پاکستانتازہ ترین

گیلانی سزا یافتہ ہیں‘مستعفی ہوکرعام انتخابات کااعلان کریں‘مسلم لیگ ہم خیال

اسلام آباد﴿بیوروچیف﴾ مسلم لیگ ہم خیال کی مرکزی مجلس عاملہ نے ﴿ن﴾ لیگ سے انتخابی اتحاد کی منظوری دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ وزیراعظم یوسف رضا گیلانی ملک کی اعلیٰ ترین عدالت سے سزا یافتہ ہیں۔ اب انہیں مستعفی ہوکر عام انتخابات کااعلان کردینا چاہئے۔ کراچی کے حالات حکومت میں شامل اتحادی جماعتوںنے اپنی سیاست چمکانے کیلئے خراب کئے ہیں۔ موجودہ حکومت نے ساڑھے چار سال میں ملکی معیشت کو ڈبودیا ہے۔ اجلاس کے بعد حامد ناصر چٹھہ‘ سلیم سیف اللہ خان اور دیگر نے ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 1 2 مئی کو مسلم لیگ ہم خیال اور ﴿ن﴾ لیگ کے درمیان تحریری معاہدہ ہوا ہے۔ قومی اسمبلی کی 272 نشستوں میں 30 نشستوں کیلئے معاہدہ ہوا اور صوبائی اسمبلیوں میں بھی 11 فیصد حصہ ملے گا۔ ابھی تک شخصیات پارٹیوں میں جارہی تھیں لیکن یہ پہلی جماعت ہے جس نے مسلم لیگ﴿ن﴾ کے ساتھ اتحاد کیا ہے۔ ملک اس وقت جس موڑ پر کھڑا ہے‘ بہت ضروری ہے کہ ملک کے مسائل کو حل کرنے میں بوجھ رکھتے ہیں۔ ہمیں وہ موقع ضرور فراہم کیاجائیگا۔ موجودہ حکومت کو ساڑھے 4 سال عوام کی خدمت کا موقع ملا ہے مگر معیشت اور مہنگائی سے عام آدمی شدید متاثر ہوا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان کی ڈپلومیسی کو بچگانہ انداز میں ڈیل کیاگیا ہے جس قوم نے دہشت گردی کیخلاف جنگ لڑی تاہم ہم آج نمبر ون کٹہرے میں کھڑے ہیں۔ شکاگو کانفرنس میں جس انداز سے صدر زرداری کی جگ ہنسائی ہوئی‘ اس کی مثال نہیں ملتی۔ وزیراعطم سزایافتہ ہوگئے۔ انہیں شرم آنی چاہئے ۔ اور انہیںازخود مستعفی ہوجانا چاہئے۔ وزیراعظم فی الفور مستعفی ہوکرالیکشن کااعلان کریں۔ ملکی معیشت کو ڈبودیا ہے۔ بجلی کی لوڈشیڈنگ کے باعث غریب کے منہ سے نوالہ چھین لیاگیا ہے۔ کراچی میں خون کی ہولی کھیلنے والے سن لیں خدا ہمیں دیکھ رہا ہے۔ وہاں پر القاعدہ کا کوئی عنصر نہیں۔ وہاں یہ سیاسی جماعتیں سیاست چمکانے کیلئے آپس میں لڑرہی ہیں۔ مہاجرصوبے کا شوشہ چھوڑ دیاگیا۔ ہماری جماعت نئے صوبوں کے حق میں ہے۔ ہمارے اراکین اسمبلی کو ڈرایا دھمکایا جارہا ہے۔ ان پر مقدمات درج کئے جارہے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پارٹی کی مجلس عاملہ کے اجلاس میں ﴿ن﴾ لیگ کے ساتھ اتحاد کی مخالفت نہیں ہوئی۔ آئندہ الیکشن میں انتخابات میں حصہ لینے کے حوالے سے یا انتخابی نشان کے حوالے سے معاملات طے ہوناباقی ہیں۔ اس حوالے سے جلد عوام کو آگاہ کردیں گے۔ استعفوں کا مطالبہ وہ لوگ کررہے ہیں جو اس وقت اسمبلی میں موجود نہیں ہیں۔ ہمیں اپنا احتجاج اسمبلی کے باہر اور اندر کیاجارہا ہے۔ استعفیٰ دیکر وہ دروازہ کیوں بند کریں جس سے حکومت کو فائدہ پہنچے۔ اس حکومت سے اخلاقیات کی امید نظر نہیں آتی۔ آئین میں کہیں نہیں لکھا 100 نشستوں سے استعفیٰ دیکر جنرل انتخابات ہوسکتے۔ ہماری جماعت نگران حکومت کا حصہ نہیں بننا چاہتی۔ الیکشن کمشنر کی تقرری کے بارے میں اتفاق رائے ہونا چاہئے اور اس کیلئے پارلیمنٹ کے اندر اور باہر موجود جماعتوں سے بھی مشاورت ہونی چاہئے

یہ بھی پڑھیں  انگلینڈ کو ون ڈے سیریز میں بھی عبرت ناک شکست،آسٹریلیا کی 1-4سے فتح

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker