تازہ ترینکالممحمداعظم عظیم اعظم

بھارتی اخبارات نے پہلی بار مُسترد کردیامُستردکردیا.. …؟

انفارمیشن ٹیکنالوجی اورجدید سائنسی علوم و فنون کے بدولت دنیا سُکڑکرگلوبل ولیج میں بدل چکی ہے اوراَب ایسے میں جب لوگوں کو اطلاعات فراہم کرنے والے ادارے بھی اپنا مثبت رول اداکریں تو کوئی شک نہیں کہ دنیا میں بے شمار ایسی مثبت اور تعمیر ی تبدیلیوں کا ہونالازمی ہوجائے گا جس کی دنیا توقع بھی نہیں کرسکتی ہے تو اِ س پس منظر میں جہاں تک ہمارادماغ کام کررہاہے توایسے میں ہمارے مشاہدے کے مطابق شاید یہ پہلی مرتبہ ایسا ہواہے کہ بھارتی پرنٹ میڈیا نے اپنے یہاں بجرنگ دل اور دیگرانتہاپسندہندوتنظیموں اور اِن کے دباؤمیں آئے ہوئے اپنے حکمرانوں کی جانب سے پاکستان سے متعلق پیداہونے والے کسی ابہام اور پروپیگنڈے کو پوری قوت سے مستردکردیا ہے ورنہ تو اِس سے قبل بھارتی میڈیا اپنی حکومت اور شدت پسندہندوتنظیموں کے ساتھ مل کراپنے عوام میں پاکستان سے متعلق منفی پروپیگنڈاپھیلانے اور ابہا م پیداکرنے میں پیش پیش ہواکرتاتھا مگرآج پہلی مرتبہ ہمیں یہ جان کر خوشی ہورہی ہے اور اَب ایسالگتاہے کہ جیسے بھارتی میڈیاکو ماضی میں کی گئیں اپنی غلطیوں کا احساس ہوگیاہے اور ایسے یہ بھی محسوس ہوگیاہے کہ خطے میں امن و امان نفرت سے نہیں محبت اور عفوودرگز سے ہی قائم ہوسکتاہے اِسی لئے تو بھارتی میڈیانے اپنے اِس قسم کے مثبت رویئے کا اظہارکرکے یہ ثابت کرنے کی سعی کی ہے کہ یہ بھی پاکستانی پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کی طرح خطے میں حقیقی امن و سلامتی کی آشا کا متلاشی ہے بھارتی پرنٹ میڈیا کی اِس مثبت کوشش کی خطے میں بسنے والی ہر فرد کو حوصلہ افزائی کرنی چاہئے اور اُمید کی اِس ننھی سی کرن کو بہت جان کر اِس کے سوتِ سے نکلنے والے مثبت پہلوؤںکو ہر سطح پر اُجاگرکرناچاہئے یہ کام صرف پاکستان میں رہنے والوں کی ہی ذمہ داری نہیں ہونی چاہئے بلکہ اِس کام کو خطے میں بھرپور طریقے سے تدوین و تریج کے لئے بھارتی میڈیااور ہر بھارتی شہری کو بھی اپنی ذمہ داری اداکرنی چاہئے۔
یہ بات بھارت میں بسنے والے ہر باشعور اور خطے میں امن و سلامتی کے متلاشی بھارتی کے لئے بھی انتہائی حوصلہ افزائ ہونی چاہئے کہ اِن کے ہی ایک موقر اخبارٹائمز آف انڈیا نے گزشتہ دنوں یہ انکشاف کردیاہے کہ ’’ بنگلور، ممبئی، پونااوردیگرشہروں سے ہزاروں خوفزدہ شہریوں کے انخلائ کا سبب بننے والی افواہیں پھیلانے میں انتہاپسنداور خونی ہندوؤں پر مشتمل بجرنگ دل اور دیگرہندوشدت پسند تنظیمیں ہی ملوث ہیں جنہوں نے جعلی تصاویر ویب سائٹس پر شائع کرکے اشتعال انگیز کیپشن لکھے اور بڑی تعداد میں بھارت بھرمیں ایس ایم ایس بھیج کر پاکستان سے متعلق منفی پروپیگنڈے اور نفرت کی آگ کو پروان چڑھاکر خطے میں امن و سلامتی کی آشاکو نقصان پہنچانے کی گھناؤنی سازش تیار کی ۔ اطلاع ہے کہ ٹائمزآف انڈیاکی طرح ایک اور بھارتی اخبار انڈین ایکسپریس نے بھی اپنا یہ انکشاف کرکے اصل کہانی دنیاکے سامنے آشکارکردی کہ اِن افواہوں کو پھیلانے اور مذہبی منافرت پیداکرنے کی کوشش میںبھارتی باشندے ملوث ہیں اِس طرح اِن بھارتی اخبارات نے اپنی صاف وشفاف تحقیقات کے بعد اپنے انکشافات میں اپنی حکومت کی جانب سے اِن واقعات کا الزام پاکستان پر عائد کرنے کی پول کھول دی ہے اور اِس طرح بھارتی اخبارات نے دنیاکے سامنے یہ بھی واضح کردیاکہ ایک طرف بھارتی حکومت پاکستان سے مذاکرات کا سلسلہ شروع کرنے کی خواہشمندہے تو دوسری جانب پاکستان کے خلاف اپنے یہاں نفرتیں پھیلانے اور منفی پروپیگنڈوں سے بھی باز نہیں آرہی ہے خدشتہ ہے کہ اِس کا یہ دوغلہ پن کہیںپاکستان کو مجبورنہ کردے کہ وہ بھارت کے ساتھ اپنے اِس مثبت اور تعمیری مذاکراتی عمل کو بریک نہ لگادے ایسے میں اَب ضرورت اِس امر کی ہے کہ اگر بھارت چاہتاہے کہ پاکستان کے ساتھ مذاکراتی عمل جارہی ہے تو اِس پر لازم ہے کہ وہ اپنے رویوں کاجائزہ لئے اور پاکستان سے فور ی طور پر معذرت کرے۔
بھارتی اخبارات کے اِن انکشافات کے بعد اِدھر پاکستانیوں میں بھی بھارتی بے اعتباری کا رجحان بڑھتاجارہاہے جس پر پاکستانی حق بجانب ہیں کیوں کہ بھارتی موقر اخبارٹائمزآف انڈیا نے واضح کرتے ہوئے لکھاہے کہ’ ’ویب سائٹس پر پاکستان کی جانب سے مذہبی منافرت پھیلائے جانے کے الزام میں کایک بات نظرانداز کردی گی کہ بھارتی حکومت نے جو ویب پیجز بندکئے ہیں اِن میں کم ازکم 20فیصد مذہبی منافرت پھیلانے کے لئے ہندوانتہاپسندوں نے اَپ لوڈ کئے تھے او ر اِسی کے ساتھ ہی اخبار یہ بھی لکھتاہے کہ بھارتی سیکریٹری خارجہ آر کے سنگھ نے الزام لگایاتھاکہ اشتعال انگیز افواہوں کا سلسلہ پاکستان سے شروع ہواتھاجبکہ بھارتی اخبارات ٹائمزآف انڈیااور انڈین ایکسپریس نے پہلی بار اپنی تحقیقاتی رپورٹوں میں اپنی حکومت کے پاکستان سے متعلق اشتعال انگیز اور منفی پروپیگنڈے کی کھلی خلاف ورزی کرتے ہوئے اِسے غلط ثابت کرتے ہوئے اپنی حکومت کی جانب سے پاکستان پر لگائے جانے والے اِس الزام کو مستردکردیااوراِن بھارتی اخبارات نے اپنی بات یہیں ختم نہیں کی بلکہ اِنہوںنے اپنی تحقیقات میں اِس بات کا بھی انکشاف کرتے ہوئے واضح کردیاہے کہ ’’ہندوتنظیموں نے سوشل میڈیاکی سائٹس پر مسلمانوں کے ہاتھوں آسام کے بوڈوقبائل کے ساتھ مبینہ زیادتیوں کی جعلی تصاویر شائع کرکے اِن کے ساتھ اشتعال انگیز کیپشن لگائے تھے جبکہ اِس پر یہ بھارتی اخبارات یہ بھی واضح طور پر لکھتے ہیں کہ اِس صورت حال میں مزیدشدت لانے کے لئے کئی ویب پیجز پر تبّتی لوگوں کی چین کے خلاف خودسوزی کی تصاویرلگاکر اِس انداز میں پیش کیاگیاکہ جیسے یہ شمال مشرق میں رہنے والے مسلمانوں کے ہاتھوں آسامی ہندو ؤںپر زیادتی کی تصاویرہوں اور اِسی کی کے ساتھ یہ دونوں موقر ترین بھارتی اخبارات جن پر بھارتیوں اور بھارتی حکمرانوں کو اول روز سے ہی اعتبار ہے کہ یہ اخبارات اِن کے حامی اور حق و صداقت کے علمبردار ہیں اِن کے یہی اخبارات ٹائمز آف انڈیااور انڈین ایکسپریس اپنے تحقیقاتی اداروں اور اپنی تحقیقاتی رپورٹوں کی روشنی میں ہی لکھتے ہیں کہ بنگلور، ممبئی، پونااوردیگرشہروں سے ہزاروں خوفزدہ شہریوں کے انخلائ کا سبب بننے والی افواہیں پھیلانے ایس ایم ایس بہت بڑی تعدا میں ہندوتنظیموں نے ہی بھیجے تھے اِسی طرح اِن اخبارات نے اِس کا بھی انکشاف کیاکہ بنگلور میں جن تین خواتین کے بارے میں اطلاع ملی تھی کہ یہ ایک ٹرین کو بم سے اڑانے کی سازش کررہی ہیں اِس کے پیچھے بھی بجرنگ دل کا ایک شدت پسند ہندو کارکن ملوث تھااور اِسی طرح اِن اخبارات نے یہ انکشاف بھی کیا کہ 15اگست ﴿بھارت کے یوم آزادی ﴾ کے موقع پر بھارت کے حیدرآباد میںجو پاکستانی پرچم لہرانے کی وڈیو منظرعام پر آئی تھی وہ دراصل بھارتی حیدرآباددکن کی نہیں بلکہ یہ اپ لوڈ کی گئی وڈیو حیدرآباسندھ کی تھی بھارتی اخبارات نے ماضی میں بھی اِسی قسم پاکستان پر الزام تراشیوں کا حوالہ دیتے ہوئے دوٹوک الفاظ میں انکشاف کیاہے کہ بھارتی حکومت اِس سے قبل بھی اپنے یہاں ہونے والے ہر سانحہ اور واقعہ کا سراپاکستان سے ترنت جوڑتے رہے ہیں جیسے سمجھوتہ ایکسپریس میں آگ ، حیدرآباددکن میں بم دھماکوں، سانحہ احمدآباد اور بہت سے ایسے سانحات اور واقعات جس پرفوراََ بھارتی حکمرانوں کا دماغ کام نہیں کرسکااور اُنہوںنے اپنے سر پر لگنے والے ہر الزام کو ترنت پاکستان کے کاندھے پر الزامات لگاکر اپنی جان چھڑائی اور اِس طرح بھارتیوں میں پاکستان سے متعلق نفرت کی آگ کو جنم دیتے رہے مگر حقیقت تو یہ ہے کہ جب اصل حقائق سامنے آئے تو بھارت میںدہشت گردی کے پیش آنے والے ہر سانحہ کے پیچھے بھارت میں متحریک رہنے والی بجرنگ دل سمیت دیگرشدت پسندہندوتنظیمیں ہیں ملوث پائیں گئیںاور ملزمان نے اپنی تمام کارروائیوں کا اعتراف بھی کیا۔
اَب ایسے میں حال ہی میں بھارتی حکمرانوں اور بھارت میں متحرک رہنے والی انتہاپسندبجرنگ دل اور دیگرشدت پسندہندو تنظیموں کی جانب سے پاکستان سے متعلق بھارت سمیت ساری دنیا میں پھیلائے جانے والے منفی پروپیگنڈوں کو بھارتی پرنٹ میڈیا سے تعلق رکھنے والے دوموقر اخبارات ٹائمز آف انڈیااور انڈین ایکسپریس نے حق و صداقت کا ساتھ دیتے ہوئے اُن حقائق کا پردہ چاک کردیاجس سے بھارت میں پاکستان کے خلاف نفرت کا اٹھتاہوالاوابیٹھ گیااور ایک عام بھارتی کوبھی یہ بات پتہ چل گئی کہ آج پاکستان سے متعلق جتنے بھی منفی پروپیگنڈے بھارت میں پھیلائے جاتے ہیں ان کے پیچھے بھارتی حکمران اور بھارت میں متحرک رہنے والی شدت پسندہندو تنظیمیں اِس کے پسِ پردہ سرگرم ہوتی ہیں ایسے میں، میں بحیثیت ایک کالم نگار بھارتی اخبارات کا شکریہ اداکرنااپنی صحافتی زمہ داریوں کے حوالے سے لازمی سمجھتاہوں کہ بھارت کے اِن اخبارات نے غیرجانبداری کا جس طرح ثبوت دیااِس کے لئے یہ مبارکباد کے مستحق ہیں اور ہمیں اُمیدرکھنی چاہئے کہ آئندہ بھی بھارتی اخبارات ٹائمز آف انڈیااور انڈین ایکسپریس اپنی تحقیقاتی رپورٹوں سے ایساہی قابل فخرکارنامہ انجام دیتے رہیں گے اور اِن کی تائیدوتقلید کرتے ہوئے دوسرے بھارتی اخبارات بھی ایساہی کریں گے تاکہ بھارتی عوام کو اصل حقائق کا علم ہواور اِن کے دلوں میں پاکستان سے متعلق محبت ، اور بھائی چارگی کا جذبہ پروان چڑھے اور ہماراخطہ امن و سلامتی کا ایک عظیم گہوارہ بن جائے۔

یہ بھی پڑھیں  گال ٹیسٹ: سری لنکا نے پاکستان کو 506رنز کا ہدف دے دیا۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker