پاکستانتازہ ترین

اسلام آباد:امریکہ کو17 لاکھ مربع فٹ سفارتخانہ تعمیرکرنیکی اجازت

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) حساس اداروں کے منع  کرنے کے باوجود  امریکہ کو اسلام آباد میں سترہ لاکھ مربع فٹ پر مشتمل آٹھ منزلہ سفارتخانہ تعمیر کرنے کی اجازت دے دی گئی،چھ ہزار افراد قیام کر سکیں گے،جدید جاسوسی آلات سے لیس یہ عمارت پاکستان کیلئے بڑا سیکورٹی رسک بن جائے گی۔حساس اداروں نے چودہ فروری کو ایک خط کے ذریعے سی ڈی اے کو متنبہ کیا تھا کہ امریکی سفارتخانے کے توسیعی منصوبے کی اجازت نہ دی جائے کیونکہ یہ علاقہ ریڈ زون میں ہے۔ اس کے قریب ہی پاکستان کی اہم ترین عمارتیں ہیں جن میں ایوان صدر، وزیر اعظم سیکرٹریٹ، وزیر اعظم ہائوس، پارلیمنٹ ہائوس اور سپریم کورٹ شامل ہیں۔ اس خط میں یہ خدشہ بھی ظاہر کیا گیا تھا کہ اس عمارت کی چھت پر جدید جاسوسی آلات نصب کئے جانے کا امکان ہے جس سے ملک کے اہم ایوانوں اور حساس اداروں میں ہونے والی ہر نقل وحرکت کا جائزہ لیا جا سکتا ہے۔ ان تمام تر تحفظات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے سی ڈی اے نے امریکی سفارتخانے کے توسیعی منصوبے کی اجازت دیتے ہوئے این او سی جاری کر دیا ہے۔ امریکی سفارتخانے کا یہ توسیعی منصوبہ سترہ لاکھ، چونتیس ہزار دو سو بارہ مربع فیٹ کے وسیع رقبہ پر مشتمل ہے جہاں کئی کثیر المنزلہ عمارتیں تعمیر کی جائیں گی جن میں نو منزلہ عمارت بھی شامل ہے۔ سی ڈی اے کو جمع کروائی گئی تفصیلات کے مطابق سفارتخانے کی نئی عمارت تہ خانے سمیت سات منزلہ ہو گی۔ نئے دفاتر اور انیکسی سات منزلہ، گارڈ ہائوس ایک منزلہ اور سپورٹ انیکسی آفس تین منزلہ ہوں گے۔ رہائشی عمارت بیسمنٹ سمیت تین منزلوں پر مشتمل ہو گی۔ یوٹیلٹی بلڈنگ بیسمنٹ اور گرائونڈ فلور پر مشتمل ہو گی۔ کونسلر بلڈنگ دو بیسمنٹ سمیت چھ منزلہ ہو گی۔ بی ٹائپ رہائشی بلڈنگ پینٹ ہائوس سمیت نو منزلہ ہو گی۔ سی ٹائپ اور ڈی ٹائپ رہائشی عمارات آٹھ آٹھ منزلہ ہوں گی۔ دیگر چھ عمارات بھی بلڈنگ پلان میں شامل ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ امریکی سفارتخانے کی توسیع مکمل ہونے پر یہاں پانچ سے چھ ہزار افراد رہائش اختیار کر سکیں گے۔ حساس اداروں نے اس حوالے سے بھی سوالات اٹھائے ہیں کہ پاک امریکہ معاہدے میں ساڑھے سات سو افراد سے زیادہ سفارتی عملہ رکھے جانے کی گنجائش موجود نہیں ہے۔ امریکی سفارتخانے کو دیا گیا یہ رقبہ پاکستان بھر میں موجود کسی بھی فوجی چھاونی سے زیادہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں  بھارتی فوج طاقت کا استعمال کر کے تحریک آزادی کو دبا نہیں سکتی،اعجازالحق

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker