریل ہو گئی؟ تمام سیاسی جماعتوں کے قائدین سمیت بشمول مسلم لیگ(ن) سندھ کے صوبائی صدر سید غوث علی شاہ چیننخ چینخ کر کہہ رہے ہیں کہ دھاندلی ہوئی ہے اور آصف علی زرداری نے تو یہاں تک کہہ دیا کہ یہ الیکشن این آر اوز کے الیکشن تھے اور دھاندلی نہیں بلکہ تاریخی دھاندلہ ہوا ہے، پھر اس کے بعد الیکشن کی کیا آئینی حیثیت رہ جاتی ہے، الیکشن کمیشن کے پاس 3 کروڑ غیر استعمال شدہ بیلٹ پیپرز کا ریکارڈ ہی موجود نہیں بیلٹ پیپرز سرکاری تھیلوں کے بجائے کھاد اور آٹے کا تھیلوں میں لائے گئے ،اب تک جتنے حلقے بھی کھولے گئے ان سب میں دو نمبری ثابت ہو گئی ہے،پھر اوپر سے الیکشن کمیشن کا یہ بیان کہ وہ 100 فیصد الیکشن شفاف نہیں کرواسکتے تو پھر وہ بتائیں کے ان کے ملازمین کروڑوں روپوں کی تنخوائیں کس بات کی لیتے ہیں جو کہ ان کو عوام کے خون پسینے کی کمائی اور ٹیکسوں سے ادا کی جاتی ہے،ان سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انھوں نے کہا کہ مسلم لیگ(ن) کے وزراء بڑی ڈھٹائی سے کہتے ہیں کہ انھوں نے دھرنے والوں کو آزادی دے رکھی ہے اور ان کے خلاف وہ بہت کچھ کر سکتے ہیں مگر انھوں نے ابھی تک کچھ بھی نہیں کیا تو پھر ان سے پوچھا جائے کہ میاں برادران اور ان کے وزراء کے خلاف قتل کے سچے مقدمے عدالت کے حکم پر کس طرح درج ہو گئے،میاں برادران اور ان کے وزراء کے ہاتھ بے گناہ اور معصوم لوگوں کے خون سے رنگے ہوئے ہیں، انشاء اللہ ان کو ان کے کئے کی سزا ضرور ملے گی اور مظلوم اور بے گناہ شہیدوں کا خون رنگ لائے گا۔

یہ بھی پڑھیں  ٹیکسلا:مدنی مسجدمحلہ مدنی ٹھٹہ روڈپر سیوریج کی نکاسی آب کا نالہ مکینوں کے لئے وبال جان بن گیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker