تازہ ترینعلاقائی

حجرہ شاہ مقیم :پولیس ملازم خاوند اورساس نے خاتون کو آگ میں جلاڈالا

حجرہ شاہ مقیم ( نامہ نگار)پولیس ملازم خاوند اور ساس نے خاتون کو آگ میں جلاڈالا بعدازاں موت کا مشروب پلا کر زندگی کا خاتمہ کردیا ،میکے والوں کو موت کی اطلاع تک نہ دی ،بد قسمت ممتاز بی بی کو پراسرار انداز میں دفن کر ڈالا ،مقتولہ کے بھائی مقبول احمد نے قبر کشائی کیلئے درخواست گزاردی ،پولیس وردی کے نشہ میں دھت کنسٹیبل محمد عباس نے پیروی سے روکنے کی خاطر سالے کو بھی قتل کرنیکا منصوبہ بنالیا ،مقتولہ کے بھائی مقبول احمد کی حجرہ پریس کلب میں دہائی ، وزیراعلیٰ پنجاب سے سنگین واقعہ کا نوٹس لینے کی اپیل ۔تفصلات کے مطابق نواحی گاؤں قلعہ دیوان سنگھ کی سترہ سالہ معصوم لڑکی ممتاز بی بی کی آٹھ سال قبل مقامی رہائشی پولیس ملازم کنسٹیبل محمد عباس کے ساتھ شادی ہوئی جسکی ساس سلمٰی بی بی نے بہو کو تنگ کرنا شروع کردیا جوکہ میکے سے رقم لانے کا مطالبہ کرتی اسے تشدد کا نشانہ بنایا جاتا رہا تین سال قبل جب ممتاز بی بی حاملہ تھی اسکے ظالم خاوند محمد عباس اسکی ساس سلمٰی بی بی نے دیگر اہل خانہ کے ہمراہ بہو کو تشدد کرکے جلتے ہوئے چولہے کے اوپر ڈال کر جلا ڈالا جس سے اسکا حمل ضا ئع ہوگیا اور وہ موت وحیات کی کشمکش میں مبتلا رہ کر بچ گئی اسکے میکے والوں نے میڈیکل رپورٹ حاصل کی اور مقدمہ درج کروانا چاہا تو منت سماجت کر لی اور برادری کے روبرو غلطی کی معافی مانگ کر10 لاکھ زر ضمانت کا معاہدہ اسٹام تحریر کردیا اور بد قسمت بیوی کو موت کا نیا کھیل کھیلنے کی خاطر خاوند اور ساس اپنے گھر دیپالپور واپس لے آئے جہاں انھوں نے ایک بچے کی ماں 25 سالہ ممتاز بی بی کو موت کے منہ میں دھکیلنے کا باقاعدہ منصوبہ بنالیاجس کیلئے ظالموں نے عید الفطرکی چاند رات کو منتخب کیا مقتولہ کے بھائی مقبول احمد کے مطابق اسکی بہن ممتاز بی بی کو اسکے خاوند ،ساس اور اسکے خاوندکی بھا نجی رخسانہ بی بی دختریار محمد ،دیور طالب نے تشدد کا نشانہ بناکر زہر یلا مشروب پلا دیا جس سے اسکی حالت خراب ہوگئی جسے فرضی کاروائی ڈالتے ہوئے ایک مقامی کلینک میں لے جایا گیا جہاں وہ جاں بحق ہوگئی جسکی ڈیڈ باڈی گاؤں لاکر اسے جب غسل دیا جارہا تھا تو گاؤں کی ایک بزرگ خاتون زینب بی بی نے بدقسمت ممتاز بی بی کے مردہ جسم پر تشدد کے نشانات دیکھ لئے تو اسے عجلت میں دفن کردیا گیا قابل ذکر امر یہ کہ بیٹی کی موت کی خبر اسکے میکے نہ دی گئی جوکہ مقامی مسجد میں اعلان سن کر اپنی بد قسمت بیٹی کی قبر پر پہنچے بعدازاں مقتولہ کے بھائی نے علا قہ مجسٹریٹ نصر محمود گوند ل کی عدالت میں بہن کی قبر کشائی کرکے موت کے حقائق جاننے اور ملزمان کے خلاف کاروائی کی خاطر درخواست گزاررکھی ہے جس پر پولیس وردی اور اختیارات کے نشہ میں دھت بیوی کا قاتل پولیس اہلکار محمد عباس جوکہ دیپالپور تھانہ میں محررہے انھیں دھمکیاں لگا رہا ہے اور انھیں الٹامقدمات میں ملوث کرنے کیلئے مختلف حربے استعمال کررہاہے ان حالات کے پیش نظر مقبول احمد نے حجرہ پر یس کلب رجسٹرڈ کی وساطت سے وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہبار شریف سے و اقعہ کا فوری نوٹس لینے کی اپیل کی ہے

یہ بھی پڑھیں  بھائی پھیرو:غیرت کے نام پر باپ نے اٹھارہ سالہ بیٹی کو کلہاڑی ما ر مار کر قتل کر دیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker