امتیاز علی شاکرتازہ ترینکالم

حرمت قلم کے پاسبان

قلم اور تلوارکی اہمیت سے کوئی بھی انکار نہیں کرسکتا ہر دور میںان دو چیزوں نے ہمیشہ معاشرے میں سدھاروبگاڑ پیدا کرنے میں اہم کرادار ادا کیا ہے ۔ جب یہ دو چیزیں اچھے لوگوں کے ہاتھ میں ہوں تو معاشرے میں ظلم و جبراور ناانصافی کاخاتمہ لازم ہوجاتا ہے اور اگریہی دو چیزیں غلط لوگوں کے ہاتھ لگ جائیں تو پھر معاشرے کو ظلم وجبر اور ناانصافی سے دنیا کی کوئی طاقت نہیں بچا سکتی۔اس بات کااختیا ر صاحب تلوار کے پاس ہے کہ وہ اسے کس طرح استعمال کرتا ہے ۔تلوار اگر ظلم کے خلاف اٹھے تو تلواراٹھانے والا جہاد کرتا ہے اور اگریہی تلوار ظالم اٹھاے تو وہ قاتل کہلاتا ہے ۔تلوار اس بات سے بے خبر ہوتی ہے کہ وہ جو گلا کاٹ رہی ہے وہ کسی ظالم کا ہے یا کسی مظلوم کا۔تلوار تو بے جان ہے وہ نہیں جانتی کہ وہ جس کی میان میں ہے وہ ظالم ہے یا مظلوم لیکن یہ بات طے ہے کہ تلوار جب بھی اٹھی یا اٹھے گی کسی نہ کسی کی جان جائے گئی ۔کیسی زبردست حقیقت ہے کہ جیسے تلوار خود بے جان ہے جب کسی جاندارپرچلتی ہے تو اُسے بھی بے جان کر دیتی ہے ۔اسی طرح قلم بھی جس کے پاس ہے تو کسی کی جان لینا یا بخش دینا صاحب قلم کے اختیار میں ہوتا ہے اورقلم اس بات سے بے خبر رہتی ہے ۔صدیوں سے قلم کو صاحب شعور ودانش بڑی قدر کی نظر سے دیکھتے ہیں ۔بے شک قلم بہت طاقتور چیز ہے ۔محتر م قارئین تلوار ہو یا قلم دونوں کاصحح ہاتھوں میں رہنا معاشرے کے ، کامیاب اور روشن حال ومستقبل کے لیے لازم ومظلوم ہے ۔خاص طور پر قلم کا صاف ستھرے ہاتھوں میں رہنا بہت ضروری ہے کیونکہ جس معاشرے میں قلم غلط اور نا پاک لوگوں کے ہاتھ چلی جائے اس معاشرے کو دنیا وآخرت میں ذلیل رسوا ہونے سے کوئی طاقت نہیں بچا سکتی ۔ایسے معاشرے میں انصاف اور بھلائی کا پھلنا پھولنا ناممکن ہے ۔ایسے معاشرے میںانسان کی کوئی قدروقیمت نہیں رہتی جس میں صاحب قلم حوس ،حرس اور لالچ کے پجاری ہوں۔قلم ہر جگہ اتنی طاقت نہیں رکھتی کے وہ کسی کی جان لے لے لیکن جب قلم ایک عادل کے ہاتھ میں ہوتو وہ کسی مجرم کی زندگی وموت کا فیصلہ لکھتی ہے ۔یہی قلم جب اعلیٰ ایوانوں میں بیٹھے عوامی نمائندوں کے ہاتھ میں ہو تو وہ ملک وقوم کے لیے آئین لکھتی ہے ۔ اگر یہی قلم ایک باضمیر صحافی کے ہاتھ میں ہو تووہ حق لکھتی ہے اور صاحب قلم ملک و قوم کے لیے بہتر سے بہتر اقدامات کے راستے ہموار کرتا ہے ۔لیکن اگر یہی قلم کسی ضمیرفروش نام نہادصحافی کے ہاتھ میں ہوتوملک وقوم کا بیڑاغرق ہوجاتا ہے ۔آج یسے ہی چند حرس ولالچ کے پجاری ،ٹائوٹ قسم کے نام نہاد صحافیوں کی وجہ سے قلم کی حرمت پر داغ لگ چکا ہے ۔یہ سو فیصد اٹل حقیقت ہے کہ ہمارے معاشرے میں صحافت کووہ مقدس و محترم مقام حاصل نہیں رہا جو ماضی میں حاصل تھا ۔لیکن اس کے باوجود آج بھی ہر شعبہ ہائے زندگی میں صحافت کی اہمیت اورافادیت کو تسلیم کیا جاتا ہے ۔یہ بات اپنی جگہ درست ہے کہ بلیک میلنگ اور مفادات کی تیز آندھی نے صحافت کے پیرہن کو تار تار کرکے اس کا تقدس چھین لیا ہے ۔اور معاشرے میں صحافت کی عزت وتکریم کو کم کردیا ہے ۔لیکن اس حقیقت سے بھی کوئی انکار نہیں کرسکتا کہ آج بھی صحافت نے معاشرے کو گندگی سے پاک کرنے کے لیے جوکردار ادا کیا ہے وہ ناقابل فراموش ہے۔مفادات کے چند غلاموں اورحرص ولالچ کے پیکروں نے جہاں صحافت کے تقدس کی سفید چادرکو داغدار کرنے میں کوئی کسر باقی نہیں رکھی وہیں صحافت کے تقدس واحترام کواپنا سب کچھ سمجھنے والوں اوربا ضمیر صحافیوں نے اپنی جدجہد کو مسلسل جاری رکھتے ہوئے ضمیر فروشوں ذرد صحافت کے اہل کاروں کی ناک میں دم کررکھا ہے ان ذرد صحافت کے علم برداروں کو اگر صحافتی ناسور کہا جائے تو زیادہ مناسب ہوگا۔میں داد دیتا ہوں ان باضمیر قلم کاروں کوجو آج کے مشکل ترین دور میں قلم کی حرمت کو بچائے ہوئے ہیں۔ ۔جس میںسچ لکھنے والوںکواپنی جان تک کی قربانی دینا پڑتی ہے۔ یہی وہ لوگ ہیں جن کوقلم کی حرمت کے پاسبان کہا جا سکتا ہے ۔یہ انہی صاحب ضمیر اور محترم صحافیوں کی محنت کا نتیجہ اور ثمر ہے کہ آج بھی حق لکھنے اور سچ بولنے والے ڈراور خوف کی دہکتی آگ میں سے نکل کرصحافت کا بول بالا کرنے میں مصروف عمل ہیں ۔صحافت میں کالم نگاری ایک ایسا شعبہ ہے کہ جس میں کالم نگار جہاں اپنے دل کی بھڑاس نکال سکتا ہے وہیں وہ اپنے اندر کے چھپے خیروشر کی بھی واضح نشاندہی کرتا رہتا ہے اور وہ انسانوں کے لیے اپنے اندر درد کو بھی ظاہر کردیتاہے۔ ایک کالم نگار اپنی تحریر کے ذریعے معاشرے کی اچھائی کی داد دینے کے ساتھ ساتھ معاشرے میں پھیلی برائوں پر تنقید اور ان سے بچائو کے صاف ستھرے نسخہ جات بھی اعلیٰ اقتداروں سے لے کر عوام النا س تک پہنچتا رہتا ہے ۔قارئین آج میں آپکوایسے ہی کالم نگاروں کی ایک کونسل کے بارے آگاہ کرنے جا رہا ہوں جن کا مشن ہے قلم کی اہمیت وحرمت کو نظر میں رکھتے ہوئے اپنی تحریروں کے ذریعے اپنے خیالات کو دوسروں تک پہنچاکر معاشرے میں پھیلی برائیوں کی نشاندہی کرنے کے ساتھ ساتھ تمام اچھے اقدام کی تعریف کر کے ایسے افراد کی حوصلہ افزائی کرنا ہے جو اپنی محنت سے ملک و قوم کے لیے ترقی کا باعث ہیں ۔﴿کالمسٹ کونسل آف پاکستان ﴾کے سب ممبران کا یہ فیصلہ ہے کونسل نہ تو کسی سیاسی جماعت کی ترجمانی کرے گی اورنہ ہی کسی خاص فرقے کی ہاں انفرادی طور پر کسی ممبر کو حق حاصل رہے گا کہ وہ کسی سیاسی جماعت یا کسی بھی فرقے سے اپنے تعلقات رکھے۔گ

یہ بھی پڑھیں  فیصلہ آگیا

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker