تازہ ترینرفاقت حسینکالم

حق خطیب بادشاہ دکھی انسا نیت کی خدمت میں مصروف

آج ہم ایک ایسی ہستی کاذکرکریں گے جوزندہ سلامت قلندرحق خطیب حسین علی بادشاہ بلاوڑہ شریف تحصیل کوٹلی ستیاں راولپنڈی کی مشہور معروف شخصیت نامی گرامی قلندرہیں یہ ایک ایسی شخصیت ہیں جن کے فیض عالم سے روزانہ لاکھوں افراد فیض یاب ہوتے ہیں ان شخصیت کابڑااستانہ بلاوڑہ شریف کوٹلی ستیاں ہے جہاں پردوردورسے اندرون اوربیرون ملک سے افراد آکر حاضری دیتے ہیں اورفیض یاب بھی ہوتے ہیں یہ استانہ بلاوڑہ شریف پہاڑی کی چوٹی پر ہے اورملوٹ ستیاں آزادکشمیر کی تمام آبادی یہاں سے نظرآتی ہے۔جوافرادشخص دور دور سے آتے ہیں ان کی رہائش گاہ کامکمل انتظام ہوتا ہے اور24گھنٹے لنگررواں دواں ہوتا ہے۔ اس ملک کی کئی مایہ ناز شخصیت بھی حاضرہوتی ہیں اسی طرح آزادکشمیر کی کی شخصیت صدرووزیراعظم وزراء تک حاضری لگواتے ہیں۔ سرکارقلندرحق خطیف حسین علی بادشاہ نے عوام کی خاطر،خواتین کی خاطربچوں کی خاطر ایک استانہ شریف ٹرالی اڈہ کھنہ پل بھی رکھا ہے یہاں پربروزبدھ صبح8بجے سے لیکررات2بجے تک اپنے پرانے نئے مریدوں کوفیض ایب کرتے ہیں اسی طرح بروزہفتہ کلرسیداں صبح10سے لیکررات تک جلوہ گرہوتے ہیں اورلاکھوں افرادمنزلیں حاصل کرتے ہیں۔کلرسیداں والاآستانہ بیرون ملک کے کوئی مرید ہیں جنہوں نے اپناگھر پیش کیا ہے حق خطیف حسین علی بادشاہ بلاوڑہ شریف ہرکام کرنے سے پہلے فرماتے ہیں یہ کام اللہ تعالیٰ نے کرنا ہے اور ان کے حکم سے ہورہا ہے سرکار ہرشخص سے پیارمحبت ملن ساری سے پیش آتے ہیں بلاوڑہ شریف کے اندر پانچ سو سے زیادہ گاڑی ہوتی ہیں اس کے علاوہ ویگن ،سوزکی سے بھی بے شمار افراد حاضری دیتے ہیں جو بھی شخص ایک بار جاتا ہے اسے باربار جانے کو جی کرتا ہے۔
سرکارقلندرحق خطیب حسین علی بادشاہ کویہ علم یہ طاقت یہ چشمہ فیض اپنے والد صوبیدار منسف علی کی طرف سے ورثہ میں حاصل ہوئی ہے ان کے والد محترم فوج کے اندرتھے وہیں سے انہیں روحانی طاقت حاصل ہونا شروع ہوگئیں تھیں ان کے والد محترم کے کئی کرشمے فوج کے اندرہوئے تھے ان کے والد محترم صوبیدار ۔۔۔۔۔علی کامزار بلاوڑہ شریف دربار کے اندر ہی ہے۔بلاوڑہ شریف دربار عالیہ کی جگہ اتنی خوبصور اتنی پرکشش ہے جہاں پرہرشخص چاروں طرف نظارے کرسکتا ہے۔بلاوڑہ شریف پہنچنے کے لئے راولپنڈی سے 2گھنٹے سے کم کاسفر ہے۔یہ وہ استانہ ہے جہاں سے لوگوں کوفیض حاصل ہوتا ہے کئی افراد جو ہسپتالوں سے مایوس ہوتے ہیں ڈاکٹربھی بے بس ہوتے ہیں یہاں پہنچنے کے بعد وہی مریض چل کرآتے ہیں۔یہ سب قدرت کے کرشمے ہیں جنہوں نے اس حویلی بلاوڑہ کے اندر ایسی شخصیت رکھی ہے جن کے سبب بیمار لوگوں کو شفا ملتی ہیں پریشان شخص کی پریشانی دور ہوتی ہے بے سہارروں کوسہاراملتا ہے۔
حق خطیف حسین علی بادشاہ قلندر جیسی شخصیت کی وجہ سے اس خطہ پوٹھوار اس تحصیل کوٹلی ستیاں اس مقام بلاوڑہ شریف کی عزت میں بے پناہ بے شماراضافہ بھی ہوا ہے اس پورے علاقے کوخصوصی گاؤں لہراڑ کواس روحانی شخصیت حق خطیب حسین علی بادشاہ قلندر پر بے پناہ بے شمار فخر ہے۔ناز ہے اللہ تعالیٰ نے اس علاقے کوایسی روحانی شخصیت کاتحفہ عطاکیا ہے جن کے ایک اشارے سے اوراللہ تعالیٰ کے حکم سے بڑے بڑے مسائل حل ہوتے ہیں بلائیں ٹل جاتی ہیں اور ان کے وسیلہ سے ہربڑے سے بڑا مسئلہ حل ہوتا ہے غریب لوگوں کے مسائل حل ہوتے ہیں سائل نے اپنی آنکھوں سے بڑے بڑے درباری بھی حاضری دیتے دیکھے ہیں۔اللہ کریم نے اس پاکستان پربخشش اورمغفرت کے کس کس سیانے کاذکر خیر کریں کہ ہم اپنی صبح سے شام اورشام سے صبح تک اس کی عطاؤں اورنوازشوں کاذکر کریں تب بھی ہم اس کونعمتوں کاشمار نہ کرسکیں گے اللہ محبت امت اللہ تو محبت ہی محبت ہے ایک ماں اپنی اولاد سے کتنی محبت رکھتی ہے اللہ تعالیٰ سترگنازیادہ پیارکرتا ہے اللہ کریم نے ہردور ہرعلاقہ میں اپنے برگزیدہ اور انعام یافتہ منتخب بندوں کے ذریعے اپنے بندوں کی اصلاح احوال کے حوالے سے کام کرواتا رہتا ہے تاکہ میرے بندے اپنی زندگی کے اصل مقاصد کوپاسکیں اوریہی وجہ ہے مشرق ہو یامغرب شام ہویاچین ملتان ہویادہلی،پاکپتن شریف ہو کااجمیرشریف بری شاہ لطیف ہویا گولڑہ شریف خواجہ حسن بھری بھری ہوں یاشہبازقلندر ہوں ایسی روحانی وعلمی شخصیات کی گوناگوں محنت شاقہ، عاجزی سے بندوں کی اصلاح احوال کے حوالہ سے کیاہو۔ہمیں خوب سے خوب ترنظرآتا ہے اورآج اپنی بزرگوں کی خصوصی کاوشوں سے دنیا بھر میں موجودخانقاہوں اوردرگاؤں دینی وعلمی مراکز سے روحانیت کے بے شمارچشمے پھوٹ رہے ہیں اوریہ تمام شخصتیں ہستیاں پیارے جیب حضورؐ اقدس کی رضا کے لئے اپنی بساط طاقت اوردین کاکام کرتے ہوئے دوسروں کی آخرت کی زندگی سنوارنے کی کوشش کررہے ہیں۔
یوں ہندوستان کے اندربھی کئی ایسے بزرگ ہستیاں موجود ہیں ان میں سے ایک ہستی درجستان کے اندراجمیر شریف والے بزرگ بھی ہیں جن کے دربار پرہرمذہب کے لوگ ہندو،مسلم،سیکھ تک جاتے ہی۔ اس دربار اجمیرشریف نے ایک عرصہ سے قرآن وحدیث اوراولیائے کرام کی تعلیمات کی روشنی میں بندگان خداکی خدمت اور اصلاح احوال کابیڑااٹھارکھا ہے سب سے بڑاکام روحانی علاج بھی ہے جس کا 100فیصد شفابھی ہے۔ شفابخشنے والی طاقت اللہ تعالیٰ کی ہے لیکن اللہ کی ذات پاک یہ تمام شفا حق خطیب حسین علی بادشاہ قلندر کے ہاتھ مبارک میں رکھی ہے بلاوڑہ شریف لوگ چارپائی پرجاتے ہیں اور واپسی پرچل کرآتے ہیں یہ سب آنکھوں دیکھا بیان ہے اس عظیم روشن ستارہ حق خطیب حسین علی بادشاہ کاقابل ذکر بیان یہ بھی ہے کہ صبح10بجے سے لیکر رات12بجے تک بیٹھ کر روحانیت کے چشمے جاری رہتے ہیں یہ عظیم شخصیت نماز کے ٹائم اٹھ جاتے ہیں ورنہ ایک ہی جگہ 12گھنٹے بیٹھنا بہت بڑی کمال اعلیٰ ہے۔سرکارحق خطیف حسین علی بادشاہ قلندر آف بلاوڑہ شریف ہرسال اپنے والد حضرت پیرصوبیدار مستجف علی سرکار آف بلاوڑہ شریف 11,12,13مئی کی یاد میں عرس کرتے ہیں اس عرس میں پورے پاکستان اوریبرون ملک سے عقیدت مندحاضرہوتے ہیں جنگل کے اندر ایک چھوٹا پاکستان بن جاتا ہے۔جہاں ہرشہر سے ہرگاؤں سے لوگ حاضری دیتے ہیں اورعقیدت کے پھول نچھاورکرتے ہیں اورجھولی بھربھر کرمرادیں حاصل کرتے ہیں اور 24گھنٹے لنگرجاری رواں دواں ہوتا ہے اس سال قربانی کی عید پر سب سے بڑی قربانی،روشن ستارہ حق خطیب حسین علی بادشاہ نے اوریاراعلیٰ بلاوڑہ شریف میں دی تھی یہاں پر7اونٹ200بکرے اور100کے قریب بیل قربان ہوئے تھے عقیدت مندوں میں گوشت بھی تقسیم کیاگیا اورلنگر بھی پکایاگیا۔

یہ بھی پڑھیں  بھائی پھیرو:تیز رفتار کار کی ٹکر سے دونوجوان ہلاک

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker