پاکستانتازہ ترین

لانگ مارچ : وزارت داخلہ کے احکامات پر سیکورٹی انتظامات مکمل

islamabad securityاسلام آباد(بیورو رپورٹ) تحریک منہاج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کے لانگ مارچ کے وفاقی دارالحکومت میں داخلے سے قبل وزارت داخلہ کے احکامات پر اسلام آباد انتظامیہ اور وفاقی پولیس نے سیکورٹی انتظامات مکمل کر لئے ہیں،شہر اقتدار کو داخل ہو نے والے ڈ ھوکڑی چوک ، راول ڈیم ، فیض آباد، کری روڈ، کھنہ پل ، ایئر پورٹ چوک ، کاک پل، زیروپوائنٹ، کراچی کمپنی ، گولڑہ، ترنول، پیرودھائی کے تمام داخلی وخارجی راستے کنٹینرز اورخار دار تاروں سے بند کر دیئے گئے۔وفاقی پولیس کی نفری،سپیشل ،پولس کمانڈوز،خیبر پختونخواہ،کے پی کے ،کشمیر،پنجاب پولیس پر مشتمل 12ہزار پولیس اہلکاروں نے پولیس لائن ہیڈکوارٹر،سپورٹس کمپلیکس اور دیگر مقامات پر پڑاؤ ڈال دیا جبکہ ایف سی اور رینجرز کے اضافے دستے بھی الرٹ رکھے گئے ہیں ۔ادھر ایوان صدر،وزیر اعظم سیکرٹریٹ،پارلیمنٹ ہاؤس،ڈپلومیٹک انکلیو اور دیگر اہم سرکاری و نجی عمارات پر مشتمل ریڈ زون کے علاقہ کی سیکیورٹی کو ریڈ الرٹ کرتے ہوئے اس طرف جانے والے تمام راستے بھی سیل کر کے سیکیورٹی اہلکاروں کی بھاری نفری تعینات کر دی گئی ہے جبکہ اعلان کے مطابق بلیوایریا میں مارچ کو محدود رکھنے کے لئے پولیس کو کروڑں روپے کے آنسو گیس کے شیل،ربڑ کی گولیاں اور دیگر اسلحہ بھی فراہم کر دیا گیا ہے۔وفاقی وزیر داخلہ،چیفک کمشنر و ڈی سی اسلام آباداور آئی جی سمیت پولیس حکام خود سیکیورٹی انتظامات کو یقینی بنانے کے لئے موقع پر موجود رہیں گے۔وفاق کے سرکاری و نجی ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافد کر نے کے بعد ممکنہ ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے ڈاکٹروں کی خصوصی ٹیمیں بھی تشکیل دے دی گئیں۔ڈاکٹر طاہر القادری کی کرپٹ حکومت کے خلاف لانگ مارچ کے حوالے سے وزارت داخلہ کے احکامات پراسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ نے حالات سے نمٹنے کی خاطرحکمت عملی تیار کر لی ہے جس کے باعث ریڈزون کو مکمل طور پر سیل کر دیا گیا ہے ریڈزون اورقریب ترین سیکٹرز میں اے ٹی ایم مشینوں کو خالی کر دیا گیا ہے تاکہ لوٹ مار کی صورت میں کوئی بھی نقصان نہ ہو سکے ۔وفاقی حکومت کی درخواست پر پنجاب حکومت نے دو ہزار ، آزاد کشمیر نے اڑھائی ہزار، رینجرز تین ، خیبر پختون خواہ نے پولیس اور فرنٹیر کانسٹیبلری کے پانچ ہزار افسران واہلکاروں کی فورس مہیا کی ہے جبکہ اسلام آبادپولیس کی اپنی پانچ ہزارسے زائد پولیس فورس کو تعینات کر دیا گیاہے بتایا جارہا ہے کہ وفاقی دارلحکومت میں پنجاب ، آزاد کشمیر، اور خیبر پختون خواہ سے بکتر بند گاڑیوں کو بھی منگوا لیا گیا ہے ۔ اسلام آبادمیں قریب ترین علاقوں سے داخل ہونے والے راستوں پر کنٹینرز لگا کر تمام راستے سیل کر دیئے گئے ہیں جن میں ڈھوکڑی چوک ، راول ڈیم ، فیض آباد، کری روڈ، کھنہ پل ، ایئر پورٹ چوک ، کاک پل، زیروپوائنٹ، کراچی کمپنی ، گولڑہ، ترنول، پیرودھائی ، کی جانب سے آنے والے راستے شامل ہیں جن کو کنٹینرز اور خار دار تاروں سے سیل کیاگیاہے۔ تحریک منہاج القرآن کے لانگ مارچ کو منتشر کرنے کے لیے وفاقی پولیس کے پاس دس ہزار سے زائد آنسو گیس کے’’ گولے ‘‘ریزرو پڑے ہیں اور پانچ ہزار کے قریب جدید قسم کے’’ شیل ‘‘بھی خرید لیے گئے ہیں جبکہ دوسرے صوبوں سے آنے والے ہزاروں کی تعداد میں پولیس اہلکار اپنے ہمراہ بھی ہزاروں کی تعداد میں آنسو گیس کے گولے لائیں ہیں۔ذرائع کے مطابق وفاقی حکومت نے بارہ ہزار سے زائد پولیس کے پی کے، کشمیر ، پنجاب ، اور ایف سی کے اہلکاروں کی خوراک کا ہنگامی بنیادوں پر بندوبست کیے رکھا ہے اور انہیں سپورٹس کمپلیکس ، پولیس لائنز اور دوسرے مقامات پر ٹھہرایا گیا ہے ۔وفاقی وزیر داخلہ،چیفک کمشنر و ڈی سی اسلام آباداور آئی جی سمیت پولیس حکام خود سیکیورٹی انتظامات کو یقینی بنانے کے لئے موقع پر موجود رہیں گے اور انتظامات کو یقینی بنائیں گے۔دوسری طرف وفاق کے سرکاری و نجی ہسپتالوں میں بھی طبی ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے تاکہ مارچ کے دوران ہنگامی صورتحال سے نمٹا جائے۔گزشتہ 24گھنٹوں سے ہسپتالوں کے عملے کی چھٹیاں منسوخ کر کے موقع پر رہنے کی ہدایت کی گئی ہے اور ہسپتالوں میں ہی ان کے قیام و طعام کا بندوبست کیا جائے گا۔دوسری جانب ریڈ زون کے سب سے اہم اور حساس علاقے کی سیکیورٹی کو ریڈ الرٹ کر کے پولیس کی بھاری نفری کے علاوہ ڈپلومیٹک انکلیو سمیت اہم عمارتوں اور مقامات پر رینجرز اورپاک فوج کے دستے بھی تعینات کر دیئے گئے اور کسی بھی قسم کی غیر یقینی صورتحال سے نمٹنے کے لئے رینجرز اور ایف سی پر مشتمل اضافے دستے بھی الرٹ رکھے گئے ہیں۔مارگلہ کی پہاڑیوں سمیت دوسرے اہم مقامات پر بھی پولیس گشت میں اضافہ کر دیا گیا ہے۔اس کے ساتھ ساتھ لانگ مارچ کے موقع پرشہر کی فضائی نگرانی بھی کی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں  گرانٹ فلاورپاکستانی کرکٹ ٹیم کےبیٹنگ،گرانٹ لوڈن فیلڈنگ کوچ مقرر

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker