شہ سرخیاں
بنیادی صفحہ / تازہ ترین / گوروں کے دیس میں دنیائے کرکٹ کا سب سے بڑے میلہ کا آغاز

گوروں کے دیس میں دنیائے کرکٹ کا سب سے بڑے میلہ کا آغاز

دنیائے کرکٹ کا سب سے میگا اور 12واں ایونٹ جنوبی لندن کے ضلعی مقام اوول کے کرکٹ سٹیڈیم میں اور میزبان ملک انگلینڈ اور جنوبی افریقہ کے درمیان ٹکراؤ سے آج شرو ع ہو گا انتظار کی گھڑیاں ختم، ایک روز قبل ویسٹ منسٹر لندن میں ورلڈ کپ کی پروقار اور شاندار افتتاحی تقریب منعقد ہوئی جس میں تمام ٹیموں کے کھلاڑیوں اور 4 سو مہمانوں نے شرکت کی افتتاحی تقریب کو دنیا بھر میں براہ راست نشر کیا گیا،آئی سی سی نے اس ورلڈکپ کو سب سے بڑا جشن قرار دیا ہے، دنیا بھر میں کرکٹ کا بخار سر چڑھ کر بول رہا ہے کرکٹ کے شیدائی طویل عرصہ سے عالمی کپ میں دنیا کے بہترین اسٹارز کو ان ایکشن دیکھنے کے لئے بے چین اور بے تاب تھے ورلڈ کپ میں جہاں چوکوں چھکوں کی برسات ہو گی وہیں بہترین باؤلنگ،بہترین فیلڈنگ،ناقابل یقین کیچ،ریکارڈ پر ریکارڈ اورمیچوں میں لمحہ بہ لمحہ بدلتی صورتحال اور سنسی خیزی عروج پرہو گی،کرکٹ کا کھیل دنیا بھر میں اپنی مقبولیت کا لوہا منوا چکا ہے یہ دنیا بھر میں واحد کھیلوں کا ایونٹ ہے جس کے ہر میچ کے دوران کئی ممالک میں تمام سرگرمیاں ختم اور سڑکیں سنسان ہو جاتی ہیں،عالمی کپ میں شریک تمام ٹیمیں ٹائٹل کے لئے جان لڑانے کو تیار ہیں ورلڈ کپ ٹرافی کی تقریب رونمائی کے دوران پاکستانی کپتان سرفرز احمد نے کہاانگلینڈ سیریز سے بہت کچھ سیکھا محمد عامر اور وہاب ریاض کی شمولیت سے باؤلنگ مسائل کم ہو گئے جیت کے لئے پر امید ہیں،انگلش کپتان نے کہایہ ٹورنامنٹ بہت مسابقتی ہے کسی کی قوت (ویرات کوہلی)کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ہر ٹیم سے مقابلے کے لئے تیار ہیں،کنگرو ز کپتان نے کہاڈیوڈ وارنر اور اسمتھ کی واپسی سے ٹیم متوازن ہو گئی اعزازکا بھر پور دفاع کریں گے،بنگلہ دیشی کپتان نے کہاٹیم میں جونئیرزاور سینرز کا حسین امتزاج ہے،جنوبی افریقہ کے کپتان بولا ہم بولنگ کے وسائل سے مالا مال ہیں اس بار تاریخ رقم کریں گے،ویسٹ انڈیز کپتان نے کہاکم از کم چھ میچوں میں بہترین کارکردگی دکھانا ضروری ہے،سری لنکن کپتان نے کہاسفر مشکل ہے مگر کھلاڑی پر عزم ہیں،کیویز کپتان نے کہانوجوان کھلاڑیوں کے امتزاج سے اسکواڈ متوازن ہے،افغان کپتان نے کہاایک بڑے پلیٹ فارم پر موقع ملنا ہی بڑے فخر اور اعزاز کی بات ہے عمدہ کھیل پیش کریں گے،ہیڈ کوچ مکی آرتھر نے کہاپاکستان ریورس سوئنگ سے حریفوں پر قابو پائیں گے انگلینڈ کا موسم ہمارے لئے سازگار ہے، سابق سٹار کلائیو لارڈ نے کہایہ ورلڈ کپ آل راؤنڈرز کا ہو گا،ورلڈ کپ کی تاریخ میں ویسٹ انڈیز سے پہلے دو ٹائٹل جیتے بعد میں صرف ایک دفعہ فائنل تک رسائی حاصل کی،میزبان ٹیم اورجنوبی افریقہ بڑی ٹیموں میں واحد بد قسمت ٹیمیں ہیں جو ہارٹ فیورٹ ہونے کے باوجود ٹائٹل حاصل کرنے میں ناکام رہیں جنوبی افریقہ کو تو ایک بار بھی فائنل تک رسائی نہیں ملی،مسلسل تین مرتبہ وزڈن کرکٹر کے منفرد اعزاز یافتہ ویرات کوہلی جو ٹیسٹ اور ون ڈے عالمی رینکنگ میں پہلے نمبر پر ہیں نے کہاپاک بھارت میچ بھی ہمارے لئے عام میچوں کی طرح ہی ہو گا،16جو ن کو ہونے والے اس ٹاکرے کو ورلڈ کپ کا سب سے بڑا اور اہم ٹاکراقرار دیا جا رہا ہے، جس کی سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے صرف25ہزار گنجائش کا حامل سٹیڈیم جبکہ 5لاکھ جبکہ ٹورنامنٹ کے لئے مجموعی طور پر30لاکھ افراد نے ٹکٹوں کے حصول کی کوشش کی،پاکستانی ٹیم پر آسٹریلیا کے بعد اور انگلینڈ سیریز سے وائٹ واش ہونے کئی سوالات نے جنم لیامگر پھربھی ٹیم پر عزم ہے گنگولی
سمیت کئی ماہرین نے پاکستان کو ہارٹ فیورٹ میں چوتھا نمبر دیا ہے،بابر اعظم،فخر زمان اور امام الحق کو جارحانہ کھیل اپنانا ہو گا،شعیب ملک اور محمد حفیظ کا تجربہ بھی انتہائی کارآرمد ثابت ہوگا،حسن علی،وہاب ریاض اورمحمد عامر کی وجہ سے پاکستان1992کی تاریخ دہرا سکتا ہے البتہ ناقص فیلڈنگ پر قابو ازحد ضروری ہے، ICCنے اس میگا ایونٹ کے لئے10کروڑ ڈالر کی خطیرانعامی رقم مختص کی ہے فاتح ٹیم 40لاکھ ڈالر،رنز اپ ٹیم20لاکھ ڈالر،سیمی فائنل تک رسائی کرنے والی چاروں ٹیموں کو 8۔8لاکھ ڈالرز،باقی 6ٹیموں کو فی کس 1۔1لاکھ ڈالر جبکہ ہر میچ کی فاتح ٹیم کو40ہزار ڈالر دئیے جائیں گے مین آف دی میچ،مین آف دی ٹورنامنٹ،بہترین بیٹسمین،باؤلر،فیلڈر کو اعزازت سے نوازا جائے گا، انگلینڈ پانچویں بار ورلڈ کپ کی میزبانی کر رہا ہے تمام میچز اس کے10 شہروں کے 11سٹیڈیمز میں منعقد ہوں گے،ابتدائی اور فائنل میچ لندن کے اوول اور لارڈ زگراؤنڈز میں کھیلے جائیں گے،گذشتہ ورلڈ کپ میں 15ٹیموں کو پول Aاور پولBمیں رکھا گیا مگر اس بار ورلڈ کپ میں دنیا کی پہلی دس بہترین ٹیموں کو شامل کر کے ایک ہی گروپ بنایا گیا،پہلی بار پہلی 8ٹیموں کے علاوہ کوالیفائیر راؤنڈ کے بعد دو ٹیموں ویسٹ انڈیز اور افغانستان کو شامل کیا گیا افغان ٹیم کی یہ لگا تار دوسری شرکت ہے،ہر ٹیم سیمی فائنل سے قبل مجموعی طور پر9۔9میچز میں ایک دوسرے سے نبرد آزما ہوں اور لیگ میچوں میں ایک ٹیم کا دوسری سے صرف ایک بار ہی ٹاکرا ہو گا،45میہچوں بعد پہلی چار ٹیمیں سیمی فائنل اور دو فائنل کھیلیں گی آسٹریلیا اپنے اعزاز کا دفاع کر پائے گا یا نہیں یہ وقت بتا ئے گا،لندن میں سیمی فائنل اور فائنل سمیت 10جبکہ برمنگھم میں سیمی فائنل سمیت 5،برسٹل 3،کارڈیف4،جیری سٹریٹ3،لیڈز 4،مانچسٹرمیں 6،ناٹنگھم 5،ٹرینٹ برج5اور ولٹن سومر سیٹ میں 3میچزہوں گے،تمام گراؤنڈز میں ولٹن سومر سویٹ سب سے چھوٹا12500(گنجائش)سب سے بڑا تاریخی گراؤنڈ لارڈزجہاں شائقین کے کی گنجائش28ہزار ہے،میگا ایونٹ کے دوران کسی قسم کی اسپاٹ فکسنگ کی روک تھام پر خصوصی اقدامات کے تحت ہر ٹیم کے ساتھ پہلی بارانٹی کرپشن افسران تعینات اور تمام میچوں کی نگرانی دو تفتیش کار ایک اینا لسٹ کی معانت سے کریں گے انٹی کرپشن یونٹ کے جنرل مینجرایلکس مارشل کے مطابق بد عنوانی کی خواہش رکھنے والوں اس بار سخت مشکل پیش آئے گی،اسپاٹ فکسرز کو انگلینڈ داخلے پر وارننگ جاری کی گئی ہے،اس بارہارٹ فیورٹ میں انگلینڈ،جنوبی افریقہ اور نیوزی لینڈان کے بعد انڈیا کا نام لیا جا رہا ہے،انڈیا کے پاس بیٹنگ اور باؤلنگ کے حوالے سے عالمی رینکنگ کے پہلے اسٹارز کرکٹ ویرات کوہلی اور جسپریٹ بمرا بہت پر امید ہیں،جسپریت بمرا کو ماہرین نے اس ایونٹ کا سب سے خطرناک باؤلر قرار دے رکھا ہے،بیٹسمین کی رینکنگ میں بابر اعظم 7ویں اورفخر زمان9نویں نمبر پپر ہے باؤلنگ میں ایک بھی پاکستانی ٹاپ ٹین میں نہیں البتہ افغانستان کے دو باؤلر راشد خان اور مجیب زردان شامل ہیں،انگلینڈ کے کپتان221میچوں کا تجربہ رکھنے والے 32سالہ آئن مورگن12سینچریاں اور45ففٹیاں اور بہتر انفرادی سکور124ہے اسی طرح انڈیا کے 30سالہ رویت کوہلی 227میچز،41سینچریاں 49ففٹیاں انفرادی 183،نیوزی لینڈکے 28سالہ کپتان کین ولیمسن139میچ،11سینچریاں 37ففٹیاں انفرادی 145کے علاوہ25وکٹیں حاصل کر چکے ہیں،آسٹریلیا کے 32سالہ ایرون فینچ109میچ،13سینچری،21بار ففٹی اور انفرادی بہتر سکور153،پاکستان کے 32سالہ سرفراز احمد106میچز،2بار سینچری 10بار ففٹی انفرادی بہتر 105ہے،بنگلہ دیش ٹیم کی قیادت35سالہ مشرفی مرتضیٰ209میچز میں 3ففٹی اور 265وکٹیں جن کی بہترین باؤلنگ6/26ہے،ویسٹ انڈیز کے27سالہ جیسن ہولڈر93میچز میں 8بار ففٹی سکور بنا چکے ہیں اور سینچری بنانے سے 99رنز بنا کر محروم رہے،سری لنکن 31سالہ ڈیمتھ کرونا رتنے18میچز،2ففٹی اور2وکٹ بھی رکھتے ہیں،افغانستان کے28سالہ گلبدین نائب 56میچوں کا تجربہ رکھتے ہیں بار ففٹی کی اور50وکٹ حاصل کیں،تمام ٹیموں کے کپتانوں میں 2آل راؤنڈر،ایک باؤلر،6بیٹسمین اور ایک وکٹ کیپر بیٹسمین ہے،تین کپتانوں کی عمر32۔32سال ہے اور سب سے کم عمر ویسٹ انڈیز کے کپتان جبکہ سب سے کم میچ کھیلنے والے سری لنکن کپتان ہیں،ویرات کوہلی اس میگا ایونٹ میں 10ہزار سے زائد رنز بنانے والے واحد بیٹسمین ہیں، ورلڈ کپ میں ہائی اسکورنگ کی وجہ سے پہلی بار500رنز کے سکور کارڈز تیار ہیں یہ ہدف کون سی ٹیم حاصل کرتی ہے وقت بتائے گا مگر انگلینڈ بہت پر امید ہے،ایونٹ کے لئے خاص طور پر بیٹنگ وکٹوں پر توجہ دی گئی،انگلینڈ اینڈ ویلز میں ہونے والے مقابلے پہلی باردنیا بھر کے 200ممالک اور خطوں میں براہ راست نشر اور بھارت،متحدہ عرب امارات اور بحرین کے سینما گھروں میں دکھائے جائیں گے،،ICCکے مقابلوں کے نشریاتی حقوق عالمی نشریاتی ادارے سٹار سپورٹس سمیت مختلف ممالک کے دیگر25نشریاتی اداروں کو حاصل ہیں،پاکستان میں PTVاور ٹین سپورٹس میچ پر میچ دیکھے جا سکے گے،اسٹار سپورٹس نے کمنٹری اور ماہرانہ تبصروں پر 50بہترین کرکٹ مبصرین کی خدمات حاصل کی ہیں یہ عمل مختلف زبانوں میں ہو گا،انڈیا میں سات علاقائی زبانوں ہندی،تامل،تلگیدا،کناڈا،بنگلہ اور مراٹھی میں تبصرے اور کمنٹری ہو گی،اندازے کے مطابق تقریبا ً30کروڑ افراداسٹار سپورٹس،ہارٹ سپورٹس پر دیکھ پائیں گے200ممالک میں 12ڈیجیٹل پلیٹ فارم پر میچ کے ہر گھنٹے کی چھ چھ منٹ بعد کوریج دستیاب ہو گی،ان براہ راست نشریات کا مجموعی وقت14ارب گھنٹے ہو گا،24رکنی کمنٹیٹرز میں پاکستان کے وسیم اکرم اور رمیض راجہ جبکہ آسٹریلیا کی1۔ میل جونز انگلینڈ کی دوخواتین کمنٹیٹرزایسا کوبا اور ایلسین مچل بھی شامل ہیں،ورلڈ کپ کی کوریج پہلی بار پاکستانی خاتون رپورٹرزینب عباس شامل ہیں،آفیشلز میں 200میچوں میں ایمپائرنگ کے فرائض ادا کرنے والے دنیا کے تیسرے ایمپائرعلیم ڈار بھی شامل ہیں علیم ڈار مسلسل پانچویں مرتبہ ورلڈ کپ پینل میں شامل ہیں،پاکستان اپنا پہلا میچ 31مئی کو ویسٹ انڈیز کے خلاف کھیلے گا ویسٹ انڈیز نے وارم اپ میچ میں مضبوط ٹیم نیوزی لینڈ کے خلاف 421پہاڑ جیسا مجموعہ کھڑا کر کے سب کو حیرت میں ڈال دیا ہے اس ٹیم میں 5تیز رفتار باؤلر شامل ہیں،جبکہ 3 جون کو انگلینڈ،7کو سری لنکا،12کو آسٹریلیا،16کو انڈیا،23کو جنوبی افریقہ،26کو نیوزی لینڈ،29کوافغانستان اور آخری لیگ میچ5جولائی کو بنگلہ دیش کے خلاف کھیلے گا،پہلا سیمی فائنل9دوسرا 11اور فائنل 14جولائی کولارڈز گراؤنڈ لندن میں کھیلا جائے گا،افغان ٹیم کو انڈین کمپنی امول اسپانسر کر رہی ہے،سینئرز کی تنقید کے باوجودٹیم کی قیادت گلبدین نائب کو قیادت سونپی گئی،جنوبی افریقہ کی ٹیم میں انتہائی خراب کارکردگی کے باجود محض تجربہ کی بنیاد پر ہاشم آملہ ٹیم کا حصہ اور حیران کن طور پرآل راؤنڈرکرس مورس کو باہر کر دیا گیاان کے فاست باؤلر ڈین سینئن کندھے میں انجری کے باعث افتتاحی میچ سے باہر ہو گئے ہیں اسی طرح ویسٹ انڈیز کی ٹیم میں آندرے رسل کی واپسی بھی حیران کن ہے جو3سال ٹیم کا حصہ نہ رہے،سری لنکا اسکواڈ سابق کپتان بلے بازدنیش چندیمل اور اپل تھارنگا ڈراپ اور ملنگا کو ہٹا کر دیمتھ کرونارتنے کو قیادت سونپی گئی،انگلینڈ میں توقع کے برعکس جومزا آچر کو شامل نہیں کیا گیا،بنگال ٹائیگرزنوجوان باؤلرابوزاید کو شامل کیا گیا جو ڈیبیو کریں گے،بھارتی ٹیم میں رمیشابھ پائٹ اور امیتی رائیڈومضبوط امیدوار تھے مگرڈراپ،آسٹریلیا ے دو اسپنرز ایڈم زامپا ر نیتھن لایون کو شامل کیا ہے،نیوزی لینڈ کی ٹیم میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی،شاہینوں میں وہاب ریاض اور محمد عامر کی واپسی مثبت، جنید خان کو آخری لمحات میں ٹیم سے نکالا گیاسرفراز احمد،شیعب ملک،محمد حفیظ اور حارث سہیل کے علاوہ محمد عامر سمیت تمام کھلاڑی پہلی بار ورلڈ کپ اسکواڈ کا حصہ بنے ہیں محمد عامر کو 10سال کرکٹ کھیلنے کے باوجود موقع نہیں ملا تھا،تمام ٹیمیں متواز ن اور ہر طرح ے مقابلے کے لئے پر عزم اور بے قرار ہیں،پاکستانی ٹیم کمسلسل دو سیزیز میں شکست کے باوجود پر عزم ہے یہ دنیا کی یہ واحد ٹیم ہے جو کچھ بھی کر گذرنے کی صلاحیت رکھتی ہے تاریخ میں شاہین جب بھی زخمی ہوئے بعد میں حیرت انگیز کارکردگی سے سب کے منہ بند کر دئیے،کامیابی کے لئے پوری قوم کی دعائیں ان کے ساتھ ہیں۔ICC نے T20ورلڈ کپ اکتوبر2020سے ایک ماہ قبل کستان میں T20ایشیا کپ انعقاد کی منظوری دے دہ ہے جو بہت خوش آئند بات ہے،

یہ بھی پڑھیں  ون پاؤنڈ فش مین پتوکی کے شاہد نذرٹیلی شو کےلئےفرانس روانہ

error: Content is Protected!!