تازہ ترینعلاقائی

بھائی پھیرو: نیم حکیم اورعطائی ڈاکٹر سادہ لوح لوگوں کو لوٹ رہے ہیں۔

بھائی پھیرو﴿نامہ نگار﴾بھائی پھیرو و گردونواح میں عطائی ڈاکٹر اور اپنے آپ کو رجسٹرڈ حکیم ظاہر کرنے والوں نے سادہ لوح لوگوں کی زندگیوں سے کھیلنا شروع کردیا۔ان نیم حکیموں و عطائی ڈاکٹروں سے علاج کروانے والے متعدد مریض اپاہج جبکہ بیشتر موت کی وادی میں پہنچ چکے ہیں ۔محکمہ صحت و مقامی انتظامیہ نے نوٹوں کی چمک کی وجہ سے آنکھوں پر سیاہ پٹی باندھ کر موت کے سوداگروں کو کھلی چھٹی دے دی۔علاقہ بھر کے لوگوں کا عطائی ڈاکٹروں و نیم حکیموں کے خلاف شدید احتجاج ۔اعلیٰ حکام سے فوری طور پر نوٹس لینے کا مطالبہ ۔ہمارے نمائندے کی سروے رپورٹ کے مطابق بھائی پھیرو و گرد و نواح میں اس وقت دو درجن سے زائد عطائی ڈاکٹرو نیم حکیم جو اپنے آپ کو حکومت پاکستان کا رجسٹرڈ ظاہر کرکے سادہ لوح لوگوں اور مجبور مل مزدوروں کو مختلف سبز باغ دکھا کردوائی دیتے ہیں اور ان سے ہزاروں روپے بٹورکر ہمیشہ، ہمیشہ کیلئے مردانہ صفات سے محروم کردیتے ہیںیہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ بیرون اڈاہ پر واقع ایک نیم حکیم کی دوائی کھانے سے بھائی پھیروبائی پاس کا رہائشی غریب محنت کش اپنے گردوں سے ہاتھ دھو بیٹھا ہے جبکہ متعدد عطائی ڈاکٹروں کے پاس میٹرک کی سند تک نہیں ہے مگر وہ محکمہ صحت کے عملہ کی ملی بھگت سے ہزاروں روپے رشوت دیکر کیٹیگریز حاصل کرکے اور ڈرگ انسپکٹر کے ایجنٹ بن کر ایک عرصہ سے اس مذموم دھندے میں مصروف ہیں بلکہ بعض عطائیوں نے تو اپنے کلینکوں کے باہر بڑے،بڑے بورڈ آویزاں کر رکھے ہیں جن پر پروفیسر و ایم بی بی ایس ڈاکٹروں کے نام لکھے ہوئے ہیں اور دو نمبر سے لیکر چار نمبر تک کی ادویات دھڑلے سے فروخت کرکے لاکھوں روپے کی جائیدادیں بنا کر اپنی زندگیا ںبسر کررہے ہیں مقامی عوامی وسماجی حلقوں نے گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ پنجاب سے اصلاح احوال کا مطالبہ کیا ہے

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker