پاکستان

اسلام آباد:توہین عدالت کیس، نرگس سیٹھی کو کل پھر جرح کیلئے پیش ہونے کا حکم

اسلام آباد(بیوروچیف) وزیر اعظم کے خلاف توہین عدالت کیس کی سماعت کل تک ملتوی کر دی گئی اور کابینہ سیکریٹری نرگس سیٹھی کو جرح میں پیش ہونے کیلیے کل پھر آنے کا حکم دیا گیا ہے۔ سماعت جسٹس ناصر الملک کی سربراہی میں 7رکنی بینچ نے کی جس کے دورانسمریز پیش کرنے کے طریقہ کار پر جسٹس ناصرالملک نے ناراضگی کا اظہار کیا اور سماعت میں نصف گھنٹا کا وقفہ کردیا،بعدمیں نرگس سیٹھی نے حلفیہ بیان قلم بند کرایا اور وزیراعظم کو بھیجی گئی دونوں سمریز کا ریکارڈ عدالت کو پیش کیا۔ عدالت نے دستاویز کو شہادت کا درجہ دے دیا۔ شہادت میں میں سوئس کیسز سے متعلق سابق چیئرمین احتساب بیورو سیف الرحمن کی سوئس حکام سے خط و کتابت بھی شامل کی گئی ہے ۔ اعتزاز احسن نے کہاکہ نرگس سیٹھی ، وہ 2 سمریز پیش کرنا چاہتی ہیں جو سوئس کیسز سے متعلق عدالتی حکم پر وزارت قانون نے وزیراعظم کو بھیجی تھیں، پہلی سمری اس وقت کے سیکریٹری قانون عاقل مرزا کے دست خط سے مئی 2010ء اور دوسری ، وزیرقانون بابراعوان اور سیکریٹری قانون کے دست خطوں سے ستمبر 2010ء میں بھیجی گئی، نرگس سیٹھی نے مئی والی سمری میں سابق اٹارنی جنرل انور منصور کی رائے بھی بطور شہادت پیش کیا، یکم مئی والی سمری کو دفاع کی کی شہادت نمبر 1 بنایا گیا ہے ، اعتزاز احسن نے 1999ء کو اٹارنی جنرل چودھری فاروق کا خط بھی بطور شہادت پیش کیا ، سابق چیئرمین احتساب بیورو کی سوئس حکام سے خط و کتابت کو دفاع کی شہادت نمبر 2 بناکر پیش کیاگیا۔ ، اٹارنی جنرل نے کچھ اعتراضات کئے تو عدالت نے کہاکہ انہیں بعد میں دیکھا جائے گا، نرگس سیٹھی سے اعتزاز احسن نے متعدد سوالات کئے تو عدالت نے مداخلت کرتے ہوئے کہاکہ یہ تو جرح ہوگئی ، اعتزاز احسن نے وزیراعظم کے حکومتی، سیاسی اور پارلیمانی کردار کے مختلف پہلووٴں پر متعدد سوالات کئے تو عدالت نے ان سے کہا کہ کیا وزیراعظم کو کیریکٹر سرٹفکیٹ دلانا چاہتے ہیں،بعد میں کیس کی سماعت کل تک کیلئے ملتوی کرتے ہوئے نرگس سیٹھی کو جرح میں پیش ہونے کیلئے کل پھر آنے کا حکم دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker