تازہ ترینکالممحمد صدیق مدنی

جمہوریت بہترین انتقام ہے

Siddiq Madani Columnist’’جمہوریت بہترین انتقام ہے‘‘۔’’بدترینجمہوریت بہترین آمریت سے بہتر ہے‘‘۔’’حقیقی جمہوریت آزمائش ہے‘‘۔’’جمہوریت یہ نہیں کہ میں سب سے بہتر ہوں، بلکہ یہ ہے کہ تم سب بھی اسی قدر بہتر ہو ،جتنا کہ میں‘‘۔’’لوگوں کو ساتھ لے کر چلنے کا نام جمہوریت ہے ‘‘۔’’ باخبر،باعمل اور باعلم لوگجمہوریت کے سوا کسی طرز حکومت کو نہیں مانتے‘‘۔ اور’’ جمہوریت ہی وہ واحد عمل ہے ،جس کے ذریعے زمانے بھر کا معتوب شخص بھی مسند اقتدار پر فائز ہو سکتا ہے‘‘۔یہ وہ الفاظ ہے جو ہمارے ہاں اکثر سننے میں آتے ہیں،ہر شخص کے پاس اپنی علیحدہ جمہوریت کی تشریح ہے،موجودہ حکومت کے خلاف جو بھی بات کی جائے چاہے حق ،سچ ہی کیوں نا ہو وہ جمہوریت کے منافی تصور کی جاتی ہے۔بہرحال جتنے منہ اتنی باتیں،جتنی ضرورتیں اتنی دلیلیں،یہ جتنی بھی باتیں ہیں صرف الفاظ کا گھورکھ دہندہ ہے اس کے سوا کچھ بھی نہیں ۔
علامہ اقبال نے پاکستان کا خواب دیکھا تھا،آیا کہ وہ کیسا ملک چاہتے تھے؟ان کے نزدیک اس علیحدہ ملک میں کیسا نظام تھا؟ان کے کلام سے بات بڑی واضح ہو جاتی ہے کہ وہ جمہوریت سے کتنے خائف تھے؟ان کے چند اشعار جن میں انہوں نے جمہوریت کی پرزور مذمت کی۔ایک جگہ ارشاد فرماتے ہیں۔
یہاں مرض کا سبب ہے غلامی تقلید
وہاں مرض کا سبب ہے نظام جمہوری
جمہوریت میں سب سے بڑی خامی کا ذکر کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ
جمہوریت ایک طرز حکومت ہے کہ جس میں
بندوں کو گنا کرتے ہیں،تولا نہیں کرتے
اس شعر کی عملی تفسیر ہمارے ملک میں خوب دیکھی جاسکتی ہے،کہ ایک آدمی اگر چل نہیں سکتا،دیکھ سکتا ہے نہ بول سکتا ہے،سوچ سکتا ہے نہ سمجھ سکتا ہے اس کو بھی دو آدمی سہارا دے کر اس سے ووٹ پول کراتے ہیں،پاکستان میں دین کو سیاست سے جدا کر دیاگیا ہے،اس ہی نظام کی وجہ سے پاکستان ترقی نہیں کر پارہا،اس بارے میں علامہ کا نقطہ نظر یہ ہے کہ
جلال بادشاہی ہو کہ جمہوری تماشہ ہو
جدا ہو دین سیاست سے تو رہ جاتی ہے چنگیزی
جمہوریت،سیکولر ازم یعنی بے دینی کا دعویٰ کرتی ہے،جبکہ پاکستان ایک اسلامی ملک ہے اس میں سیکولر ازم کی کو ئی جگہ نہیں ،جمہوریت میں ایک بڑی خامی یہ ہے کہ اس میں ہر شخص کو فیصلہ (ووٹ) دینے کا حق حاصل ہوتا ہے،جبکہ ہر شخص صاحب الرائے اور صائب الرائے نہیں ہوتا،عوام کی اکثریت ان پڑھ ہے اور وہ محض اپنے ذاتی مفادات کی خاطر ووٹ دیتے ہیں ان میں نہ تو قومی معاملات اور مسائل کو سمجھنے کا شعور ہوتا ہے اور نہ ہی وہ امیدواروں کی سیرت و کردار کو سامنے رکھ کر ووٹ دیتے ہیں،اس طرح نااہل،مفاد پرست،جرائم پیشہ اور بداطوار و بے دین قسم کے لوگ حکومت پر قابض ہو جاتے ہیں جمہوری حکومت میں بس جس کے حامیوں کی تعداد بڑھ جاتی ہے،وہی کامیاب ٹھہرتا ہے خوا وہ کاروبار حکومت کو سمجھنے کا اہل ہو یا نہ ہو،خوا وہ دینی و عوامی معاملات کے بجائے ذاتی مفادات کو ترجیح دینے والاہو۔
یہ جمہوریت کی کرسی ہی کی مہربانی ہے کہ زرداری صاحب پاکستا ن کے دوسرے نمبر پراور جناب نوازشریف صاحب تیسرے نمبر پر امیر ترین فرد ہیں اور جعلی ڈگریاں رکھنے والے عدالت سے نااہل قرار دلوئے جانے کے باوجود مسند اقتدار پر جلوہ افروز ہیں۔
جمہوری سسٹم میں لیڈر ایک جیسے ہوتے ہیں اور ہمیں ہر بار ایسے لیڈروں کا ہی چناؤ کرنا پڑتا ہے جو پہلے ہی عوام کے مسائل کو حل کرنے میں ناکام ہو چکے ہوتے ہیں،کئی لیڈروں نے ماضی میں بھی کوئی ایسا کارنامہ سرانجام نہیں دیا ہوتا جو قابل ستائش ہو۔جمہوری نظام میں لادینیت اور اقتدار کی ہوس ضمیر کو مردہ کر دیتی ہے اس لئے ہر لیڈر بے دھڑک جھوٹ بولتا ہے اور بے قصور بھی ٹھہرتا ہے،جمہوری نظام میں کتنے لوگ خوشی سے کرسی چھوڑتے ہیں!؟کتنے ہیں جوووٹ کے حصول کیلئے اوچھے ہتھکنڈے استعمال نہیں کرتے ؟اچھے اخلاق صرف ووٹ حاصل کرنے کیلئے ہوتے ہیں!ووٹ لینے کے بعد ایسے اپنے حلقہ انتخاب سے غائب ہوتے ہیں جیسے گدھے کے سر سے سینگھ اور پھر اگلے الیکشن کے زمانہ ہی میں اپنے ووٹرز کو منہ دیکھاتے ہیں۔
ہر الیکشن میں نناوے فیصد امیدوار بار بار کامیاب ہوتے ہیں اورایسا ابتدا ہی سے ہو رہا ہے،اس کی وجہ صاف ظاہر ہے کہ ایک دفعہ ممبر بن جانے کے بعد ممبر اپنے حلقہ انتخاب میں ہر دل عزیز ہونے کیلئے لاکھ جتن کرتا ہے اور انوکھی انوکھی ترکیبیں استعمال کرتاہے اور میڈیا کے ذریعے اپنے ووٹرز کوایسا تاثر دیتا ہے کہ وہ چوبیس گھنٹے صرف اور صرف ان کی خدمت کیلئے کوشاں ہے،پاکستا ن کے تمام سیاست دان امیر ترین لوگ ہیں ان میں کوئی بھی غریب نہیں !تمام کے تمام بڑی بڑی جائیدادوں وجاگیروں اور صنعتوں کے مالک ہیں،کسی بھی پارٹی کے اندر جمہوریت ہے اور نہ ہی پارٹی کے اندر الیکشن ہوتے ہیں،پارٹی ایک ہی خاندان کی وراثت ہوتی ہے،ہرالیکشن میں پارٹی کا نعرہ بدل جاتا ہے اور حکومت بنانے کیلئے اتحاد بھی۔
اس قسم کی جمہوریت ملوکیت ہی کی ایک قسم ہوتی ہے اور ملوکیت ہی کو تقویت دیتی پہنچاتی ہے،جمہوری حکومت میں کامیاب پارٹی برسر اقتدار آکر اپنی من مانی کرتی ہے اور پارٹی میں روساء وامراء شامل ہوتے ہیں اس لئے وہ صرف اور صرف سرمایہ دار طبقہ ہی کے مفاد میں قانون سازی کرتے ہیں عوام کے مفاد کو پس پشت ڈال دیا جاتا ہے۔پھر ایک وقت ایسا آتا ہے جب ملوکیت اور جمہوریت میں صرف تھوڑا سا فرق رہ جاتاہے۔ملوکیت میں اقتدار صرف ایک شخص کے ہاتھ میں ہوتا ہے جبکہ جمہوریت میں اقتدار ایک پارٹی ایک جماعت کے ہاتھ میں ہوتا ہے اور اکژ اوقات برسر اقتدار پارٹی کی حکومت استبدادی حکومت بن جاتی ہے،

یہ بھی پڑھیں  غیرمشروط مذاکرات کی بات کرکےاب شرائط رکھی جارہی ہیں،مفتی منیب

note

یہ بھی پڑھیے :

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker